تازہ ترین

سنُو ذرا

تاریخ    27 ستمبر 2020 (00 : 02 AM)   


سُنو ذرا
کُون ہو تم 
کیوں ہو مجھ سے یُوں مخاطب ؟
تیرے ہاتھ میں یہ قلم و کاغذ 
کیا کوئی درد لکھنے جارہے ہو ؟
کیا درد تحریر ہو پا رہے ہیں؟
 
سُنو ذرا 
اگر ہو محبتوں کی کتاب لکھنا 
ساتھ میں وفا کا نصاب لکھنا 
نہ ہی بدلنا تیور 
نہ کبھی اپنا لہجہ 
خزاں کی رُت میں بھی 
لہجہ اپنا گُلاب لکھنا 
سنُو اگر ہو کچھ وقت کو لکھنا 
تو وقت سے یہ کہہ تم دینا 
کہ میری آنکھوں میں نیا
خواب نہ دینا 
پھر مجھے رتجگوں کا 
عذاب نہ دینا 
کہ میں ہوں اِک حساس سی لڑکی 
خاموش اور اداس سی لڑکی 
گُماں میں رہنا نہیں گوارا 
حقیقتوں میں ہوں میں رہتی 
حساسیت نے ہے مجھ کو مارا 
بےتحاشہ ہوں میں سُوچتی 
درد دلوں کے ہوں میں لکھتی 
درد رہتی ہوں میں چُنتی 
خواب اب کم ہی ہوں میں بُنتی
 
سُنوذرا 
اگر ہو تمہیں غزل لکھنا 
تو درد کو تم قافیہ لکھنا 
اشکوں کو تم ردیف لکھنا 
مطلع میں چشمِ تر لکھنا 
ہاں ہاں دیدہِء تر لکھنا 
حُسنِ مطلع جب لکھنے لگو گے 
چند شکستہ خواب لکھنا 
لکھنے لگو جب بیت الغزل تم 
اذیتوں کے عذاب لکھنا 
مقطع میں خود کو حساؔس لکھنا
رکھنا لبوں پر خُوش نُمائی 
خود کو نہ تم اداس لکھنا 
 
سُنو ذرا 
جب تعریف ہونٹوں کی 
لکھنے لگو تم 
نہ میر ؔ کی طرح 
پنکھڑی ِگلاب لکھنا 
لکھ کر آہیں ،خاموشیاں 
چپ کا عذاب لکھنا 
سُنو آنکھوں کو 
جھیل مت لکھنا 
چند ریزہ ریزہ 
خواب لکھنا 
رتجگوں کے 
عذاب لکھنا 
میری آنکھوں کی 
سوکھی پُتلیوں سے 
چِپکے چند شکستہ خواب لکھنا 
 
شمیمہ صدیق شمیؔ
چک سید پورہ شوپیان