تازہ ترین

مزید خبریں

تاریخ    20 اپریل 2021 (00 : 01 AM)   


نیوز ڈیسک

بارشوں سے مکانات کو نقصان ، 40 مویشی بھی ہلاک

عاصف بٹ
 کشتواڑ//مسلسل بارشوں نے ضلع کشتواڑ کے بالائی علاقوں میں تباہی مچائی ہے ۔کشمیرعظمیٰ کو ملی تفصیلات کے مطابق سب ڈویژن چھاترو میں بارشوں سے کافی نقصان پہنچا ہے۔ چنگام سی کے کوترنا میں راج کمار کے مکان کو نقصان پہنچا ہے۔ پیشے سے مزدور راجکمار کا مکان زمین کھسکنے کے سبب دونوں اطراف سے تباہ ہوگیا ہے اور وہ کسی بھی وقت گر سکتا ہے ۔ انھوں نے انتظامیہ سے اپیل کی کہ انکی مدد کی جائے تاکہ اپنا گھر تعمیر کرسکے۔وہیں سنگھ پورہ کے کدرو گواڑی علاقہ میں گوگھا کھلیپا کا گائوخانہ مٹی کھسکنے سے مکمل طور تباہ ہوگیا جس میں 35 بھیڑبکریاں و 4بیل ہلاک ہوگئے۔ گوگھا کھیلپا دونوں ٹانگوں سے معذور ہے جسکے پاس اسکی جمع پونجی بھیڑ بکریاں و بیل تھے جسے اسکا گھر چلتا تھا لیکن بارشوں نے سب کچھ چھین لیا۔مقامی لوگوں نے بتایا کہ زمین کھسکنے سے اگرچہ انکا مکان بچ گیا تاہم گائوخانہ مکمل طور تباہ ہوگیا۔انھوں نے لوگوں و انتظامیہ سے اپیل کی ہے کہ انکی جلد از جلد مدد کی جائے تاکہ وہ زندگی پھر سے شروع کرسکے۔ 
 
 

 باغ باہو میں میوزیکل فاؤنٹین کو جلد شروع کرنے کی ہدایت 

جموں// لیفٹیننٹ گورنر کے مشیر بصیر احمد خان نے باغِ باہو میں میوزیکل فاؤنٹین کے سلسلے میں سول سیکرٹریٹ میں افسران کی میٹنگ منعقد کی۔میٹنگ میں کمشنرسیکرٹری پھولبانی ،سیکرٹری سیاحت ، چیف انجینئر جل شکتی ، چیف انجینئر پی ڈی ڈی اور دیگر متعلقہ سینئر اَفسران نے شرکت کی۔مشیر موصوف نے افسران کو قریبی تال میل سے کام کرنے کی ہدایت دی تاکہ میوزیکل فاؤنٹین کو وقت پر شروع کیا جائے اور اس کے لئے ایک مناسب لائحہ عمل تیار کرنے کی ضرورت ہے۔میوزیکل فاؤنٹین کا منصوبہ باغ باہو میں محکمہ سیاحت نے تعمیر کیا تھا۔مشیر موصوف نے کہا کہ میوزیکل فاؤنٹین کا جموں کے لوگوں کے لئے بہت فائدہ مند ثابت ہوگا اور سیاحوں کے لئے بہت بڑی توجہ کا مرکز بنے گا۔ مشیر بصیر خان نے میوزیکل فاؤنٹین کو بجلی کی فراہمی کے حوالے سے چیف انجینئر کو ہدایت دی کہ وہ 5 ؍مئی تک رپورٹ پیش کریں۔ مشیر کو جانکاری دی گئی کہ تمام شرائط مکمل ہوچکی ہیں اور آٹومیٹک وولٹیج ریگولیٹر کی فراہمی معائینہ کے مرحلے پر ہے اوروقت پر نصب وقت کیاجائے گا۔مشیر موصوف نے چشمہ کو پانی کی فراہمی کے بارے جل شکتی اور پھولبانی کو ہدایت دی کہ وہ میوزیکل فاؤنٹین کو شیئرنگ کی بنیاد پر پانی کی فراہمی کو ایک مختصر مدت اقدام کے طور پر ایک ایسا طریقۂ کار اختیار کریں جب تک کہ پھولبانی کی فراہمی کو متاثر کئے بغیر پانی کی فراہمی متاثر نہ ہو۔مشیر نے ایک طویل مدتی منصوبے کے لئے اَفسران کو ہدایت دی کہ وہ میوزیکل فوارے کو علیحدہ دستیاب پانی فراہمی کے لئے ایک تفصیلی پروجیکٹ رِپورٹ مرتب کر کے پیش کریں۔
 
 
 
 

ڈوڈہ میں گرام سبھاؤں کا مقصد فلاپ :عوام |  محکمہ دیہی ترقی و پنچائتی نمائندگان پر بند کمروں میں پلان مرتب کرنے کا الزام 

اشتیاق ملک
ڈوڈہ //ڈوڈہ ضلع میں محکمہ دیہی ترقی کی ناقص کارکردگی پر آئے روز لوگ سراپا احتجاج ہوتے ہیں، کہیں مرکزی معاونت والی اسکیموں میں بے ضابطگیوں و کہیں بند کمروں میں پلان مرتب کرنے و رشوت ستانی جیسے الزامات سامنے آرہے ہیں۔بلاک گندنہ کی پنچائت ڈھل کھنکوٹ سے آئے ایک وفد نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ 2021-22 کے لئے 14thو 15th ایف سی کے تحت محکمہ دیہی ترقی نے عوام کو اطلاع کئے بغیر اپنے چند منظور نظر لوگوں کے ساتھ مل کر بند کمروں میں پلان ترتیب دیا۔انہوں نے کہا کہ حکومت نے بے روزگار نوجوانوں کو پنچائتی سطح پر بیک ٹو ولیج کام حاصل کرنے کے لئے ٹھیکیداری کارڈ جاری کرنے تھے تاہم پنچائتی نمائندگان و محکمہ دیہی ترقی نے بناء￿  گرام سبھا کے ہی اپنے رشتہ داروں کے نام دئیے جو کہ عوام کو قبول نہیں ہے۔وفد میں شامل فیروز دین ٹپل، امتیاز احمد، شوکت ٹپل، فردوس احمد نے کہا کہ حکومت گرام سبھا کے ذریعے ہر کام کرنا چاہتی ہے لیکن محکمہ دیہی ترقی کے ملازمین اپنی من مانی سے کام کرتے ہیں۔ انہوں نے حکام سے معاملہ کی تحقیقات کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔اس دوران بلاک جکیاس میں نوجوان سماجی کارکن وصیت ٹاک کی قیادت میں مقامی لوگوں نے بی ڈی او و دیگر عملہ پر رشوت ستانی کا الزام عائد کیا۔ انہوں نے کہا کہ زمین پر کام کچھ اور کاغذوں پر کچھ ہوتا ہے اور غریب و مستحق افراد کو نظر انداز کیا جاتا ہے۔انہوں نے کہا کہ ہر کام کے لئے بھاری کمیشن وصول کی جاتی ہے جو کہ مزدور و غریب طبقہ پورا نہیں کر سکتا ہے جس کی وجہ سے ان کے کام نہیں ہوتے ہیں۔ڈی ڈی سی ممبر کاہرہ معراج الدین ملک نے گرام سبھاؤں میں عوام کو بیوقوف بنانے کا الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ اکثر پنچائتی نمائندگان بند کمروں میں محکمہ کے ملازمین کے ساتھ پلان ترتیب دیتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ گرام سبھاؤں کا مقصد عام آدمی کو مالی معاونت والی اسکیموں کے بارے میں جانکاری دینا و اس زمرے میں شامل کرنا ہے لیکن محکمہ و پنچائتی نمائندگان اس کے برعکس کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اس معاملہ کو اعلیٰ حکام کی نوٹس میں لایا جائے گا ہر مستحق فرد کو اس کا دلانے کی پوری کوشش کی جائے گی۔انہوں نے لوگوں سے اپیل کی کہ وہ گرام سبھاؤں میں زیادہ سے زیادہ شرکت کرنے پر زور دیا اور محکمہ و پنچائتی نمائندگان سے گرام سبھاؤں میں منظور کاموں کو ہی ترجیح دینے کی اپیل کی۔
 
 
 

فوج کی جانب سے وی ڈی سی ممبروں کے ساتھ میٹنگ

زاہد بشیر
گول//ایک مستحکم معاشرے اور پرامن خطے کو برقرار رکھنے کے لئے فوج نے رام بن ضلع کے وی ڈی سی ممبروں کے ساتھ دو روزہ بات چیت کا پروگرام چلایا۔ علاقہ سمڑ کے گاؤں جنوری میں بات چیت 17 اور 18 اپریل کو کی گئی تھی ، جس میں 82 وی ڈی سی ممبران نے سمڑخطے کے سات دیہات سے حصہ لیا تھا جس میں لانوسو ، لوٹ ، مالپٹی ، بھجی ، میگدھار ، لوہاردر اور ڈوکسنڈی شامل تھے۔اس اقدام کا مقصد علاقے میں سیکورٹی کی صورتحال کا جائزہ لینا تھا ۔ ہندوستانی فوج نے وی ڈی سی ممبروں کی اسلحہ اور گولہ بارود کی قابل خدمت جانچنے کے لئے یہ موقع لیا۔ وی ڈی سی گروپ کے رہنماؤں نے اس اقدام پر آرمی کا شکریہ ادا کیا ۔
 
 
 

اپنی پارٹی کا اودھم پور میں عوامی رابطہ پروگرام | پارٹی ممبر شپ کا آغاز، معروف کشمیری پنڈتوں کی پارٹی میں شمولیت

اودھم پور//عوامی رابطہ مہم کے تحت اودھم پور میں اپنی پارٹی ڈس پلیسڈ کشمیری پنڈتوں کی طرف سے پروگرام کا اہتمام کیاگیا ۔ پارٹی جنرل سیکریٹری وجے بقایہ کی ہدایات پر کشمیری پنڈتوں کے ریاستی کارڈی نیٹر ونود پنڈیتہ اور سنجے دھر بھی موجود تھے جن کا وہاں شاندار استقبال کیاگیا۔ ونود پنڈیتہ نے خطاب کرتے ہوئے ریاستی درجہ کی بحالی سے متعلق پارٹی موقف کو دوہراتے ہوئے یقین دلایاکہ جلا وطنی جیسے زندگی گذار رہے کشمیری پنڈتوں کی روز مرہ مشکلات کو اپنی پارٹی ترجیحی بنیادوں پر حل کرے گی۔ انہوں نے یقین دلایاکہ اپنی پارٹی الطاف بخاری کی قیادت میں اُن کے دکھ درد سے بخوبی واقف ہے اور مشکلات کو حل کرنے کے لئے کوئی دقیقہ فروگذاشت نہیں چھوڑے گی۔ سنجے دھر نے بھی خطاب کیا اورکشمیری پنڈتوں کے اہم مطالبات پر روشنی ڈالی۔ انہوں نے لیفٹیننٹ گورنر جموں وکشمیر سے اپیل کی کہ وزیر اعظم پیکیج کے تحت کام کرنے والے ملازمین جنہیں کشمیر کے اندر رہائش کو لیکر مشکلات ہیں ، کو حل کیاجائے اور اُن کے لئے کشمیری کے اندر مناسب کوارٹر تعمیر کئے جائیں۔ کشمیر کے سبھی ٹرانزٹ کیمپوں میں بلاخلل پانی اور بجالی سپلائی یقینی بنائی جائے۔ دھرنے کشمیری پنڈتوں سے اپیل کی کہ وہ اپنی پارٹی کو مضبوط بنائیں کیونکہ ترقی، امن اور خوشحالی کیلئے اِس جماعت کو مضبوط بنانے وقت کی ضرورت بن گئی ہے۔
 
 
 

 منجیت سنگھ کا عوامی رابطہ پروگرام | حکومت سے ترجیحی بنیادوں پر عوامی مسائل حل کرنے کی گذارش

پرمنڈل//ضلع سانبہ کے بلاک پرمنڈل کے شامہ تالاب علاقہ میں عوامی رابطہ مہم کے تحت اپنی پارٹی کی ایک میٹنگ منعقد ہوئی جس میں لوگوں کو درپیش مشکلات ومسائل کو اجاگر کیاگیا۔ اس موقع پر پارٹی صوبائی صدر منجیت سنگھ مہمان خصوصی تھے۔ اپنے خطاب میں انہوں نے اپنی پارٹی کی پالیسیوں اور پروگراموں پر تفصیلی روشنی ڈالی اور لوگوں سے اپیل کی کہ وہ انصاف، ترقی اور خوشحالی کی خاطر اپنی پارٹی میں شامل ہوں کیونکہ یہ ریاست کی واحد جماعت ہے جوکہ صداقت پر مبنی سیاست کر رہی ہے اور اور وعدوں کو عملی جامہ پہنانے پر یقین رکھتی ہے۔ انہوں نے علاقوں میں مناسب سڑک کی تعمیر، پینے کے صاف پانی اور بجلی فراہمی یقینی بنانے کے لئے انتظامیہ سے پختہ اقدامات اُٹھانے کی اپیل کی۔ انہوں نے کہاکہ دہائیوں سے حکومت ِ ہند نے درج فہرست قبائل کی تعمیر وترقی کے لئے خطیر رقم خرچ کی ہے لیکن  شامہ تالاب علاقہ کے شہریوں کو آزادی کے ستر سال بعد بھی بنیادی سہولیات نہیں ملی ہیں۔
 
 
 

غیر قانونی کان کنی مافیا کیخلاف پولیس کارروائی کی تعریف

جموں//اپنی ٹریڈ یونین صدر اعجاز کاظمی نے ایس ایس پی پونچھ کی طرف سے غیر قانونی بجری مافیا کے خلاف کارروائی کرتے ہوئے 26گاڑیوں کو ضبط کرنے کے قدم کی سراہنا کی ہے۔ انہوں نے کہاکہ انہوں نے کہاکہ اِس کان کنی مافیا کی وجہ سے تعمیراتی سامان کی قیمتیں آسمان چھو رہی ہیں۔انہوں نے کہاکہ ’’موجودہ کان کنی پالیسی نے معدنیات ، ریت وبجری نکالنے پر روک لگائی ہے جس کی وجہ سے جموں وکشمیر بھر میں لوگ مشکلات کا شکار ہیں، البتہ ایسا مافیا کیڈر سرگرم عمل ہے جس وجہ سے بازار میں تعمیراتی سامان کی قیمتیں بہت بڑھ گئی ہیں۔ انہوں نے اس قدم کی تعریف کرتے ہوئے کہاکہ جموں وکشمیر کے دیگر علاقوں میں افسران ایسے ہی اقدامات کریں۔ انہوں نے کہاکہ غیر قانونی کان کنی سرگرمیوں پر روک لگانے کے لئے فوری کارروائی کرنے سے لوگوں کو قانون کی پیروی کرنے کی حوصلہ افزائی ہوگی۔
 
 
 
 

نیرم رنگ بنگلہ کے لوگوں کی طبی مرکز قائم کرنے کی مانگ

زاہد ملک
مہور//سب ڈویژن ہیڈ کوٹر مہور سے تقریباً 20 کلومیٹر کی دوری پر پنچایت ساڑھ کے رنگ بنگلہ اور نیرم کے لوگوں نے مانگ کی ہے کہ وہاں پر ایک طبی مرکز قائم کیا جائے۔ان لوگوں نے شکایت کی ہے کہ انہیں چھوٹی سی بیماری کیلئے بھی مہور ہیڈکوارٹر کا رخ کرنا پڑتا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ سڑک کی سہولیت نا ہونے کے باعث انہیں ہیڈکوارٹر تک پہنچنے میں بھی کافی دکتوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ اس علاقہ میں تقریباً 200 سے زائد گھر ہیں جنہیں کافی مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے ۔یہاں کی ایک آشا ورکر نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ اس علاقہ میں کسی حاملہ عورت کو زچگی کی تکلیف ہوتی ہے، علاقہ میں کوئی طبی مرکز نا ہونے کے باعث انہیں خاتون کو چار پائی پر اٹھا کر مہور بازار کا رخ کرنا پڑتا ہے جن میں کئی ایک خواتین راستے میں ہی دم توڑ دیتی ہیں۔مقامی لوگوں نے انتظامیہ سے مانگ کی ہے کہ اس علاقہ میں ایک طبی مرکز قائم کیا جائے۔