تازہ ترین

پونچھ میں حدمتارکہ پر تعینات فوجی کا انتہائی اقدام

تاریخ    23 نومبر 2020 (00 : 12 AM)   


نیوز ڈیسک
جموں //پونچھ مین حدمتارکہ پر تعینات ایک سپاہی نے مبینہ طور اتوار کواپنی ہی سروس بندوق سے اپناخاتمہ کیا۔مہلوک کی شناخت حوالدارراجندرکمار کے طور ہوئی ہے ۔اُس نے سالوتری علاقہ مین اتوار صبح8بجکر25منٹ پرخودکو اپنی ہی بندوق سے گولی مار دی۔اُسے دیگر ساتھیوں نے فوری طوراسپتال پہنچایا جہاں اُس نے 10بجکر05منٹ پر دم توڑ دیا۔حکام کے مطابق  حوالدار راجندر کمار کے اس انتہائی قدم کے پیچھے محرکات کاپتہ ابھی نہیں چلاہے ۔پولیس نے اس سلسلے میں کیس درج کرکے تحقیقات شروع کردی ہے۔بتادیں کہ جموں و کشمیر میں سیکورٹی فورسز اہلکاروں کی طرف سے خودکشی کرنے کے رجحان میں کئی تدابیر اپنانے کے باوجود بھی کوئی تفاوت دیکھنے کو نہیں مل رہی ہے۔ مبصرین کا کہنا ہے کہ سیکورٹی فورسز اہلکاروں میں خودکشی کے بڑھتے ہوئے رجحان کی وجہ سخت ڈیوٹی، اپنے عزیز و اقارب سے دوری اور گھریلو و ذاتی پریشانیاں ہیں۔انہوں نے کہا کہ اگرچہ حکومت نے سیکورٹی اہلکاروں کے لئے یوگا اور دیگر نفسیاتی ورزشوں کو لازمی قرار دیا ہے لیکن باوجود اس کے جموں و کشمیر میں جوانوں کی جانب سے خودکشی کے واقعات گھٹنے کی بجائے بڑھ رہے ہیں۔سرکاری اعداد وشمار کے مطابق سال 2010 سے 2019 تک ملک میں 1113 فوجی اہلکاروں کی خودکشی کے 1113 مشتبہ واقعات درج کیے گئے۔اگرچہ سرکاری اعداد و شمار میں کشمیر میں خودکشی کرنے والے سیکورٹی اہلکاروں کی تفصیلات الگ سے نہیں دی گئی ہیں، تاہم سمجھا جا رہا ہے کہ سب سے زیادہ معاملات یہیں درج ہوئے ہوں گے۔وزیر مملکت برائے دفاعی امور شریپد نائیک نے گذشتہ برس دسمبر میں لوک سبھا میں ایک سوال کے تحریری جواب میں کہا کہ خودکشی کے  ان 1113 معاملوں میں سے فوج میں 891، بھارتی فضائیہ میں 182 اور بحری فوج میں 40 اہلکاروں نے یہ انتہائی قدم اٹھایا۔