۔26جنوری تقریبات آج

سرینگر اور جموں کرکٹ سٹیڈیموں کے گردونواح کا کڑا پہرہ

تاریخ    26 جنوری 2021 (00 : 01 AM)   


بلال فرقانی

  سیکورٹی ہائی الرٹ،سونہ وار کی طرف جانے والے راستے مکمل سیل

 
سرینگر//کڑے سیکورٹی بندوبست کے بیچ آج سرینگر اور جموں کے 2سٹیڈیموں میں26جنوری کی تقریبات منعقد ہورہی ہیں۔ سونہ وار کرکٹ اسٹیڈیم سرینگر اور مولانا آزاد سٹیڈیم جموں کے گردو نواح میں خفیہ کیمرے نصب کرنے کے ساتھ ساتھ پولیس اور سیکورٹی فورسز کے خصوصی دستوں کو تعینات کردیا گیا ہے۔ مولانا آزاد اسٹیڈیم جموں میں سب سے بڑی تقریب کا انعقاد ہورہا ہے جہاں لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا پریڈ پر سلامی لینگے اور ترنگا لہرائیں گے جبکہ وادی میں سب سے بڑی تقریب سونہ کرکٹ اسٹیڈیم میں منعقد ہو رہی ہے جہاں لیفٹیننٹ گورنر کے مشیر بصیر احمد خان سلامی لینگے۔واضح رہے عمومی طور پر سرینگر میں 15اگست اور 26جنوری کی تقریبات بخشی سٹیڈیم میں ہوا کرتی تھیں لیکن مذکورہ سٹیڈیم میں کئی برسوں سے تعمیراتی کام ہورہے ہیں اسی لئے سونہ وار کرکٹ سٹیڈیم میں تقریبات کو منعقد کرنے کا سلسلہ شروع کیا گیا ہے۔ سرینگر اسٹیڈیم کے گرد ونواح میں سیکورٹی کے سخت ترین انتظامات کئے گئے ہیں۔ اسٹیڈیم  کو 2روز قبل ہی فورسز کے حوالے کیا گیا ہے۔ اسٹیڈیم  کے گردونواح علاقوں میں بھی فورسز اور پولیس کے علاوہ دیگرسیکورٹی ایجنسیوں کی تعداد میں اضافہ کیا گیا ہے اور پولیس تھانہ رام منشی باغ سے لیکر ٹی آر سی تک کا راستہ خار دار تاروں سے بندکردیاگیا ہے۔ ذرائع کے مطابق جن سیاسی ، صحافتی اور انتظامی شخصیات کے حق میں خصوصی دعوت نامے اجراء کئے گئے ہیں ، انہیں بھی دعوت نامے اور ان کے شناختی کارڈ دیکھنے کے بعد ہی اسٹیڈیم میں داخل ہونے کی اجازت دی جائیگی ۔ اسٹیڈیم کی طرف جانے والے تمام راستوں کو دوپہر سے ہی لوہے کی سلاخوں سے بند کردیا گیا اور جگہ جگہ رکاوٹیں کھڑی کرکے ان راستوں پر موبائیل بنکر رکھے گئے ۔  ۔26جنوری کے موقعہ پر ہائی الرٹ کے بیچ وادی میں جامع تلاشیوں کا سلسلہ جاری رہا ۔ شہر سرینگر میں پولیس اور فورسز چھوٹی بڑی گاڑیوں کو روک کر ان کی باریک بینی سے تلاشی کرتے دیکھے گئے۔ پولیس نے2روز قبل ہی اتھوجن بائی پاس سے گاڑیوں کی نقل و حرکت کو بائی پاس سے منتقل کیا،جبکہ بٹوارہ،پاندریٹھن،سونہ وار ،شیوپورہ،ڈلگیٹ راجباغ،کرسو،اندرانگر،اقبال کالونی سمیت دیگر علاقوں پر فورسز کے پہرے بٹھا دیئے گئے۔ سیول سیکریٹریٹ، اولڈ سیکریٹریٹ، فلائی ائور، اسمبلی ہائوس کیساتھ ساتھ دیگر اہم سرکاری و غیر سرکاری تنصیبات کو ایک روز قبل ہی فورسز نے اپنی تحویل میں لے لیا اور پیر3بجے کے بعد سی آر پی ایف کی بھاری نفری حساس علاقوں میں تعینات رکھی گئی ۔جموں میں بھی سخت سیکورٹی انتظامات کئے گئے ہیں،اور کئی روز قبل ہی ہوٹلوں اور دیگر جگہوں کی تلاشیاں لینے کے علاوہ خفیہ کیمروں کو بھی متحرک کیا گیا۔سرینگر سے آنے والی گاڑیوں کی باریک بینی سے تلاشیاں لی جا رہی ہے،جبکہ مشتبہ افراد پر سخت نگاہ رکھی جارہی ہے۔جموں میں بھی26جنوری کی مناسبت سے اہم تنصیبات اور عمارتوں پر سیکورٹی کی تعداد میں اضافہ کیا گیا ہے۔
 

تازہ ترین