تازہ ترین

صوبائی کمشنر جموں نے صحت کے شعبے کے منصوبوں پر پیش رفت کا جائزہ لیا

تاریخ    30 اکتوبر 2020 (00 : 01 AM)   


 جموں// صوبائی کمشنر سنجیو ورما نے یہاں ایک اعلی سطحی اجلاس میں جموں صوبہ کے مختلف حصوں میں صحت کے شعبے کے منصوبوں پر پیشرفت کا جائزہ لیا۔اجلاس میں میڈیکل کالج ڈوڈہ ، کٹھوعہ ، راجوری اور گورنمنٹ میڈیکل کالج جموں و بون اور جوائنٹ اسپتال ،جموں میں اسٹیٹ کینسر انسٹیچوٹ پر کام کی رفتار کا جائزہ لیا گیا۔اجلاس میں کٹھوعہ ، ڈوڈہ اور راجوری کے ضلع ترقیاتی کمشنروں ، چیف انجینئر پی ڈبلیو ڈی (آر اینڈ بی) جموں ، ایس ای ، پی ڈبلیو ڈی جموں کٹھوعہ سرکل ، ایس ای ، پی ڈبلیو ڈی (آر اینڈ بی) راجوری پونچھ سرکل ، ایس ای ، پی ڈبلیو ڈی (آر اینڈ بی) ڈوڈہ ، ایگزیکٹو انجینئرز نے شرکت کی، پی ڈبلیو ڈی (آر اینڈ بی) ڈویژن کٹھوعہ ، ڈوڈہ اور راجوری کے ایگزیکٹیو انجینئرز نے ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعہ سے اجلاس میں  شرکت کی۔ چیف انجینئر پی ڈبلیو ڈی جموں نے بتایا کہ بون اور جوائنٹ اسپتال کے گراؤنڈ فلور اور تہہ خانے پر 42 فیصد کام مکمل ہوچکا ہے اور بقیہ کام 2021 میں مکمل ہوجائیگا۔ ڈی سی کٹھوعہ ، او پی پی بھگت نے بتایا کہ 200 بستروں پر مشتمل اسپتال ، رہائشی بلاک اور انتظامی بلاک پر مشتمل 139 کروڑ روپے کی لاگت کے جی ایم سی کمپلیکس کا 80 فیصد کام مکمل کرلیا گیا ہے ، جبکہ باقی عمارتوں پر کام آئندہ مالی سال میں شروع کیا جائے گا۔ پرنسپل میڈیکل کالج ڈوڈہ نے صوبائی کمشنر کو آگاہ کیا کہ جی ایم سی ڈوڈہ کا 78 فیصد کام ،جس میں رہائشی بلاک اور انتظامی بلاک ، بوائز اور گرلز ہاسٹل شامل ہیں، مکمل ہوچکے ہیں اور اس منصوبے پر باقی کام آئندہ مالی سال میں مکمل کرلیا جائے گا۔صوبائی کمشنرنے پرنسپل جی ایم سی ڈوڈہ سے کہا تمام مطلوبہ لوازمات پُرکرنے کے بعد پانی کے لئے 3.67 کروڑ روپے اور بجلی کے کام کے لئے 5.07 کروڑ روپے کے الگ الگ ٹینڈر جاری کریں۔۔ ڈی سی راجوری نے بتایا کہ جی ایم سی کے 2 بلاکس پر 95 فیصد کام مکمل ہوچکا ہے اور باقی کام مارچ 2021 میں مکمل ہوں گے۔ اس سے قبل صوبائی کمشنر نے غیر منقولہ املاک کے ترمیم شدہ اسٹیمپ ڈیوٹی نرخوں پر پیشرفت کا جائزہ لینے کے لئے جموں صوبہ کے تمام ڈپٹی کمشنرز کے ساتھ ویڈیو کانفرنس میٹنگ طلب کی۔ڈپٹی کمشنرز نے بتایا کہ ترمیم شدہ اسٹامپ ڈیوٹی کی شرحوں کو حتمی شکل دینے کا عمل جاری ہے۔صوبائی کمشنر نے اپنے اپنے ضلع کے روشنی کیسوں کی اشاعت سے متعلق ڈی سی سے تفصیلات بھی طلب کیں۔ بتایا گیا کہ روشنی ایکٹ کے مقدمات کی فہرستیں شائع ہوچکی ہیں۔