نظمیں

تاریخ    21 فروری 2021 (00 : 01 AM)   


آزاد کلام 

یونس کی مچھلی کی قسّم 
اک امتحاں تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایوب کے کیڑوں کی قسم 
اک امتحاں تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ امتحاں تھا جس کو سب نے دیکھ لیا 
احمد ﷺ کے ایذا کی قسم 
اک امتحاں تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جو صبر سے بھی کام لیا ۔۔جیت گیا 
چپکے چپکے اشک پیا ۔۔جیت گیا 
مسجد میں ضربت کی قسم 
اک امتحاں تھا ۔۔۔۔۔۔۔
مولاعلی کے سجدے کی قسم۔۔۔۔ 
اک امتحاں تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یوسف کی جدائی تھی ایک کوہِ گِراں
یعقوب کی آنکھوں کی قسّم 
اک امتحاں تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
آیا تھا اک فرمان پسر ذبِِحَ کرو ۔
براہیم کی عظمت کی قسّم 
اک امتحاں تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اکبر جواں کی لاش۔۔اٹھاتے تھے حسین 
کربل کی گرمی کی قسّم 
اک امتحاں تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اک امتحاں سے آج بھی آدم کا گزر ۔۔۔۔
حوا کو بھی دنیا میں ایک سخت سفر 
جنت کے اس شجر اور میوے کی قسّم 
وہ اک امتحاں تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی ہاں امتحاں تھا ۔۔۔۔
ہاں وہ تو امتحاں تھا 
مگر !!!!!!!!!!
خیال رکھو ۔۔۔۔
یہ بھی امتحاں ہے ۔۔۔۔۔۔۔
یہ بھی امتحاں ہے ۔۔۔۔۔۔
 
 
فلک ریاض
حسینی کالونی،چھتر گام کشمیر ،موبائل نمبر؛6005513109
 

دیوار

 سناتن دیش میں
اپنے 
پرکھوں کا
زمانہ یاد کرکے
میں اکثر سوچتا ہوں
یہ ہمارے درمیاں
دیوار کس نے
کھینچ دی ہے !!
احمد کلیم فیض پوری
گرین پارک بھساول مہاراشٹر
موبائل نمبر؛ 8208111109

 

تازہ ترین