تازہ ترین

مریضوں کو لوٹ کر نجی اسپتالوں کوفائدہ پہنچانے کاحربہ

طبی و جراحی آلات پر8گُنا تک اضافی قیمتیں چسپان کرنے کاانکشاف

تاریخ    7 فروری 2021 (00 : 01 AM)   


نیوز ڈیسک

صوبائی کمشنر نے ادویات اور طبی آلات کی قیمتیں مقرر کرنے والے قومی ادارے کے ساتھ معاملہ اٹھایا

 
 سرینگر //محکمہ ناپ تول نے طبی آلات بنانے والی کمپنیوں کو وادی میں نجی اسپتالوں کو فائدہ پہنچانے کی غرض سے اضافی قیمتیں چھاپنے پر نوٹس جاری کردیا ہے۔ صوبائی کمشنر کشمیر، پی کے پولے نے طبی آلات بنانے والی کمپنیوں کی طرف سے نجی اسپتالوں کو غیر ضروری فائدہ پہنچانے کیلئے اضافی قیمتیں چھاپنے کے معاملہ نیشنل فارمیسوٹیکل پرائزنگ ایجنسی کے ساتھ اٹھایا ہے اور مذکورہ ادارے نے تمام آلات کی قیمتوں کو اعتدال پر رکھنے کیلئے دکانداروں اور اسپتالوں کیلئے ازخود منافع طے کرنے کی یقین دہانی کرائی ہے۔ناپ تول محکمے کے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ چند نجی کمپنیاں پرائیویٹ اسپتالوں کے مالکان کو فائدہ پہنچانے کیلئے طبی آلات پر اسپتالوں کو 100سے 800فیصد فائدہ دیتے ہیں۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ ہڈیوں، آنکھوں، یورولاجی اور دیگر شعبہ جات میں استعمال ہونے والے آلات کی لیبلوں پر اضافی قیمتیں چسپاں کی جاتی ہیں ، مثلاً آنکھوں میں استعمال ہونے والے لینس کی قیمت Oximeterکی اصل کی قیمت 917روپے ہے جبکہ نجی اسپتالوں میں مریضوں کو یہ 4499روپے میں فروخت کیا جاتا ہے۔ ناپ تول محکمہ نے اپنے بیان میں مختلف قوانین کاحوالہ دیتے ہوئے لکھا ہے کہ آلات پر منافع کی شرح طے نہ ہونے کی وجہ سے کمپنیاں اور نجی اسپتال مالکان لوگوں کو دو دو ہاتھوں سے لوٹ رہے ہیں اور اسلئے صوبائی کمشنر کشمیر نے یہ معاملہ نیشنل فارمیسوٹیکل پرائزنگ ایجنسی کے ساتھ اٹھایا ہے اور ان آلات کی قیمتوں پر لگام لگانے کی دیقین دہانی صوبائی کمشنر کشمیر کو کرائی گئی ہے۔ 

تازہ ترین