تازہ ترین

کورونا وائرس کی امسال کی ریکارڈ اچھال| 1005متاثر، 6فوت

۔ 492کا تعلق سرینگر سے، متاثرین کی مجموعی تعداد 1,37,475

تاریخ    11 اپریل 2021 (00 : 01 AM)   


پرویز احمد
  سرینگر //جموں و کشمیر میں روزانہ کورونا وائرس سے متاثر ہونے والے افراد کی تعداد سنیچر کو 1000کا ہندسہ پار کرکے 1005تک پہنچ گئی جن میں تقریبا 50فیصدمتاثرین کا تعلق ضلع سرینگر سے ہے۔2021میں کورونا متاثرین کی یہ سب سے بڑی تعداد ہے۔ہفتہ کو 6افراد وائرس سے زندگی کی جنگ ہار گئے۔ پچھلے 24گھنٹوں کے دوران وائرس کی تشخیص کیلئے 42ہزار 60 ٹیسٹ کئے گئے جن میں 1005افراد کی رپورٹیں مثبت آئی ہیں۔متاثرین میں بیرون ریاستوں اور ممالک سے کشمیر آنے والے 154افراد بھی شامل ہیں۔ مثبت قرار دئے گئے 1005افراد میں سے 299کا تعلق جموں جبکہ 706افراد کشمیر میں متاثر ہوئے ہیں۔ کشمیر میں متاثر ہونے والے 706افراد میں623مقامی سطح جبکہ 83سفر کرکے آئے ہیں۔ سرینگر میں سب سے زیادہ 492افراد وائرس سے متاثرپائے گئے جبکہ دیگر اضلاع میں بارہمولہ میں 93، بڈگام میں 25، پلوامہ میں 31، کپوارہ میں 14، اننت ناگ میں 32، بانڈی پورہ میں 5، گاندربل میں 3، کولگام میں 8 اور شوپیان سے 3تعلق رکھتے ہیں۔ اس دوران کپوارہ میں ایک شخص فوت ہوگیا۔ جموں صوبے میں 299افراد کی رپورٹیں مثبت آئیں۔ صوبے کے 299متاثرین میں 228مقامی طور پر جبکہ 71بیرون ریاستوں اورممالک سے سفر کر کے لوٹے ہیں۔ 299متاثرین میں ضلع جموں میں183، ادھمپور میں 17، راجوری میں 2،ڈوڈہ میں 2، کٹھوعہ میں 20، سانبہ میں 11، کشتواڑ میں 0، پونچھ میں 2، رام بن میں 4اور ریاسی سے 58 تعلق رکھتے ہیں۔ جموں صوبے میں 5افراد وائرس سے فوت ہوگئے جن میں 3ضلع جموں اور 2ریاسی سے تعلق رکھتے ہیں۔ جموں صوبے میں متاثرین کی مجموعی تعداد 54ہزار915ہوگئی ہے جن میں 752فوت ہوگئے ہیں۔ جموں و کشمیر میں کورونا وائرس متاثرین کی مجموعی تعداد 137475ہوگئی ۔متوفین کی مجموعی تعداد 2029تک پہنچ گئی۔
 

 بھارت میں دوسری لہرکا قہر 

ایک لاکھ 45ہزار کا اضافہ، 794 فوت

یو این آئی
 
نئی دہلی // پوری دنیا کے ساتھ ساتھ کورونا وائرس کا قہر پورے ملک میں جاری ہے۔ 24 گھنٹوں کے دوران کورونا کے 1 لاکھ 45 ہزار 348نئے معاملات سامنے آئے ہیں جبکہ اس دوران وائرس سے 794افراد فوت ہوگئے۔ مرکزی وزارت صحت کی جانب سے جاری کئے گئے اعداد و شمار بتایا گیا ہے کہ ایک لاکھ 45ہزار سے زائد کیسوں کے اضافہ سے متاثرین کی مجموعی تعداد ایک کروڑ 32لاکھ5ہزار 926ہوگئی ہے۔ اعداد و شمار نے مزید بتایا گیا ہے کہ ملک میں مزید 794افراد وائرس سے فوت ہوگئے اور اسطرح مرنے والوں کی تعداد ایک لاکھ 68ہزار 436ہوگئی ہے۔ سنیچر کو 18اکتوبر کے بعد سب سے زیادہ اموات ہوئی ہےں۔ بھارت میں 31ویں دن بھی کورونا متاثرین میں اضافہ کا سلسلہ جاری رہا اور سرگرم معاملات کی تعداد 10لاکھ 46ہزار 631ہوگئی جو کل متاثرین کا 7.93فیصد ہے جبکہ صحتیابی کی شرح کم ہوکر 90.80فیصد رہ گئی ہے۔ 12فروری کو ملک میں سب سے کم 1لاکھ 35ہزار 926سرگرم معاملات تھے جو اسوقت متاثرین کی کل تعداد کا 1.25فیصد تھا ۔ بیماری سے صحتیاب ہونے والے افراد کی تعداد ایک کڑوڑ 19لاکھ 90ہزار 859تک پہنچ گئی جبکہ اموات کی شرح میں مزید کمی کے ساتھ یہ 1.28پر سمٹ گئی۔ ملک میں 7اگست کو 20لاکھ، 23اگست کو 30لاکھ، 5ستمبر کو 40لاکھ، 16ستمبر کو 50لاکھ، 28ستمبر کو 60لاکھ، 11اکتوبر کو 70لاکھ، 29اکتوبر کو 80لاکھ، 20نومبر کو 90لاکھ اور 19دسمبر کو ایک کروڑ کا ہندسہ پار کیا ۔ 
 
 

احتیاطی تدابیر اپنانے میں کوتاہی خطرناک

سکمز میں معمول کی جراحیاں اور ملازمین کی چھٹیاں منسوخ: ڈائریکٹر سکمز 

پرویز احمد 
 
سرینگر //شیر کشمیر انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز صورہ میں کورونا مریضوں کی بڑتی ہوئی تعداد کو دیکھتے ہوئے معمول کی جراحیاں منسوخ کر کے ڈاکٹروں اورملازمین کی تمام چھٹیوں کو منسوخ کردیا گیا ہے۔ڈائریکٹرسکمز ڈاکٹر اے جی آہنگر کی طرف سے جاری ایک حکم نامے میں کہا گیا ہے” کورونا وائرس متاثرین کی تعداد میں غیر معمولی اضافہ کو دیکھتے ہوئے سکمز اور میڈیکل کالج بمنہ میں ملازمین کی منظور شدہ چھٹیاں منسوخ کی جاتی ہیں“۔ اس میں مزید کہا گیا ہے” ملازمین بشمول طبی و نیم طبی عملہ کو ہدایت دی جاتی ہے کہ وہ فوری طور پر اپنی ڈیوٹیوں پر حاضر ہوکر لازمی خدمات کو سر انجام دیں“۔ڈائریکٹر سکمزنے اس ضمن میںچھانہ پورہ میں ایک نجی کلنک کی افتتاحی تقریب کے بعد بات کرتے ہوئے بتایا ”احتیاطی تدابیر کو اپنانے میں کوتاہی سنگین صورتحال پیدا کرسکتی ہے“۔ انہوں نے کہا” اسپتالوں میں موجود بستر کم پڑنے لگے ہیں“۔ انہوں نے کہا کہ کورونا متاثرین کو عالج و معالجہ فراہم کرنے کیلئے سکمز انتظامیہ نے معمول کی جراحیوں کو منسوخ کرنے کا فیصلہ لیا ہے تاہم ایمرجنسی خدمات پر کوئی اثر نہیں پڑے گا۔انہوں نے کہا ” یہ فیصلہ کورونا مریضوں کو وینٹی لیٹراور آکسیجن کی سپلائی کو یقینی بنانے کیلئے لیا گیا “۔ انہوں نے کہا ” ہمیں سمجھنا ہوگا کہ ماسک لگانے، سماجی دوری اور دیگر ایس او پیز پر عمل کرنے سے ہی ہم کورونا وائرس کو ہرا سکتے ہیں“۔ڈاکٹر آہنگر نے کہا کہ کورونا وائرس سے نپٹنے کا بہترین ذرےعے ویکسین ہے اور یہ ہمارے آس پاس موجود ہیں۔ڈائریکٹر سکمز نے بتایا کہ ویکسین مختلف زمرے کے لوگوں کے علاوہ بیماریوں میں مبتلا لوگوں کو مفت فراہم کیا جارہا ہے اور ہر ایک کو کورونا مخالف ٹیکہ لگانا چاہئے۔ 
 

۔2کوچنگ مراکز 5 روز کےلئے بند

نیوز ڈیسک
 
سرینگر // ضلع انتظامیہ نے سرینگر میں9طلاب کے ٹیسٹ مثبت آنے کے بعد 2کوچنک سینٹروں کو 5روز کےلئے بند کردیا ہے۔ اسکے علاوہ 2 کوچنگ مراکز کو نوٹس جاری کی گئیں جبکہ 4کو سخت ہدایت دی گئی کہ وہ کورونا ایس او پیز پر سختی کیساتھ عملدر آمد کریں۔ضلعی انتظامیہ کا کہنا ہے کہ چیئر مین ڈزاسٹر منیجمنٹ کی ہدایت پر محکمہ مال اور پولیس ٹیموں نے مشترکہ طور پر الین کوچنگ انسٹی چیوٹ صدر بل حضرتبل اور ہوپ کلاسز پرے پورہ کو اس وقت بند کردیا جب یہاں سے بالترتیب 3اور 6معاملات مثبت درج کئے گئے۔ دونوں مراکز کو 5روز کےلئے بند کیا گیا۔ اسکے علاوہ کیریر انسٹی چیوٹ حضرتبل، ٹکشیلا انستی ثیوٹ اینڈ ٹارگٹ پی ایم ٹی کو قواعد و ضوابط کی خلاف ورزی کرنے پر نوٹسز جاری کی گئیں۔ ٹیم نے آکاش حضرتبل،کائی پرے پورہ مشن پرے پورہ، اور نیچیور کلاسز پرے پورہ کا بھی معائنہ کیا۔ ان مراکز کی انتظامیہ کو ہدایت دی گئی کہ وہ قواعد و ضوابط پر سختی کیساتھ عمل پیرا ہوں
 

 مزید4بستیاں’ بندش والے زون‘ قرار

بلال فرقانی
 
سرینگر// گرمائی دارالحکومت سرینگر کی ضلع انتظامیہ نے ہفتے کو شہر کے2 مزید علاقوں کو’مختصر بندشوں والے علاقے ‘مائیکرو کنٹینمنٹ زون قرار دے دیا۔ ڈپٹی کمشنر اعجاز اسد نے سماجی رابطہ گاہ ٹویٹر پر اسکے بارے میں جانکاری دیتے ہوئے کہا کہ ہمدانیہ کالونی راولپورہ اور چنکرال محلہ حبہ کدل کومائیکرو کنٹینمنٹ زون قرار دیا گیا ہے۔ مائیکرو کنٹینمنٹ زون کے زمرے میں شامل کئے گئے چنکرال محلہ حبہ کدل میں6 جبکہ ہمدانیہ کالونی راولپورہ میں کورونا کے 5 فعال معاملات ہیں۔اس سے قبل10کیس سامنے آنے کے بعد بڈشاہ کالونی صنعت نگر کو مائیکرو کنٹیمنٹ زون قرار دیا گیا تھا۔ان علاقوں کی ناکہ بندی کر کے یہاں ہر طرح کے داخلے پر پابندی عائد کردی گئی ہے۔ادھر سوگام لولاب کے دو دیہات کو بھی اسی زمرے کے تحت لا کر بندشیں عائد کی گئی ہیں۔وانی محلہ اور شاہ محلہ سوگام لولاب میں بالترتیب 6اور 3معاملات سامنے آئے ہیں جس کے بعد دونوں بستیوں کے داخلی راستوں کو آئندہ 6روز تک بند کئے گئے ہیں۔متاثرین کیساتھ رابطوں میں آنے والوں کی ٹیسٹنگ کا عمل شروع کردیا گیا ہے۔اس سے قبل کرالہ پورہ کی ایک بستی کو بندش والے زون میں تبدیل کیا گیا تھا۔
 

تازہ ترین