تازہ ترین

رسول پاک کی شنان میں گستاخانہ ویڈیو کا معاملہ

سبھی طبقوں کے معززین نے نرسنگھانندکےخلاف کارروائی کا مطالبہ کیا

تاریخ    11 اپریل 2021 (00 : 01 AM)   


حسین محتشم
پونچھ// ناموس رسالت کی شان میں گستاخانہ بیان کے خلاف پونچھ میں سنیچر کے روز ایک بین المذاہب پریس کانفرنس کے دوران ہندو ، مسلم ، سکھ ،عیسائی معززین نے آپسی بھائی چارے کا مظاہرہ کرتے ہوئے گستاخ رسولکے خلاف سخت سے سخت کاروائی عمل میں لانے کا مطالبہ کیا۔سناتن دھرم سبھا پونچھ کے صدر ستیش ساسن نے نرسنگھانند فرقہ پرست ، متعصب اور تنگ نظر نامی گستاخ کی جانب سے پیغمبر اسلام حضرت محمدکی شان عالی میں گستاخی کی شدید مذمت اور اس کیخلاف سخت ردعمل کا اظہارکرتے ہوئے کہا کہ اس طرح کی حرکت کو دنیا بھر کے انسانوں کے جذبات کو دانستہ طور پر مجروح کرنے کی مذموم کوشش ہے جس کوکبھی بھی برداشت نہیں کیاجاسکتا ۔انہوں نے کہا کہ کوئی بھی مذہب اس طرح کے بیانات کی اجازت نہیں دیتا ۔انہوں نے کہا کہ یہ بیحد افسوسناک المیہ ہے کہ ہندوستان میں منصوبہ بند طریقے سے وقتاً فوقتاً اس طرح کی حرکتیں کر کے کچھ لوگ امن پسند ملک کا ماحول خراب کرنےکی کوشش کرتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ اس شخص نے بھی مسلمانوں کے مذہبی جذبات کو بھڑکا کر اپنے ناپاک عزائم کی تکمیل کی کوشش کی ہے۔انہوں نے ملک کے حکمرانوںکو خبردار کرتے ہوئے ان سے مطالبہ کیا اس شخص کو گرفتار کر کے اس کے خلاف سخت ترین قانونی کارروائی کرکے ا±سے عبرت ناک سزا دیں تاکہ آئندہ کوئی اس طرح کی ناپاک حرکت کرنے کی جرات نہ کرے ۔ گردوارہ سنگھ سبھا کے جنرل سکریٹری سردار سرجن سنگھ نے توہین رسالت اور فرقہ پرستی پر مشتمل رونما ہوئے شرانگیز بیان کی شدید الفاظ میں مذمت کی اور اسے کو کڑی سے کڑی سزا دینے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ پیغمبراسلام کی توہین کر کے شر پسند شخص ملک کے آپسی بھائی چارے کو زک پہنچانے کی کو کوشش کر رہے ہیں۔بارایسوسی ایشن کے صدر ایدوکیٹ محمد زمان، اور سینئرلیڈر کانگرس آئی تاج میر،پی ڈی پی کے سینئر لیڈر بشیر خاکی نے بھی نرسنگھا نند کی طرف سے پیغمبر اسلام کیخلاف توہین آمیز تبصرے پر زبردست غم وغصے کا اظہار کرتے ہوئے مذکورہ فرقہ پرست شخص کیخلاف سخت سے سخت کارروائی کا مطالبہ کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایسے فرقہ پرست عناصر ہندوستان میں روایتی ہم آہنگی اور بھائی چارہے کو ختم کرنے پر ت±لے ہوئے ہیں اور عوام کو ان کے مذموم منصوبوں کو سمجھ کر آپسی بھائی چارہے کو بنائے رکھنا چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ مذکورہ شخص کے خلاف نہ صرف سخت سے سخت کارروائی ہونی چاہئے بلکہ اس کے اقدام کے پیچھے کے مقاصد اور اصل محرکات کا بھی پتہ لگایا جانا چاہئے تاکہ ایسے کسی بھی منصوبہ کو پہلے ہی ناکام بنایا جاسکے جس کا مقصد مذہبی منافرت پھیلانا اور فرقہ وارایت کو ہوا دینا ہو۔ انہوں نے پونچھ کے لوگوں سے اپیل کی کہ وہ امن اور بھائی چارے کو برقرار رکھیں اور قانون کو اپنا کام کرنے دیں۔ انہوں نے کہا کہ کسی بھی فرد یا جماعت کو مذہبی منافرت پھیلانے یا لوگوں کے مذہبی جذبات کو مجروح کرنے کی اجازت نہیںدی جانی چاہیے۔

تازہ ترین