تازہ ترین

اچھن سعدہ پورہ سے اٹھنے والی عفونت اور بدبو لوگوں کیلئے وبال جان | راحت کیلئے فوری طور ادویات کے چھڑکاؤ کی مانگ

تاریخ    15 اپریل 2021 (00 : 01 AM)   


نیوز ڈیسک
سرینگر//سید ہ پورہ اچھن عید گاہ سرینگر میں کوڑا کرکٹ کو سائنسی طریقے سے ٹھکانے لگانے میںسرینگر میونسپل کارپوریشن ناکام ہوچکی ہے جبکہ کوڑا کرکٹ پر گزشتہ تین ماہ سے ادویات نہ چھڑکنے کی وجہ سے گندگی و غلاظت کے سے اُٹھنے والی بدبو آس پاس کے مکینوں کیلئے وبال جان بن گیا ہے ۔ سید پورہ اچھن عید گاہ سرینگر میں کوڑا کرکٹ و غلاظت کو شہر سرینگر کے مختلف علاقوں سے لاکر وہاں ڈالا جاتا ہے اور میونسپلٹی نے وہاں ڈمپنگ سائٹ قائم کرکے سرکار کو یہ یقین دلایا تھا کہ شہر بھر سے لائی گئی گندگی کو وہاں سائنسی طریقے سے ضائع کیا جائے گا تاہم میونسپلٹی ایسا کرنے میں ناکام ہوچکی ہے ۔ ڈمپنگ سائٹ600کنال اراضی پر پھیلی ہے اور روزانہ ایک سو سے زائد گاڑیوں میں شہر کا کوڑا کرکٹ وہاں ڈالا جاتا ہے جبکہ میونسپلٹی نے وہاں کوڑا کرکٹ کو ٹھکانے لگانے کیلئے جو مشین نصب کی ہے وہ محض دن میں 10گاڑیوں کے کوڑا کرکٹ کو ہی ٹھکانے لگاسکتی ہے جبکہ دیگر 90سے زائد گاڑیوں کا کوڑا وہاں جمع ہوتا ہے ۔ اس کے علاوہ کوڑ اکرکٹ سے اُٹھنے والی بدبو پر قابو پانے میں کوڑا کے ڈھیروں پر ادویات چھڑکنے سے بدبو ختم ہوجاتی ہے ۔ لیکن میونسپلٹی نے گذشتہ 3ماہ سے کوڑے پر کوئی دوائی نہیں چھڑکی ہے جس کے نتیجے میں وہاں بدبو پھیل جاتی ہے اور آس پاس کے علاقوںمیں رہنے والے لوگوں کے لئے باعث عذاب بن جاتی ہے ۔ مقامی لوگوں نے کہا کہ بدبو سے لوگ کئی طرح کی بیماریوں میں مبتلاء ہوچکے ہیں جبکہ ہمارے یہاں اب کوئی بھی مہمان ایک گھنٹے سے زیادہ نہیں ٹھہر سکتا کیوںکہ بدبو کی وجہ سے ان کی طبیعت خراب ہوجاتی ہے اور وہ چلے جاتے ہیں ۔ اس طرح سے آس پاس کے علاقوں کا سماجی رشتہ بھی اب ختم ہوگیا ہے ۔ (سی این آئی)