۔ 109854کورونانے5کی جان لے لی | 26ہزار ٹیسٹ، تازہ متاثرین میں 471کا اضافہ،مجموعی تعداد

تاریخ    30 نومبر 2020 (00 : 12 AM)   


پرویز احمد
 سرینگر //جموں و کشمیر میں پچھلے 24گھنٹوں کے دوران25ہزار996تشخیصی ٹیسٹ کئے گئے جن میں 471افراد کی رپورٹیں مثبت آئیں اور اسطرح متاثرین کی مجموعی تعداد109854ہوگئی ۔ ان میں 44ہزار208جموں جبکہ کشمیر صوبے میں متاثرین کی مجموعی تعداد65ہزار646تک پہنچ گئی۔ اتوار کو مزید 5افراد کورونا سے فوت ہوگئے۔ متوفین کی مجموعی تعداد1685تک پہنچ گئی۔ان میں 584جموں جبکہ کشمیر صوبے میں فوت ہونے والے افراد کی تعداد1100کا ہندسہ پار کرکے 1101ہوگئی ہے۔ نئے 471معاملات میں211کشمیر جبکہ 260جموں صوبے سے تعلق رکھتے ہیں ۔ کشمیر صوبے کے 211 متاثرین میں 86سرینگر، 31بارہمولہ، 21بڈگام، 16پلوامہ، 14 کپوارہ، 12اننت ناگ، 15بانڈی پورہ، 6گاندربل،1کولگام اور 9 شوپیان سے تعلق رکھتے ہیں۔ جموں صوبے کے 260 معاثرین میں122جموں، 24 راجوری، 26 ادھمپور، 22ڈوڈہ، 14کٹھوعہ، 2پونچھ، 15 سانبہ، 17کشتواڑ،17رام بن اور ایک ریاسی سے تعلق رکھتا ہے۔ 

مزید 5اموات

 پچھلے24گھنٹوں کے دوران جموں و کشمیر میں کورونا وائرس سے مزید 5افراد فوت ہوگئے۔ مرنے والوں میں 2کشمیر جبکہ 3جموں صوبے سے تعلق رکھتے ہیں۔ کشمیر میں فوت ہونے والے 2متاثرین میں ایک بارہمولہ اور ایک کپوارہ سے تعلق رکھتا ہے۔ بارہمولہ میں تعینات محکمہ صحت کے ایک سینئر ڈاکٹر نے بتایا’’ کونورباغ بارہمولہ سے تعلق رکھنے والا65سالہ شخص کورونا وائرس سے پیدا ہونے والے نمونیا سے جی ایم سی بارہمولہ میں فوت ہوگیا ہے‘‘۔سرحدی ضلع کپوارہ میں تعینات ایک سینئر ڈاکٹر نے بتایا ’’ ہندوارہ سے تعلق رکھنے والی ایک 75سالہ معمر خاتون کورونا وائرس سے پیدا ہونے والے نمونیا سے فوت ہوگیا ہے‘‘۔سینئر ڈاکٹر نے بتایا کہ مذکورہ خاتون صدر اسپتال سرینگر میں فوت ہوگئی۔ جموں صوبے میں کورونا وائرس سے 3افراد فوت ہوگئے۔ مرنے والوں میں ایک جموں جبکہ ایک ضلع ادھمپور سے تعلق رکھتا ہے۔

حکومتی بیان

سرکاری بلیٹن میں بتایا گیا ہے کہ نوول کورونا وائرس کے1,09,854معاملات سامنے آئے ہیں جن میں سے5,087سرگرم معاملات ہیں ۔ اَب تک1,03,082اَفراد صحتیاب ہوئے ہیں ۔جموں وکشمیر میں کوروناوائرس سے مرنے والوں کی مجموعی تعداد1,685تک پہنچ گئی ،جن میں سے 1,101کا تعلق کشمیر صوبہ سے اور584کاتعلق جموں صوبہ سے ہیں۔اِس دوران اتوار کومزید491افرادشفایاب ہوئے ہیںجن میںجموں صوبے کے168اَفراداور کشمیر صوبے کے 323اَفرادشامل ہیں۔بلیٹن میں مزید کہا گیا ہے کہ اَب تک 29,95,668ٹیسٹوں کے نتائج دستیاب ہوئے ہیں جن میں سے  29؍نومبر 2020  کی شام تک 28,85,814نمونوں کی رِپورٹ منفی پائی گئی ہے ۔علاوہ ازیں اَب تک7,86,587افراد کو نگرانی میں رکھا گیا ہے جن کا سفر ی پس منظر ہے اور جو مشتبہ معاملات کے رابطے میں آئے ہیں۔ اِن میں20,673اَفراد کو ہوم قرنطین میں رکھا گیا ہے جس میں سرکار کی طرف سے چلائے جارہے قرنطین مراکز بھی شامل ہیں ۔5,087  اَفراد کوآئیسولیشن میں رکھا گیا ہے جبکہ39,874اَفراد کو گھروں میں نگرانی میں رکھا گیا ہے۔اِسی طرح بلیٹن کے مطاب7,19,268اَفرادنے 28روزہ نگرانی مدت پوری کی ہے۔
 
 
 

کشمیر میں اموات 1101

پرویز احمد

 سرینگر //29مارچ سے  29نومبر تک کشمیر صوبے میں کورونا وائرس سے 1101افراد فوت ہوگئے ہیں۔ کشمیر صوبے کے 10اضلاع میں9ماہ کے دوران کورونا وائرس سے 65ہزار646افراد متاثر ہوئے، جن میں61ہزار 818 افراد صحتیاب ہوئے جبکہ 1101 متاثرین کورونا وائرس سے فوت ہوگئے۔ سرکاری اعداد و شمار کے مطابق 1101 متوفین میں سب سے زیادہ 416سرینگر ، 163بارہمولہ، 100بڈگام، 86پلوامہ، 83کپوارہ، 78اننت ناگ، 50بانڈی پورہ، 38گاندربل، 50کولگام اور 37شوپیان ضلع سے تعلق رکھتے ہیں۔ جبکہ جموں صوبے میں 44ہزار208افراد متاثر ہوئے، جن میں 41ہزار264صحتیاب،2360 زیر علاج جبکہ 584افراد کورونا وائرس سے فوت ہوگئے ہیں۔
 
 
 
 

تعلیمی ادارے 31 دسمبر تک بند رہیں گے | جموں وکشمیر کے تمام اضلاع اورینج زون میں شامل 

سید امجد شاہ

جموں// حکام نے کورونا معاملات میں اضافے کے پیش نظر جموں و کشمیر کے تمام اضلاع کو اورینج زون میں قراردیاہے جبکہ تعلیمی ادارے 31 دسمبر تک بند رہیں گے۔یہ فیصلہ کورونا سے متعلق صورتحال کے مجموعی جائزہ کے بعد کیا گیا ہے۔ایک حکم کے تحت ڈیزاسٹر مینجمنٹ کی ریاستی ایگزیکٹو کمیٹی کے چیئرمین بی وی آر سبھرامنیم نے وائرس کے پھیلاؤ پر قابو پانے کے لئے اقدامات کرنے کی ضرورت پر زور دیا ۔حکم نامے میں لکھا گیا ہے’’ڈیزاسٹر مینجمنٹ ایکٹ 2005 کی دفعہ 24 کے تحت فراہم کردہ اختیارات کے استعمال سے ایس ای سی کے چیئرپرسن نے حکم دیا ہے کہ جموں و کشمیر کے تمام اضلاع ریڈ اوراورینج زون میں رکھاجائے‘‘۔ حکمنامہ کے مطابق لکھن پور اور جواہر ٹنل کو ریڈ زون کے طور پر درجہ بندی کیاگیاہے۔ آرڈر میں مزید لکھا گیا ہے کہ جموں وکشمیر کے تمام اضلاع کو اورینج زمرے میں رکھاگیاہے ۔نئی ہدایات اور رہنما خطوط کے مطابق یکم دسمبر 2020 سے تمام اسکول، کالج، اعلیٰ تعلیمی ادارے جن میں آنگن واڑی مراکز شامل ہیں، بدستور بند رہیں گے۔حکم میں کہا گیا ہے’’صرف 50 فیصد ٹیچنگ اور نان ٹیچنگ اسٹاف کو آن لائن ٹیچنگ اور ٹیلی کونسلنگ اور صرف کنٹینمنٹ زون سے باہر کے علاقوں میں متعلقہ کام کے لئے اسکولوں میں بلایا جائے گا‘‘۔آرڈر میں کہا گیا ہے’’نویں اور بارہویں جماعت کے طلباء کو صرف کنٹینمنٹ زون سے باہر کے علاقوں میں اپنے اسکولوں میں جانے کی اجازت ہے‘‘۔حکام نے سوئمنگ پول، سینما گھر، تھیٹر، ملٹی پلیکس، ریستوران، تفریحی پارکس، سماجی، سیاسی، کھیل، تفریح کی کچھ پابندیوں اور ایس او پیز پر عمل کرنے کی اجازت دی ہے۔ ڈپٹی کمشنرز کو بتایا گیا ہے کہ وہ ایس ای سی سے پہلے مشاورت کے بغیرنوٹیفائی کئے گئے کنٹینمنٹ زون کے باہر کوئی لاک ڈاؤن نہ لگائیں۔
 

تازہ ترین