تازہ ترین

نئی فلم پالیسی10 دن میں منظر عام پر آجائے گی: لیفٹیننٹ گورنر

دفعہ 370کی تنسیخ کے بعد سیاحت میں 5گنااضافہ ہوا: مرکزی وزیر مملکتسیاحت

تاریخ    13 اپریل 2021 (00 : 01 AM)   


نیوز ڈیسک
سرینگر//جموں و کشمیر کے لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے پیرکے روزاعلان کیاکہ ان کی سربراہی میں انتظامیہ10 روز کے اندر ’جموں و کشمیر کیلئے نئی فلم پالیسی‘سامنے لائے گی جس کا مقصد سنہری دور کو سنہری اسکرین پر واپس لانا ہے۔ڈل جھیل کے کنارے ایس کے آئی سی سی میں ’’جنت میں ایک اور دن - کشمیر کی سیاحتی صلاحیت‘‘کے موضوع سے متعلق2 روزہ کانفرنس سے ورچوئل موڈ کے ذریعہ ، خطاب کرتے ہوئے لیفٹیننٹ گورنرنے کہا کہ جموں و کشمیر حکومت نے تمام متعلقین کیساتھ مباحثے وصلاح مشورے کے بعد نئی فلم پالیسی کو تقریبا ً حتمی شکل دے دی ہے، اور آئندہ10 روز کے اندر اس کا اعلان کیا جائے گا۔انہوں نے کہاکہ یہ نئی فلم پالیسی ایک روڈ میپ پر مشتمل ہے کہ ہم کیسے چاندی کی سکرین پر 70 اور 80 کی دہائی کے سنہری دور کو واپس لاسکتے ہیں۔منوج سنہاکاکہناتھاکہ ہم پڑھتے اور سنتے آرہے ہیں کہ 60 ، 70 اور 80 کی دہائی میں کشمیر فلم بنانے والوں یعنی بالی ووڈکا پسندیدہ مقام ہوتا تھا۔ منوج سنہانے کہا کہ ہم بحیثیت ایک ٹیم اسی ثقافت کو واپس لانے کیلئے کام کریں گے۔ انہوں نے مزید کہا کہ یہ پالیسی جموں و کشمیر اور دیگر حصوں میں مختلف اہم متعلقین سے مکمل مشاورت کے بعد تیار کی گئی ہے۔سنہا نے کہاکہ ایک روڈ میپ پر عمل کیا جائے گا کہ کس طرح کشمیر میں سنہری دور اور فلمی کلچر کو واپس لایا جائے۔نئے سیاحتی مقامات کے بارے میں ، لیفٹیننٹ گورنرنے کہا کہ سیاحت کی بحالی کیلئے سنجیدہ کوششیں جاری ہیں اور متعدد نئے سیاحتی مقامات کی تلاش کی جارہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم نئے سیاحتی مقامات پر سیاحت کا ایک بہتر بنیادی ڈھانچہ لگانے پر توجہ مرکوز کر رہے ہیں تاکہ سیاح نئی جگہوں پربغیرکسی پریشانی کے لطف اٹھا سکیں۔انہوںنے کہاکہ اس کیلئے ہم نے نجی سیکٹر کو بھی مدعو کیا ہے۔منوج سنہا نے کہا کہ کوڈ 19 وبائی بیماری کے باوجود ، دسمبر2020 کے بعد سے ہندوستان میں باقی ریاستوں کے مقابلے میں گھریلو سیاحوں کی تعداد سب سے زیادہ دیکھنے میں آئی۔انہوں نے کہا کہ سیاحوں کیلئے سفر میں آسانی کو یقینی بنانے کیلئے بہت سے اقدامات اٹھائے گئے ہیں،سرینگر ہوائی اڈے سے رات کی پروازیں چل رہی ہیں ، سرینگر سے بنگلورو کیلئے اب براہ راست پرواز ہے۔انہوں نے کہا کہ سیاح نہ صرف مقامات کی تلاش کیلئے ، بلکہ وادی کے لوگوں سے بھی جڑنے کیلئے کشمیر آ رہے ہیں۔اس موقعہ پرمرکزی وزیر سیاحت و ثقافت پرہلاد سنگھ پٹیل نے بھی ورچیول موڈ پر تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ جموں و کشمیر میں سیاحوں کی آمد کو بہتر بنانے کے لئے، اس کانفرنس کا انعقاد کیا گیا ہے جس میں تمام فریقین سے ملاقات ، تبادلہ خیال اور پورے جموں و کشمیر میں سیاحت کا ڈھانچہ بہتر بنانے کے لئے تجاویز دینے کی دعوت دی گئی ہے ۔پٹیل نے کہا ’’میرے خیال میں دفعہ370کی تنسیخ اور اس کے بعد ہونے والے دیگر ترقیاتی کاموں کے بعد یہاں آنے والے سیاحوں کی تعداد میں اضافہ ہوا ہے‘‘ ۔اس موقعہ پرمرکزی سکریٹری سیاحت نے کہا کہ ہم جموں و کشمیر میں سیاحت کی بحالی کے لئے وبائی مرض کے بعد سے پوری کوشش کر رہے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ سردیوں میں بحالی سیاحت کے سلسلے میں کوششیں شروع ہوئیں اور خاص طور پر گھریلو سیاحوں کیلئے موسم گرما میں یہ سلسلہ جاری رہے گا ۔سکریٹری سیاحت ، جموں و کشمیر نے اس موقع پر جموں و کشمیر میں سیاحت کے کچھ تاریخی مقامات اور جموں و کشمیر کے سیاحت کے نقشے میں ان کی اہمیت کو اجاگر کیا۔ انہوں نے کہا کہ جموں و کشمیر کا دورہ سارا سال ایک عمدہ تجربہ ہے اور چاروں سیزن کی پیش کش کے لئے کچھ انوکھا ہے۔ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل ، وزارت سیاحت نے خطبہ استقبالیہ پیش کیا۔ڈائریکٹر ٹورزم کشمیر ، ڈاکٹر جی این اتو نے کشمیر میں سیاحت کے امکانات کے بارے میں پاورپوائنٹ پریزنٹیشن پیش کیا ، جس میں انہوں نے جموں و کشمیر میں سیاحتی مقامات کی تعداد کو پیش کیا۔اس پروگرام میں مرکزی سیاحت کے سکریٹری ، اروند سنگھ ، سیکریٹری سیاحت جموں و کشمیر سرمد حفیظ ، ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل وزارت سیاحت  روپندر براڑ  نے بھی شرکت کی۔

تازہ ترین