سڑکوں پر آنے کیلئے مجبور نہ کیا جائے :پٹوار ایسو سی ایشن | پٹوارحلقوں کی حد بندی اور دیگر مطالبات پورے کئے جائیں

تاریخ    26 نومبر 2020 (00 : 01 AM)   


بلال فرقانی
سرینگر//پٹوار حلقوں کی حد بندی اور گریڈ تنخواہوں میں اضافہ کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے پٹواریوں نے الزام عائد کیا کہ گزشتہ 4 برسوں سے محکمہ جاتی ترقیاتی کمیٹیوں کی میٹنگوں کی عدم وجودگی سے انکی ترقیوں کی راہ میں رکاوٹیں کھڑی ہوئی ہیں۔ جموں کشمیر پٹوار ایسو سی ایشن کے صدر عبدالمجید ملہ اور جنرل سیکریٹری سید دانش قادر ی نے بدھ کو ایوان صحافت کشمیر میں نامہ نگاروں سے مشترکہ طور پر بات کرتے ہوئے کہا کہ ماضی میں پی ڈی پی  اور بھاجپا کی مخلوط سرکار کے دوران اپنے مطالبات کے حق میں 40 روز تک ہڑتال بھی کی تھی اور اس دوران تمام چھوٹے بڑتے وزراء کے علاوہ اس وقت کی وزیر اعلیٰ نے بھی یقین دہانی کرائی تھی کہ پٹواریوں کے مطالبات کو حل کیا جائے گا،تاہم مخلوط سرکار کے خاتمے کے بعد اس وقت کی گورنر انتظامیہ نے بھی دو ماہ کے اندرمطالبات حل کرنے کی یقین دہانی کرائی تھی،تاہم قریب3 سال گزر جانے کے باوجود ابھی تک پٹواریوں کے مسائل و مطالبات جوں کے توں ہیں۔ عبدالمجید اور دانش قادری نے پٹوار حلقوں کی نئی حد بندی پر زور دیتے ہوئے کہا کہ ایک  پٹواری کو10مربع کلو میٹروں پر موجود کئی دیہات میں کام کرنا پڑتا ہے اور کام کے اضافی بوجھ سے نا ہی وہ اپنے منصب اور نا ہی لوگوں سے انصاف کر پاتے ہیں۔انہوں نے کہا’’ سال 2005 میں نئے اضلاع کی حد بندی اور مابعد نئی انتظامی اکائیوں کی حد بندی کے وقت بھی پٹوار حلقے کی حد بندی نہیں ہوئی‘‘۔ انہوں نے پٹوار خانوں کو قائم کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ جب تک یہ عمل مکمل ہوگا تب تک انہیں کرایہ فراہم کیا جائے جو فی الوقت انہیں اپنی تنخواہوں سے ادا کرنی پڑتی ہے۔ محکمہ جاتی ترقیاتی کمیٹیوں کی میٹنگوں کو سرد خانے کی نذر کرنے پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ گزشتہ4برسوں سے’’ ڈی پی سی‘‘ میٹنگیں نہیں ہو رہی ہے،جس کے نتیجے میں پٹواریوں کی ترقیوں میں رکاوٹ کھڑی ہوئی ہیں اور انہیں سخت نقصانات سے دو چار ہونا پڑ رہا ہے۔ ایسو سی ایشن کے لیڈراں کا کہنا تھا کہ وہ سڑکوں پر آکر معامالات طے نہیں کرنا چاہتے بلکہ انتظامیہ اور لیفٹنٹ گورنر معاملے کا نوٹس لئے تاکہ ان مسائل کو حل کیا جاسکے۔
 

تازہ ترین