متاثرین ِآفات

دلجوئی اور اِمداد میں تاخیر نہ کی جائے

تاریخ    23 جنوری 2021 (00 : 01 AM)   


 روئے زمین پر جدید دور میں سب سے اہم ادارہ ، در حقیقت تمام اداروں کی ماں ، ہمہ گیر معنوں میں ریاست ہی ہے۔ اس میں اجتماعیت کے تمام افعال کا احاطہ کیا گیا ہے اور جدید دور کے بین الاقوامی نظام کی بنیاد بنتی ہے۔ ریاست کا ایک اہم کام معاشرے کے مختلف طبقات کے درمیان توازن برقرار رکھنا اور دستیاب وسائل کو منصفانہ اور مؤثر انداز میں تقسیم کرنا ہے۔ جوریاست یہ کام کرتی ہے وہ کامیاب کہلاتی ہے اور جویہ کام کرنے میں ناکام رہتی ہے ،وہ لوگوں کی نظروں میں جواز کھو دیتی ہے۔ ایک ہی کام کی قدرتی اور منطقی توسیع ان لوگوں کی مدد کرنا ہے جو کسی وجہ سے مالی یا دوسرے بحران میں الجھے ہوئے ہوں۔ یہی وجہ ہے کہ پوری دنیا کی ریاستیں معاشرے کے ان طبقوں کے لئے پیکیجوں اورسکیموں کا اعلان کرتی ہیں جنہیں انسا ن کی لائی ہوئی یا قدرتی تباہی کا سامنا کرنا پڑاہو۔ ایسے تمام حالات میں ،چاہئے وہ زلزلہ ہو ، سیلاب ہو یا آگ ، لوگ توقع کرتے ہیں کہ ریاست کے کارندے ان ان کے بچاؤ کے لئے حاضر ہوجائیں گے۔یہاں اہم بات یہ ہے کہ سری نگر شہر میں حالیہ آگ کے واقعات میں بہت سے کنبے اپنی رہائش اور سامان سے محروم ہوگئے۔ اس ٹھنڈے موسم میں اور کووڈ وبائی مرض کے ذریعہ ہم پر جومعاشی بحران مسلط ہوگیا ہے ، اس سے لوگ پہلے ہی شدید دباؤ میں ہیں۔ ایسے حالات میں اگر کوئی کنبہ اپنی اقامت گاہ سے محروم ہوجاتا ہے تو اس کی تکلیف بیان سے بالاتر ہے۔ متاثرہ خاندانوں کے لئے مالی امداد کا اعلان کرکے مقامی انتظامیہ نے ایک عمدہ اقدام اٹھایا ہے۔ اس سے قبل بھی جب شدید برف باری کی وجہ سے کچھ مکانات کو نقصان پہنچا تھا تو متاثرہ افراد کے لئے کچھ امداد کا اعلان کیا گیا تھا۔ اس طرح کے اقدامات کا ہمیشہ اعتراف اور خیر مقدم کیا جانا چاہئے۔ متعلقہ عہدیداروں ، جبکہ ہم ان کے ایسے اقدامات کرنے پر ان کی تعریف کرتے ہیں ، کو بھی اپنے عملے کو ہدایت دینے کی ضرورت ہے تاکہ اس بات کو یقینی بنایا جاسکے کہ امداد واقعی مستحق کنبوں تک بنا کسی تاخیر کے پہنچ جائے۔ اس عمل میں عہدیداروں کو یہ امداد حاصل کرنے والے لوگوں کی عزت نفس پر بھی غور کرنا چاہئے۔ یہ لوگ مادی نقصان سے پہلے ہی تباہ ہوچکے ہوتے ہیں اور ہمیں فائلوں کو ایک ٹیبل سے دوسرے ٹیبل پر چلاتے ہوئے ان کے احترام کو پامال نہیں کرنا چاہئے۔ مدد انسانی وقار کی قیمت پر نہیں آنی چاہئے بلکہ متاثرین کا وقار برقرار رکھتے ہوئے اگر مدد ہو تو مستحسن ہے۔ضرورت اس امر ہے کہ انتظامیہ سے جڑے لوگ آتشزدگی ،برفباری یا کسی اور ناگہانی آفت سے متاثرہ لوگوں کی دلجوئی کو کوئی خیرات نہ سمجھیں بلکہ اس کو اپنا فریضہ مانیں اور جب یہ فرض تصور کیاجائے تو یقینی طور پر انتہائی رازداری کے ساتھ متاثرین کی امداد بھی یقینی بنائی جاسکتی ہے اور ان کی بازآبادکاری میں بھی تاخیر نہیں ہوسکتی ہے۔عموماً دیکھنے میں آیا ہے کہ یہاں ناگہانی آفات سے متاثرہ لوگوں کو چند ہزار روپے کی علامتی سرکاری امداد کیلئے درد ر کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور ہی نہیں کیاجاتا ہے بلکہ بعض معاملات میں متعلقین کے ہاتھ گرم کرنے کے تقاضے بھی ہوتے ہیں، جو انتہائی افسوسناک امر ہے۔ اس طرح کا وطیرہ ہمیں اُن ڈاکوئوں کی یاد دلاتا ہے جو قافلے کو لوٹتے بھی ہیں اور بھی قافلے والوں کی عزت و عفت اور جان بھی تاراج کردیتے ہیں۔موجودہ جمہوری دور کی ریاست سے اس طرح کے سلوک کی امید نہیں کی جاسکتی ہے کیونکہ آج کے دور کی ریاست جوابدہ بھی ہے اور نظم و ضبط کے تابع بھی ۔آج کی ریاست فلاحی ریاست کا تصور لیکر آئی ہے جہاں آئے روز یہی دعوے کئے جاتے ہیں کہ ریاست لوگوں کی فلاح و بہود میں منہمک ہے ۔سرکار سے جڑے لوگ اسی ریاست کے کل پرزے ہوتے ہیں اور جب کل پرزے درست سمت میںاپنی مفوضہ ذمہ داریاں انجام دیں تو ریاست کا سفر بھی صحیح سمت میں جاری رہے گا لیکن جب یہی کل پرزے راہ سے بھٹک کر اقدار کو فراموش کریں اور ضرورتمندوں کی امداد کو بھی ذاتی مفادات سے جوڑ دیںتوریاست کی جو خیالی شاندار عمارت لوگوںکے تصور میں رچی بسی ہوتی ہے ،وہ پاش پاش ہونے لگتی ہے اور یوں ریاست اور رعایا کے درمیان ایک خلیج یا دراڑ پیدا ہوجاتی ہے جو آگے چل کربے پناہ مسائل کا سبب بن جاتی ہے۔امید کی جاسکتی ہے کہ ریاست اپنی ذمہ داریوں سے عہدہ برآ ہوجائے گی اور رعایا یا اپنے عوام کیلئے پیش پیش ہی نہیں رہے گی بلکہ اس امر کو بھی یقینی بنایا جائے گا کہ رعایا کے پسماندہ طبقہ جات اور مستحقین کی فوری اور بھرپور امداد ہو تاکہ اُنہیں اپنی عزت نفس کو اپنے ہاتھوں پامال کرتے ہوئے دوسروں کے آگے ہاتھ نہ پھیلانا پڑے ۔

تازہ ترین