تازہ ترین

مزید خبرں

تاریخ    3 مارچ 2021 (00 : 01 AM)   


دیگوار تا نور کوٹ سڑک کی تعمیری کام سست روی کا شکار، عوام برہم

حسین محتشم
پونچھ//ضلع پونچھ کے سرحدی گائوں نور کوٹ کی عوام دور جدید میں بھی کئی طرح کی پریشانیوں سے دوچار ہیں ۔عرصہ دراز تک مطالبہ کرنے کے بعد دیگوار تا نور کوٹ سڑک کی تعمیر کا کام شروع کیا گیا تھا جو نہایت سست روی کا شکار ہے جس کی وجہ سے مقامی لوگوں کا رابطہ سڑک کا خواب ادھورا ہے۔ اس سلسلہ کو لیکر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے مقامی باشندوں نے بتایا کہ سڑک کی تعمیر کا کام کئی سال قبل شروع کیا گیا تاہم اسے پایہ تکمیل تک نہیں پہنچایا جا رہا ہے جس سے عوام کو عبور و مرور میں شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔انہوں نے متعلقہ محکمہ کے افسران سے سڑک کی تعمیرات جلد سے جلد مکمل کرنے کی اپیل کی تاکہ یہاں کی عوام کو درپیش مسائیل سے نجات مل سکے ۔
 

ہائر سیکنڈری سکول اودھن کا ٹیچر ہوسٹل

سکول گرائونڈ میں تعمیر کرنے پر لوگ معترض

 محمد بشارت 
کوٹرنکہ//زون خواص کے ہائرسیکنڈری سکول میں محکمہ تعلیم کی طرف سے اساتذہ کیلئے رمسا سکیم کے تحت 96 لاکھ روپے کی لاگت سے ہوسٹل کی عمارت کا کام شروع ہوا جس پر ہائر سیکنڈری سکول کے طلباء اور مقامی لوگوں نے اعتراض کرتے ہوئے کہا کہ محکمہ تعمیرات عامہ  ہائیر سیکنڈری سکول کے گرائونڈ میں ہوسٹل تعمیر کر رہا ہے جو ناقابل قبول ہے۔ طلباء اور مقامی لوگوں نے کہا کہ اساتذہ کی رہائش کیلئے عمارت  تعمیر کرنے کا فیصلہ بہت اچھا ہے تاہم ہوسٹل کی عمارت کا سکول کے سامنے تعمیر کرنا بچوں کیلئے پریشانوں کا باعث بن سکتا ہے ۔انہوں نے کہا کہ ہوسٹل کی تعمیر کیلئے ہم متبادل جگہ دینے کے لیے تیار ہیں ۔انہوں نے کہا کہ محکمہ تعمیرات عامہ ہٹ دھرمی سے کام لے رہا ہے ۔اس سلسلے میں جب ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر کوٹرنکہ سریندر موہن شرما سے رابطہ کیاگیاتو انہوں نے کہا کہ ہوسٹل کی تعمیر کیلئے مناسب جگہ کا تعین کیا گیا ہے  اور ہوسٹل سکول کے گرائونڈ سے سو میٹر کی دوری پر بنایا جائے گا جس پر مقامی لوگوں نے اطمینان کا اظہار کیا۔
 

جموں شہر میں بس کرایہ میں من مانا اضافہ 

جاوید اقبال
جموں//جموں وکشمیر کے بقیہ حصوں کی طرح جموں شہر میں بھی من مرضی کا بس کرایہ وصول کیاجارہاہیاور عام لوگوں کو دو دو ہاتھوں سے لوٹاجارہاہے۔کئی مسافروں نے بتایاکہ ایک دن اگر کرایہ دس روپے لیاجاتاہے تودوسرے روز چھ روپے ہی ہوجاتاہے اور پھر تیسرے روز پھر سے دس روپے کرایہ وصول کرلیاجاتاہے۔انہوں نے کہاکہ اس طرح کی من مانی سے یہ ظاہر ہوتاہے کہ حکام اور انتظامیہ نے ٹرانسپورٹروں کو کھلی چھوٹ دے رکھی ہے اور من مرضی سے فیصلے کررہے ہیں۔ان کاکہناہے کہ کرایہ کے سلسلے میں حکام کا کوئی کنٹرول نہیں اور کنڈیکٹروں کو جو مرضی آتی ہے وہ وہی کرتے ہیں کیونکہ ان کو پوچھنے والاہی کوئی نہیں اور نہ ہی کہیں کوئی ٹریفک اہلکار نظر آتاہے۔انہوں نے کہاکہ حکومت نے پیٹرول کی قیمتوں میں کرایہ میں بھی اضافہ کا فیصلہ لے لیالیکن اب طے شدہ کرایہ کے مطابق مسافروں سے پیسے وصول کرنے کے بجائے ان سے اضافی کرایہ لیاجارہاہے جو سراسرناانصافی کی بات ہے۔مسافروں نے حکام سے اپیل کی کہ کرایہ کے نظام میں معقولیت لائی جائے اور ٹرانسپورٹروں کو اس بات کا پابند بنایاجائے کہ وہ کرایہ ریٹ لسٹ کے مطابق ہی وصول کریں۔
 

مغل شاہراہ کو کھولنے کا مطالبہ 

جاوید اقبال
مینڈھر//خطہ پیر پنچال کے عوام نے حکومت سے مطالبہ کیاہے کہ مغل شاہراہ کو فوری طور پر کھول دیاجائے تاکہ طلباامتحان دینے جاسکیں اور مریضوں سمیت دیگر لوگوں کو بھی آنے جانے میں مشکلات کاسامنانہ کرناپڑے۔راجوری اور پونچھ کے کئی لوگوں نے بتایاکہ انہیں کشمیر جانے کیلئے پہلے جموں کاسفر کرناپڑتاہے اور اس دوران کئی کئی دن لگ جاتے ہیں جبکہ کچھ کو مجبوراًہوائی جہاز میں مہنگی ٹکٹیں خرید کر سفر کرناپڑجاتاہے کیونکہ اس کے بغیر کوئی متبادل نہیں ہوتا۔انہوں نے کہاکہ اب آئندہ کچھ عرصہ میں کشمیر میں زیر تعلیم بیشتر طلبا کے امتحانات ہونے جارہے ہیں جن کو بھی جموں سے ہوکر جاناپڑے گاجو بہت طویل سفر ہوگااس لئے فوری طور پر مغل شاہراہ کو کھول دیاجائے تاکہ لوگ آسانی سے سفر کرسکیں۔ان کاکہناتھاکہ اس سال شاہراہ پر اتنی زیادہ برف باری بھی نہیں ہوئی کہ اپریل یا مئی تک کیلئے برف ہٹانے کاانتظار کیاجائے اور اگر مشینری اور افرادی وقت کو ابھی سے کام پر لگاکر برف ہٹائی جائے تو ایک دو ہفتوں میں شاہراہ کو کھولاجاسکتاہے لیکن اس کیلئے حکومت کو سنجیدگی کا مظاہرہ کرناہوگانہیں توخطہ پیر پنچال کے عوام دربدرہوتے رہیں گے۔
 

 بھاگواہ آتشزدگی میںرہائشی مکان خاکستر، املاک بھی تباہ 

اشتیاق ملک
ڈوڈہ //ڈوڈہ کی تحصیل بھاگواہ واقع گاؤں دھاروش میں آتشزدگی کی پراسرار واردات میں ایک رہائشی مکان خاکستر ہوا ہے جس دوران بڑے پیمانے پر املاک کو نقصان پہنچا ہے ۔پولیس ذرائع کے مطابق پیر کی شام عبدالمجید کوکا ولد عبد الجبار کے تین منزلہ رہائشی مکان سے آگ نمودار ہوئی اور چند ہی لمحوں میں پورے مکان کو اپنی لپیٹ میں لیا۔اس واقعہ کے فوراً بعد مقامی لوگ و پولیس ٹیم موقع پر پہونچیں اور بچاؤ کارروائی شروع کی. اس دوران اگر چہ کوئی جانی نقصان نہیں ہوا تاہم املاک کو بڑے پیمانے پر نقصان پہنچا ہے ۔بتایا جاتا ہے کہ بجلی کی شارٹ سرکٹ کے باعث آگ لگی ہے ۔
 

 پنچائیت گھر کی عمارت خالی ، بھرت پور سے شاہ پور جانے والی سڑک کا مسئلہ حل

 سمت بھارگو
 راجوری// سرکاری املاک سے غیر قانونی قبضہ ختم کرنے اور ترقیاتی رکاوٹوں کو دور کرنے کی کوششوں کے تحت ضلعی انتظامیہ راجوری نے ایک اور سرکاری عمارت غیر قانونی قبضہ کاروں سے خالی کروائی۔خالی کروایا گیا پنچایت گھر تحصیل تھنہ منڈی کے گاؤں درہ۔بریون کا ہے جس پر تیئس سال سے غیر قانونی قبضہ تھا۔ ڈپٹی کمشنر راجوری نے معاملے سے آگاہ ہونے کے بعد فوری طور پر مجسٹریٹ اور پولیس سمیت افسران کی ٹیم کو موقع پر روانہ کیا اور پنچایت گھر کو خالی کرا دیا۔ اسی طرح ایک اور معاملے میں ضلعی انتظامیہ راجوری نے بھرت پور سے شاہ پور جانے والی سڑک کا مسئلہ حل کیا۔ یہاں یہ امر قابل ذکر ہے کہ مقامی لوگوں کے ایک گروپ نے کچھ دن قبل ڈپٹی کمشنر سے ملاقات کی اور انہیں سڑک کے مسئلے سے آگاہ کیاتھا۔ ڈی سی نے اس معاملے کا جائزہ لینے کے بعد متعلقہ حکام سے کہا کہ اس مسئلے کو جلد سے جلد حل کیا جائے۔ ڈپٹی کمشنر کی ہدایت کے بعد ایس ڈی ایم تھنہ منڈی ذاکر حسین کی ہدایت کے بعد ایس ڈی پی او تھنہ منڈی سجاد خان ، تحصیلدار تھنہ منڈی محمود خان ، بی ڈی او مظہر شاہ اور ایس ایچ او فرید احمد نے سڑک کا معاملہ حل کیا۔
  

سانبہ کے کنڈی خطہ میں ترقی کا فقدان:غلام حسن میر

 سانبہ//اپنی پارٹی سنیئر نائب صدر غلام حسن میر نے حکومت سے گذارش کی ہے کہ ضلع سانبہ کے کنڈی خطہ میں بنیادی سہولیات فراہم کی جائیں۔ انہوں نے کہاکہ سابقہ سابقہ حکومت جموں کے میدانی علاقہ جات کے کنڈی خطہ کی ترقی کرنے میں ناکام رہی ہے۔ سانبہ کے کنڈی بیلٹ میں مناسب ڈھانچہ، سڑک رابطہ، پینے کے صاف پانی اور بجلی سپلائی کا فقدان ہے۔ میرسمب علاقہ کے چنوری مقام پر عوامی میٹنگ سے خطاب کر رہے تھے۔ اس دوران علاقہ کے لوگوں جس میں زیادہ تعداد خانہ بدوش طبقہ کی تھی، نے غلام حسن کو غیر علانیہ بجلی ٹوتی، ناقص پانی سپلائی نظام اور ڈھانچہ کے بارے میں بتایاجس سے روزمرہ زندگی متاثر ہورہی ہے۔ میر نے اُنہیں یقین دلایاکہ وہ اُن کے مطالبات کو متعلقہ حکام کی نوٹس میں لاکر جلد ازالے کو یقینی بنائیں گے۔ اِس میٹنگ کا اہتمام ماسٹر لال محمد نے کیاتھا۔ اس سے قبل بولتے ہوئے غلام حسن میر نے کہاکہ انتظامیہ لوگوں کے مسائل نہیں سنتی جس کی ذمہ داری ہے کہ بنیادی سہولیات جیسے پانی، سڑک، بجلی اور صفائی ستھرائی کو یقینی بنایاجائے۔ انہوں نے کہاکہ لوگوں کے روز مرہ مسائل کو حل کرنے میں ناکام رہنے والوں کو جوابدہ بنائے۔ منتخبہ حکومت ایسے حالات میں وقت کی ضرورت ہے جہاں انتظامیہ لوگوں کے مسائل سننا بند کر دے۔سابقہ وزیر اور پارٹی صوبائی صدر منجیت سنگھ نے بھی سانبہ بالخصوص سمب علاقہ کے مسائل کو اُجاگر کیا۔ 
 

 پونچھ میں جی ایم رجسٹریشن کے سلسلے میں تربیتی پروگرام کا اہتمام 

حسین محتشم
پونچھ// محکمہ ضلعی صنعتی مرکز پونچھ میں جی ایم پر رجسٹریشن کے حوالے سے دو روزہ آگاہی / تربیتی پروگرام کا انعقاد کیا گیا۔ایم ایس ایم ای یونٹس شعبہ صنعت و تجارت کے ذریعہ 1 مارچ سے 2 مارچ 2021 تک منعقدہ اس پروگرام میں اسٹیک ہولڈرز خصوصی طور پرضلع ڈسٹرکٹ انڈسٹریل اسٹیٹ پونچھ کے تاجروں نے بڑے جوش و خروش کے ساتھ شرکت کی۔تربیتی پروگرام کے دوران وکیشنل منیجر ڈی آئی سی پونچھ نے شرکا کوجموں و کشمیر کی صنعتی ترقی کے لئے نئی مرکزی شعبہ اسکیم کے حوالے سے مفصل جانکاری فراہم کی۔ انہوں نے حکومت ہند کی خرید و فروخت کے عمل میں شفافیت ، مسابقت اور احتساب لانے کے لئے ایک عظیم اقدام کے طور پر جی ایم رجسٹریشن کی مطابقت اور اہمیت پر بھی روشنی ڈالی۔ انہوں نے شرکا کو یہ ہدایت کی کہ وہ فوری طور پر جی ایم پر اندراج کریں تاکہ مناسب ، معقول اور مسابقتی نرخوں پر مصنوعات کی خرید و فروخت کو لیکر وہ ڈیجیٹل پلیٹ فارم پر زیادہ سے زیادہ فوائد حاصل کرسکیں۔ 
 

سرنکوٹ پنچایت ماہانہ گرام سبھا منعقد

 بختیار حسین
سرنکوٹ// خلقہ پنچایت سرنکوٹ لور میں ماہانہ گرام سبھا منعقد کی گئی جس کی صدارت متعلقہ سرپنچ طاہر منظور مرزا کر رہے تھے۔ جس میں انہوںنے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ انتظامیہ ناقابل رسائی بن چکی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ پنچایتی راج ایکٹ کی کھلم کھلاخلاف ورزی کی جا رہی ہے جبکہ حکومت کی جانب سے یہ ہدایت جاری کی گئی تھی کہ تمام آفیسران کو ہر ماہ پنچایتوں میں جاکر لوگوں کے مسائل سننے ہونگے لیکن انتظامیہ و دیگر متعلقہ افسران کام چوری کر رہے ہیں اور پنچایتوں میں جانے سے گریز کر رہے ہیں۔ ان کاکہنا تھا کہ متعلقہ سب ضلع سرنکوٹ کے افسران کو بلایا جاتا ہے لیکن وہ پھر بھی لوگوں کے مسائل سننے کے لئے پنچایت گھر نہیں پہنچتے جو عوام کے ساتھ سراسر ناانصافی ہے
 

 پمروٹ تا سانگلہ سڑک کی خالت نہایت ہی ابتر

 بختیار حسین
سرنکوٹ// پمروٹ پل تا سانگلہ سڑک کی حالت نہایت ہی ابتر ہو چکی ہے جس پر گاڑیوں کا چلنا بھی محال ہے۔مقامی لوگوں نے بتایا کہ گاڑیوں کے ذریعے سرنکوٹ سے سانگلہ کا سفر محض بیس منٹ کا ہے لیکن سڑک کی خستہ حالت ہونے کی وجہ سے ایک گھنٹہ مسافت طے کرنے کو لگ جاتا ہے۔مقامی لوگوں نے بتایا کہ سڑک کی مرمت کو لیکر متعلقہ حکام غیر سنجیدہ ہیں جس سے لوگوں کو شدید مشکلات کا سامنا ہے۔مقامی لوگوں نے ضلع ترقیاتی کمشنر پونچھ راہل یادیو سے اس معاملے میں مداخلت کی اپیل کی ہے۔
 

ککورہ منجاکوٹ بنیادی سہولیات سے محروم

پرویز خان
منجاکوٹ//چار پنچائتوں پر مشتمل تحصیل منجاکو ٹ کے ککورہ علاقہ مواصلاتی سہولیات اور رابطہ سڑک سے محروم ہے جبکہ بجلی کا حال بھی بے حال ہے اور پانی بھی نہیں ہے۔مقامی لوگوں کا یہ بھی کہنا تھا کہ ایک طرف سرکار لوگوں کو بنیادی سہولیات فراہم کرنے کی بات کرتی ہے مگر کچھ ایسے علاقے ہیں جہاں موبائل نیٹ ورک ہی موجود نہیں اور زیادہ تر علاقے سہولیات سے محروم ہیں۔ لوگوں کا کہنا تھا کہ مزید ٹاور  لگائے جائیں تاکہ لوگوں کو نیٹورک سہولت فراہم ہو سکے اور پینے کا صاف پانی ،سڑک رابطہ اور دیگر بنیادی سہولیات فراہم کی جائیں۔
 

ساوجیاں میں میڈیکل کیمپ کا اہتمام

عشرت حسین بٹ
منڈی//منگل کو محکمہ صحت کی جانب سے تحصیل منڈی کے سرحدی علاقہ ساوجیاں گلی میدان میں منگل ایک میڈیکل کیمپ کا اہتمام کیا گیا تھا جس دوران ڈاکٹروں نے دو سو سے زاید مریضوں کا طبی معاینہ کر کے ان میں مفت ادویا ت تقسیم کیں۔ اس موقہ پر میڈیکل افسر ساوجیاں ڈاکٹر علی محمد کی سربراہی میں ماہر ڈاکٹروں کی ایک ٹیم نے کل 410لوگوں کا طبی معاینہ کیا جن میں 180 مرد 190خواتین جبکہ 40 کے قریب بچوں کا طبی معاینہ کر کے انہیں مفت ادویات دی گئیں۔ ساوجیاں اور گلی میدان کے مقامی لوگوں نے بلاک میڈیکل افسر منڈی اور وہاں پر موجود ڈاکٹروں کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ ان علاقوں کی عوام محکمہ کے آفسران سمیت ڈاکٹروں کے شکر گزار ہیں جنہوں نے تحصیل منڈی کے سرحدی علاقہ میں میڈیکل کیمپ منعقد کر کے یہاں کے عوام کیلئے طبی سہولت دی ۔
 

 بٹارا گاؤں میں مفت طبی کیمپ 

 اشتیاق ملک
ڈوڈہ //فوج کی جانب سے ڈوڈہ کے دور دراز گاؤں بٹارا بھلیسہ میں مفت طبی کیمپ کا انعقاد کیا گیا جس دوران مقامی لوگوں میں ماسک و سینیٹائزر بھی تقسیم کئے ۔اس موقع پر چار نزدیکی گاؤں سے آئے دو سو مریضوں کی طبی جانچ پڑتال کرکے ادویات بھی تقسیم کیں۔ فوج نے ساہیک ہیومنٹی چرٹیبل ٹرسٹ کے اشتراک سے مقامی لوگوں میں ماسک و سینیٹائزر بھی تقسیم کئے۔ 
 

اپر سانگلہ پنچایت بنیادی سہولیات سے محروم 

جاوید اقبال 
 
مینڈھر//بلاک سرنکوٹ کی پنچایت اپر سانگلہ بنیادی سہولیات سے محروم ہے۔ مقامی سرپنچ خادم حسین کٹاریہ نے بتایاکہ پانی کاشدید بحران پایاجارہاہے اور لوگوں کو کئی کلو میٹر دور سے پانی لاناپڑتاہے جبکہ سکولوں کا حال بیان سے باہر ہے۔انہوں نے کہاکہ پنچایت میں پرائمری اور مڈل سکول قائم ہیں لیکن حکام کی طرف سے اس پہاڑی علاقے میں کوئی توجہ نہیں دی جارہی۔ان کاکہناتھاکہ لوگ بجلی کاکرایہ برابر ادا کررہے ہیں لیکن سپلائی کا کوئی وقت معین نہیں۔پنچایت میں سڑک کی سہولت بھی نہیں ہے۔سرپنچ کے مطابق حوالدار موڑ سے گلی جبڑ سانگلہ کیلئے 2017میں پانچ کلو میٹر سڑک کاکام شروع کیاگیالیکن زمین کی کھدائی کرکے اسے ایسے ہی چھوڑ دیاگیاہے جس کی وجہ سے لوگ پیدل سفر کرنے پر مجبور ہیں اور اس کچی سڑک پر گاڑیاں نہیں چل پارہیں۔
 
 
 

تازہ ترین