ساکھشر بھارت مشن کے تحت کام کررہے اساتذہ کا مستقبل تاریک | 8 بر سوں سے مستقلی کے منتظر،لیفٹیننٹ گورنر سے ذاتی مداخلت کی اپیل

تاریخ    12 اکتوبر 2020 (30 : 12 AM)   


سید اعجاز
سرینگر//محکمہ تعلیم میں مرکزی معاونت والی اسکیم ساکھشر بھارت مشن (ایس بی ایم ) کے تحت کام کر رہے 6ہزار کے قریب اعلیٰ تعلیم یافتہ اساتذہ 8سال گزر جانے کے باجود مستقل نہیں کئے گئے اور نہ ہی انہیں مستقل کرنے کیلئے بار بار کی یقین دہانیوں کے باوجود کوئی پالیسی مرتب کی گئی ، جس کی وجہ سے یہ اساتذہ سخت ذہنی تنائو میںمبتلا ہو کرانتظار کرتے کرتے عمر کی آخری حد بھی پار کر گئے۔مذکورہ اساتذہ نے جموں و کشمیر کے لیفٹینٹ گورنرمنوج سنہا سے انسانی ہمدردی کے ناطے اس معاملے میںمداخلت کی اپیل کی ہے ۔سال2012ء میںملک کے باقی حصوں کے ساتھ ساتھ جموں و کشمیر میںکے ہر ایک علاقے میں پنچایت سطح پر میرٹ کی بنیاد پر ایک مرد اور ایک خاتون کوانتہائی قلیل ماہانہ مشاہیرہ 2000روپے پرتعینات کیا گیا ۔اِن اساتذہ کے مطابق اس دوران انہوں اِس اُمید کے ساتھ محکمہ تعلیم میں کام شروع کیا کہ مستقبل میں حکومت ان کی مستقلی کے لئے کوئی قدم اٹھائے گی۔ اس دوران انہوں نے ہر پنچایت میں سخت محنت کر کے ناخواندہ لوگوں کوتعلیم کے نور سے آراستہ کرنے میں کامیابی حاصل کی۔کشمیر یونیورسٹی سے پوسٹ گریجویشن ایم ایڈکی ڈگری یافتہ صبیہ جان نے بتایا کہ اس دوران وہ اپنی ذمہ داریوں کے ساتھ ساتھ سکولوں میں تعینات اساتذہ کے شانہ بشانہ کام کر رہے ہیں جبکہ محکمہ نے اُنہیں سرکاری سکولوں میں ایک ایک کمرہ بطور دفتر بھی فراہم کیا ۔ انہوں نے بتایا سرکار کی جانب سے دیگر قسم کی اہم فرائض کوانہوں نے خطرات کے باجودپورا کیا۔ریاض احمد نامی ایک اور نوجوان کہاکہ گزشتہ 8سال سے وہ سرکار کی جانب سے نوکری کی مستقلی اور جاب پالیسی مرتب کرنے کے منتظر ہیں ،لیکن تاحال اس حوالے سے کوئی بھی موثر قدم نہیں اٹھایا گیا، جس کے نتیجے میں یہ اساتذہ اب عمر کی آخری حد بھی پار کر گئے ، جس کے باعث وہ سخت ذہنی تنائو میں مبتلا ہیں ۔انہوں نے کہا کہ اس حوالے سے انہوں نے تمام لوازمات سکولوں ،زونل آفس،چیف ایجوکیشن افسر کے دفتر سے لیکر کمشنر سیکرٹری کے دفتر تک پورا کر وائے ہیں لیکن عملی طور پر کوئی بھی کارروائی عمل میں نہیں لائی گئی۔ انہوں نے محکمہ کے اعلیٰ حکام کے علاوہ جموں و کشمیر کے لیفٹینٹ گورنر منوج سنہا سے 6ہزار نوجوانوں کے مستقبل کو بچانے کے لئے مداخلت کی اپیل کی ہے۔
 

تازہ ترین