کورونا مخالف ٹیکہ کاری کا دوسرا دن،ملک میں 447شکایات درج | 3ویکیسن متاثرین اسپتال میں داخل، 2لاکھ 24ہزار 301ہیلتھ ورکروں کو ٹیکے لگے: وزارت صحت

تاریخ    18 جنوری 2021 (00 : 12 AM)   
(عکاسی: امان فاروق)

پرویز احمد
 سرینگر // مرکزی وزارت صحت نے کہا ہے کہ 2روز کے دوران کورونا وائرس مخالف ویکسین دینے کے دوران 447 شکایات موصول ہوئی ہیں جن میں ہیلتھ ورکروں کو زکام، سر درد،بخار یا تھکاوٹ محسوس ہوئی۔وادی میں بھی اس طرح کا ایک کیس سامنے آیا ہے۔ مرکزی وزارت صحت نے کہا ہے کہ 16جنوری کو ملک بھر میں 2 لاکھ 24ہزار 301 ہیلتھ ورکروں کو کورونا مخالف ویکسین دیئے گئے جن میں سے 447 ہیلتھ ورکروں نے مختلف بیماریوں  (adverse events following immunization)  کی شکایت کی ۔  وزارت صحت کے ایڈیشنل سیکریٹری منوہر اگنانی نے کہا کہ اتوار کو صرف 6ریاستوں میں ٹیکہ کاری مہم جاری رہی جہاں 17 ہزار 72 ہیلتھ ورکروں کو ویکسین دیئے گئے ۔انہوں نے کہا کہ جن ریاستوں میں اتوار کو ٹیکہ کاری جاری رہی ، ان میں آندھرا پردیش، اروناچل پردیش ، کرناٹک، کیرالا ، منی پور اور تامل ناڈو شامل ہیں۔ ان کا کہنا تھاکہ2 دنوں کے دوران مجموعی طور پر 2لاکھ 24ہزار 301ہیلتھ ورکروں کو ویکسین دیئے گئے جبکہ 16اور 17تاریخ کو ویکسین کے بعد 447 شکایات درج کی گئیںجن میں 3کو اسپتال میں داخل کرنا پڑا ۔ انہوں نے کہا کہ ویکسین لینے والے ہیلتھ ورکروں نے بخار، سردرد اور تھکاوٹ کی شکایت کی ہے‘‘۔ انہوں نے کہا کہ اتوار کو تمام مرکزی زیر انتظام علاقوں اور ریاستوں کی میٹنگ طلب کی گئی جس میں ٹیکہ کاری مہم میں پیش رفت اور رکاوٹوں پر تفصیلی بحث ہوئی۔اسی طرح کی شکایت وادی کشمیر میں راجپورہ پلوامہ سے آئی۔ کیمونٹی ہیلتھ سینٹر راجپورہ میں کورونا وائرس مخالف ٹیکہ لینے والے ایک ڈاکٹر کو طبی امداد کی ضرور ت پڑی ۔ معلوم ہوا ہے کہ سنیچر کو کورونا مخالف ٹیکہ کاری کے پہلے دن پلوامہ ضلع میں 143ہیلتھ ورکروں کو ویکسین دئے گئے ۔ ان میں سے سی ایچ سی راجپورہ میں تعینات ایک ڈاکٹر کو ویکسین لینے کے بعد ضلع اسپتال پلوامہ میں قلیل وقت کیلئے داخل کرنا پڑا  ۔ ضلع اسپتال پلوامہ کے میڈیکل سپر انٹنڈنٹ ڈاکٹر جمیل نے بتایا ’’ مذکورہ ڈاکٹر کو بازو میں درد کے بعد سی ٹی سکین کرانے کا مشورہ دیا گیا اور وہ اسپتال میں سی ٹی سکین کرانے کیلئے آیا تھا‘‘۔ ڈاکٹر جمیل نے بتایا کہ اگرچہ اس کو اے ای ایف آئی میں شامل کیا جاتا ہے لیکن مذکورہ ڈاکٹر کی سی ٹی سکین ٹھیک آئی تھی اور وہ بعد میں گھر چلا گیا ‘‘۔سکمز میڈیکل سپر انٹنڈنٹ ڈاکٹر فاروق احمد جان نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا ’’ اے ای ایف آئی کا ایک معاملہ پلوامہ میں سامنے آیا ہے‘‘۔ انہوں نے کہا کہ اگرچہ ہمیں پہلے مذکورہ ڈاکٹر کو منتقل کرنے کی اطلاع دی گئی لیکن وہ بعد میں سکمز منتقل نہیں ہوا ‘‘۔پلوامہ میں موجود ذرائع نے بتایا کہ ویکسین لینے والے بیشتر ملازمین نے زکام اور بخار کی شکایت کی ہے ۔
 

تازہ ترین