تازہ ترین

۔10ویں ،11ویں اور12ویں کے امتحانات

بورڈ نے نصاب میں کمی کا خلاصہ کردیا

تاریخ    3 نومبر 2020 (00 : 01 AM)   


سیدرضوان گیلانی
سرینگر//طلبہ کی مانگ اوران کی آسانی کیلئے جموں کشمیربورڈ آف اسکول ایجوکیشن نے دسویں اور بارہویں جماعت کے اس سال لئے جانے والے امتحان میں نصاب میں کی جانے والی نرمی کو ظاہر کیا ہے۔بورڈ آف اسکول ایجوکیشن کے ڈائریکٹر اکیڈمکس ڈاکٹر فاروق احمد پیرکی طرف سے جاری کی گئی نوٹیفیکیشن میں بتایا گیا ہے کہ طلاب کو سوالنامے میں صرف 60فیصد نمبرات کرنے ہوں گے جنہیں صد فیصد کے برابرماناجائے گا۔ڈاکٹر فاروق احمد پیر نے کہا کہ پہلے طلاب کو70 فیصدنمبرات حل کرنے تھے لیکن اب نصاب میں 10فیصد مزید نرمی کی گئی ہے اور طلاب کو صرف60فیصدنمبرات حل کرنے ہوں گے۔نصاب میں نرمی کااعلان دسویں،گیارہوںاوربارہویں جماعت کے کشمیرصوبے اور جموں صوبے کے سرمائی زون سے تعلق رکھنے والے طلاب کیلئے کیاگیا ہے جوآنے والے سالانہ امتحان میں شامل ہورہے ہیں۔نوٹیفیکیشن میں بتایاگیا ہے کہ جن مضامین میں تھیوری اور پریکٹیکل امتحان ہوں گے اُن مضامین میں نرمی صرف تھیوری امتحان میں ہوگی۔نوٹیفیکیشن میں کہاگیا ہے کہ فزکس،کیمسٹری اور بائیولوجی جن میں پریکٹیکل امتحان میں 30نمبرات ہوتے ہیں،اورتھیوری میں70نمبرات ہوتے ہیں ،میں طلاب تھیوری میں42نمبرات حل کریں گے جو70نمبرات کا60فیصد ہے جنہیں اسی حساب سے صدفیصد کے برابر مانا جائے گا۔نوٹیفیکیشن میں کہاگیا ہے کہ دیگر مضامین جن میں پریکٹیکل امتحان ہوتے ہیں،اسی طرح سے تھیوری میں نصاب میں نرمی دی جائے گی۔مزیداُن سوالات جن میں طلاب کو متبادل دیاگیا ہو،میں طلاب صرف ایک سوال کا جواب دیں گے اورکثیرمتبادل والے سوالات یعنی ملٹی پل چوائس کوسچنزمیں ہر ایک سوال جسے امیدوار نے حل کیا ہو،کو انفرادی طور مارک کیا جائے گا۔نوٹیفیکیشن میں کہاگیا ہے کہ جوامیدوار ملٹی پل چوائس سوالات میں تین سوالات کے جواب دیں گے انہیں تین میں سے تین نمبرات دیئے جائیں گے نہ کہ دس میں سے تین کے۔بورڈ نے مزید طلاب سے کہا ہے کہ انہیں پورے سوالنامے میں سے کوئی بھی ساٹھ نمبرات کے سوال حل کرنے ہوں گے ۔طلاب اپنی مرضی کے باب میں سے سوالات حل کرسکتے ہیں اوران پر کسی خاص باب سے کوئی خاص سوال حل کرنے کی کوئی قید نہیں ہوگی ۔طلاب سے کہا گیا ہے کہ وہ سوالنامے کو سوالات حل کرنے سے قبل بغور پڑھیں۔