فوری انتخابات کی خواہاں سیاسی جماعتیں حدبندی کمیشن کا تعاون کریں

حد بندی مکمل ہوگی توانتخابات کا فیصلہ الیکشن کمیشن کریگا:سنہا

تاریخ    23 فروری 2021 (00 : 01 AM)   


سیدامجدشاہ
جموں//جموں کشمیرکے لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے کہا ہے کہ وہ سیاستدان ،جوجموں کشمیرمیں فوری طور انتخابات منعقد کرانے کے خواہاں ہیں، کو حد بندی کمیشن کے ساتھ تعاون کرناچاہیے تاکہ یہ عمل جلدسے جلد مکمل کیا جائے۔اخباری نمائندوں کی طرف سے یہ پوچھے جانے پر کہ مختلف  جماعتوں کے سیاستدان جموں کشمیراسمبلی کے فوری انتخابات کرانے کا مطالبہ کررہے ہیں،کے جواب میں منوج سنہا نے کہا ’’ جوسیاستدان جموں کشمیرمیں فوری طور اسمبلی انتخابات منعقد کرانا چاہتے ہیں ،ان سے درخواست ہے کہ وہ بہانے بنانے کے بجائے حدبندی کمیشن کے ساتھ تعاون کریں‘‘۔لیفٹیننٹ گورنر ہارٹی کلچر ایکسپو2021 کا افتتاح کرنے کے بعد ذرائع ابلاغ نمائندوں سے بات کررہے تھے۔یہ پوچھے جانے پر کہ نیشنل کانفرنس کے اراکین پارلیمان نے حد بندی کمیشن کا بائیکاٹ کیا ہے ،لیفٹیننٹ گورنر نے کہا،’’انہیں اس پردوبارہ سوچنا چاہیے اگر وہ فوری طور انتخابات چاہتے ہیں ،کمیشن کا کام ختم ہونا چاہیے جس کیلئے انہیں تعاون دیناہوگا‘‘۔انہوں نے کہا،’’بھارت میں آئینی ادارے ہیں، اس لئے انتخابات کے بارے میں الیکشن کمیشن فیصلہ لے گا،ایک بار حدبندی کمیشن کاکام مکمل ہوگا،الیکشن کمیشن یقینی طور انتخابات منعقد کرائے گا‘‘۔اس سے قبل انہوں نے کہا کہ وزیراعظم نریندر مودی نے ملک کویقین دلایا ہے ۔آپ کو معلوم ہونا چاہیے حدبندی کمیشن نے اپناکام شروع کیا ہے ۔نیشنل کانفرنس کے صدر ڈاکٹر فاروق عبداللہ کی اس مانگ کہ پاکستان کے ساتھ مسئلہ حل کرنے کیلئے بات چیت شروع کی جائے،ردعمل ظاہر کرتے ہوئے لیفٹینٹ گورنر منوج سنہا کہ مجھے کسی کے بیان پر ردعمل ظاہر نہیں کرنا چاہیے کیوں کہ وزارت خارجہ ایسے معاملات دیکھتی ہیں اوربھارت اپنے طور مسائل حل کرسکتا ہے۔برزلہ میں دوپولیس اہلکاروں کی ہلاکت کی مذمت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ سرینگرمیں ایک ڈابامالک پرحملہ کرنے والے پکڑے گئے ہیں اورحفاظتی فورسزنے جنگجوئوں کے نیٹ ورک کو بھی بے نقاب کیا ہے.۔انہوں نے کہا کہ جنگجویت کو پھل پھولنے کا موقعہ نہیں دیا جائے گا۔
 
 

کمیشن کی مدت میں توسیع کا امکان

امجد شاہ
 
جموں // جموں و کشمیر کے 90 اسمبلی حلقوں کی تازہ حد بندی کیلئے 6 مارچ 2020 کو جموں و کشمیر کے لئے حد بندی کمیشن تشکیل دیا گیا تھا۔ اس کی سربراہی جسٹس (ریٹائرڈ) ، رنجنا پرکاش دیسائی بطور چیئر پرسن کررہے ہیں۔کمیشن مارچ میں ایک سال مکمل کرے گا۔ تاہم ، ابھی  اسے جموں و کشمیر کا دورہ کرنا باقی ہے حالانکہ کمیشن نے اپنی پہلی میٹنگ 18 فروری 2021 کو دہلی میں کی تھی جس کا نیشنل کانفرنس ممبران پارلیمنٹ ڈاکٹر فاروق عبد اللہ ، حسنین مسعودی اور محمد اکبر لون نے بائیکاٹ کیا ۔عہدیداروں نے بتایا کہ: "کمیشن کی مدت میں کئی ماہ کی توسیع کا امکان ہے۔ مدت کار میں توسیع کے بعد ، کمیشن کے ممبر آئندہ ماہ جموں و کشمیر کا دورہ کریں گے۔عہدیداروں کے مطابق ، کمیشن تسلیم شدہ سیاسی جماعتوں سے مرکزی خطے کے اسمبلی حلقوں کی حد بندی اور ریزرویشن سے متعلق تجاویز بھی طلب کرے گا۔

تازہ ترین