تازہ ترین

کوڈ 19کی دوسری لہر | سکول ، کالج اور یونیورسٹیاں 15مئی تک بند

سماجی اجتماعات میں حاضرین کی حد مقرر، پبلک ٹرانسپورٹ میں اورلوڈنگ پر پابندی

تاریخ    19 اپریل 2021 (00 : 12 AM)   


پرویز احمد
 سرینگر //جموںو کشمیر سرکار نے تمام سکولوں، کالجوں اور یونیورسٹوں کو 15مئی تک بند کرنے کا اعلان کیا ہے جبکہ سماجی اجتماعات میں حاضرین کی حد اور پبلک ٹرانسپورٹ میں اورلوڈنگ پر پابندی عائد کردی گئی ہے۔حکم نامہ میں سفر کرکے ریل، زمینی اور ہوائی راستے سے جموںو کشمیر آنے والے لوگوں کیلئے کورونا وائرس کی تشخیص کیلئے کویڈ اینٹی جن ٹیسٹ کو قوائد و ضوابط کے تحت لازمی قرار دیا گیاہے۔ اتوار کو جموںو کشمیر سرکار کی جانب سے جاری کئے گئے حکم نامہ زیر نمبر21-JK(DMRRR)بتاریخ 18اپریل 2021میں کہا گیا ہے ’’ جموں و کشمیر کے تمام  تعلیمی ادارے بشمول سکول ، کالج اور یونیورسٹیاں فی لحال 15مئی تک بند رہیں گے‘‘۔ حکم نامہ میں سماجی اجتماعات میں لوگوں کی تعداد مقرر کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ جنازہ و تدفین میں محض 20افراد جبکہ دورون خانہ ( چار دیواری کے اندر)منعقد ہونے والی تقریبات میں 50اور بیرون خانہ( چار دیواری سے باہر) اجتماعات و تقاریب میں 100افراد کے شمولیت کی اجازت ہوگی۔ حکم نامہ میں ٹرانسپورٹ کے حوالے سے کہا گیا ہے کہ میٹاڈار، منی بسوں اور ٹرانسپورٹ کے دیگر ذرائع میں  سیٹوں کی تعداد(منظور شدہ تعداد )میں لوگوں کو بیٹھنے کی اجازت ہوگی جبکہ گاڑیوں میں اورلوڈنگ کی اجازت نہیں ہوگی۔حکم نامہ میں مزید کہا گیا ہے کہ پولیس کے ضلع سپر انٹنڈنٹوں کو خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف قانونی کارروائی کرنے کی سخت ہدایت دی گئی ہے۔سرکاری حکم نامہ میں تمام کالجوں اور یونیورسٹیوں کو طلبہ کی ظاہری موجودگی میں تعلیم کیلئے  15مئی تک بند کردیا گیا ہے تاہم یہ حکم نامہ ان کورسوں زیر تعلیم طلبہ کیلئے لاگو نہیں ہوگا جہاں طلبہ کی ظاہری موجودگی لازمی ہے ،جن میں لیبارٹری میں تحقیق یا انٹرشپ وغیروہ شامل ہیں۔  مارکیٹ ایسوسی ایشن کو بھیڑ بھاڑ کم کرنے کیلئے اوقات کار رضاکار انہ طور پر طے کرنے کی چھوٹ دی گئی ہے، تمام مقامی بازاروں اور مارکیٹ ایسوسی ایشن سے تعاون کی اپیل کی گئی ہے۔حکم نامہ میں خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف سخت کارروائی کرنے کی ہدایت دی گئی ہے۔ تمام ضلع ترقیاتی کمشنروں کو ہدایت دی گئی ہے کہ وہ بازاروں ،مارکیٹوں اور شاپنگ مالوں میں وائرس کی روکھتام کیلئے وضع کئے گئے قوائد و ضوابط پر عمل آوری کو یقینی بنانے کیلئے اقدامات اٹھائیں۔
 
 
 
 

ملک میں 2لاکھ 61ہزار500متاثر | مزید 1501فوت

یو این آئی
نئی دلی //ملک میں اتوار کو وائرس سے ریکارڈ 2لاکھ 61ہزار 500افراد وائرس سے متاثر ہوئے اور اسطرح متاثرین کی مجموعی تعداد 1کروڑ47لاکھ،88ہزار 109ہوگئی ہے جبکہ سرگرم معاملات کی تعداد 18لاکھ سے پار ہوچکے ہے۔ اس دوران مزید 1501افراد وائرس سے فوت ہوگئے۔ ملک میں متوفین کی مجموعی تعداد 1لاکھ 77ہزار 150تک پہنچ گئی ہے جبکہ صحتیاب ہونے والوں کی شرح کم ہوکر 86.62تک پہنچ گئی ہے۔ صحتیاب ہونے والوں کی تعداد 1کروڑ 28لاکھ 9 ہزار 643تک پہنچ گئی ہے جبکہ مرنوں کی شرح میں مزید کمی آئی ہے اور یہ 1.20تک سمٹ گئی ہے۔ پچھلے 18 دنوں میں 26 لاکھ 39 ہزار 160 کیس بے نقاب ہوچکے ہیں۔ پچھلے 18 دنوں میں 14 ہزار 191 اموات ہوئیں۔ 31 مارچ کو 457 افراد ہلاک ہوئے اور اب یہ تعداد 18 اپریل کو 1501 تک جا پہنچی ہے۔ جبکہ 31 مارچ کو ، 72,019نئے کیسز سامنے آئے ، جو اب روزانہ تقریبا 3.5 گنا بڑھ چکے ہیں۔مہارشٹرامیں پچھلے 24گھنٹوں کے دوران69ہزار سے زائد کیسز درج ہوئے جبکہ دلی میں ابتک کا ایک دن میں ریکارڈ اضافہ دیکھنے میں آیا جو 25ہزار سے زائد تھا۔
 
 
 

جموں کشمیر میں1526 مثبت ، 6فوت | کل متاثرین وادی میں88ہزار ،جموں میں 58ہزار

پرویز احمد 
 سرینگر //جموں و کشمیر میں اتوار کو 226سفر کرنے والوں سمیت ریکارڈ 1526افراد کی رپورٹیں مثبت آئی ہیں۔ اس دوران مزید 6افراد فوت ہوگئے۔ پچھلے 24گھنٹوں کے دوران کورونا وائرس کی تشخیص کیلئے  39ہزار 840ٹیسٹ کئے گئے جن میں 1526کی رپورٹیں مثبت آئیں جن میں 547جموں جبکہ 979کشمیر سے تعلق رکھتے ہیں۔ کشمیر سے تعلق رکھنے والے 979افراد میں 860مقامی سطح پر جبکہ 117بیرون ریاستوں اور ممالک سے سفر کرنے کے بعد کشمیر آئے ہیں۔مثبت قرار دئے گئے 979افراد میں سرینگر میں520، بارہمولہ میں 122، بڈگام میں 70، پلوامہ میں 76، کپوارہ میں 23، اننت ناگ میں 50، بانڈی پورہ میں 44، گاندربل میں 14، کولگام میں 47اور شوپیان سے 14افراد تعلق رکھتے ہیں۔ متاثرین کی مجموعی تعداد 88ہزار کا ہندسہ پار کرکے 88108تک پہنچ گئی ہے۔ اس دوران وادی میں مزید 3افراد وائرس سے فوت ہوگئے جن میں کنزر بارہمولہ کا 50سالہ شخص،  بمنہ سرینگر کا 75سالہ معمر شخص اور چیک پتھ اننت ناگ کا 85سالہ معمر شخص شامل ہے۔ متوفین کی مجموعی تعداد 1293تک پہنچ گئی ہے۔ جموں میں مزید 547افراد کی رپورٹیں مثبت آئی ہیں۔ان میں 440مقامی سطح پر جبکہ 107بیرون ریاستوں اور ممالک سے سفر کرنے کے بعد جموں پہنچے ہیں۔جموں صوبے کے 547متاثرین میں ضلع جموں  میں 299، ادھمپور میں 29، راجوری میں 28، ڈوڈہ میں 5، کٹھوعہ میں 51، سانبہ میں 20، کشتواڑ میں 0، پونچھ میں  3،رام بن میں 24اور ریاسی سے 88تعلق رکھتے ہیں۔متاثرین کی مجموعی تعداد 58ہزار584تک پہنچ گئی ہے۔ اس دوران جموں صوبے میں بھی کورونا وائرس سے 3افراد فوت ہوگئے ہیں۔ جموں صوبے میں متوفین کی مجموعی تعداد 764تک پہنچ گئی ہے۔ جموں و کشمیر میں متاثرین کی مجموعی تعداد 1لاکھ 46ہزار692تک پہنچ گئی ہے جن میں 2057افراد فوت ہوگئے۔ 
 
 
 
 

جموں میں 23افراد برطانوی وائرس سے متاثر | کشمیرسے300رپورٹوں کا انتظار

پرویز احمد 
 سرینگر //جموں و کشمیر میں برطانوی ہیت کے وائرس نے لوگوں کو متاثر کرنا شروع کردیا ہے اور ابتک 23افراد میں برطانوی ہیت کے وائرس کی موجودگی کی تصدیق ہوئی ہے۔محکمہ صحت و طبی تعلیم کے فائنانشل کمشنر اتل ڈلو نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا ’’ برطانوی ہیت کے وائرس سے جموں میں 23افراد متاثر ہوئے ہیں جبکہ ابھی کئی نمونوں کی رپورٹیں آنا باقی ہے‘‘۔انہوں نے کہا’’ کشمیر صوبے سے بھی 300نمونے نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف وائرولاجی بھیجے گئے ہیں لیکن ان کی رپورٹ آنا ابھی باقی ہے‘‘۔کشمیرمیں کورونا وائرس کے پھیلائو پر نظر گزر رکھنے پر تعینات نوڈل آفیسر ڈاکٹر طلعت جبین نے بتایا ’’ بیرون ریاستوں اور ممالک سے آنے والے افراد میں بھی پچھلے 3ماہ کے دوران مثبت کیسوں کی شرح 5فیصد ہی رہے اور یہاں ابتک نئی ہیت کے وائرس سے کوئی متاثر نہیں ہوا ہے‘‘۔ ڈاکٹر طلعت جبین نے بتایا ’’ نمونوں کوجمع کرنے میں وقت لگتا ہے اوران نمونوں کو بعد میں تشخیص کیلئے دلی بھیجا جاتا ہے‘‘۔ انہوں نے کہا کہ ابھی 300نمونوں کی رپورٹیں آنا باقی ہے اور انکی رپورٹ آنے کے بعد ہی اصل حقیقت سامنے آئے گی۔