بھارت نے پاکستانی وزیرخارجہ کا بیان ردکیا

تاریخ    23 ستمبر 2020 (00 : 02 AM)   


نیوز ڈیسک
سرینگر//بھارت نے کشمیر پر پاکستانی وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کے اقوام متحد ہ میں دیئے گئے بیان کو بھارت کے اندرونی معاملات کے بارے میں کبھی نہ ختم ہونی والی داستان سے تعبیر کیا ۔ اقوام متحدہ میں بھارت کی فرسٹ سکریٹری ودیشا میترا نے پاکستان کے اس موقف کو مسترد کردیا کہ مسئلہ کشمیر اقوام متحدہ میں ایک طویل عرصے سے جاری تنازعہ میں سے ایک ہے۔کے این ایس، کے مطابق  اقوام متحدہ میں بھارت کی فرسٹ سکریٹری ودیشا میترا نے پاکستانی وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کے خطاب کو بھارت کے اندرونی معاملات کے بارے میں کبھی نہ ختم ہونے والی داستان بتایاہے۔بھارت نے منگل کو پاکستان کے اس موقف کو مسترد کردیا کہ مسئلہ کشمیر اقوام متحدہ میں ایک طویل عرصے سے جاری تنازعہ میں سے ایک ہے۔میڈیا رپورٹس کے مطابق بھارت نے کہا کہ اسلام آباد کو جنگجویت سے نمٹنے پر توجہ دینی چاہئے۔پاکستان کے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے اقوام متحدہ میں خطاب کے دوران مسئلہ کشمیر کا تذکرہ کیا تھا۔اس سے قبل پاکستان کے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے ایک ویڈیو پیغام میں اقوام متحدہ کی کامیابیوں کو سراہا لیکن اس میں ’ناکامیوں اور کوتاہیوں‘کا بھی حوالہ دیا۔انہوں نے خطاب میں کہا کہ جموں وکشمیر اور فلسطین کے تنازعات ادارے کے سب سے واضح اور دیرینہ تنازعہ ہیں، جموں و کشمیر کے عوام اب بھی اقوام متحدہ کے ذریعہ ان سے اپنے حق خود ارادیت کے وعدے کی تکمیل کے منتظر ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ خاص طور پر سلامتی کونسل میں بین الاقوامی تعاون انتہائی کم ہے۔ادھر میڈیا رپورٹس کے مطابق پاکستانی وفاقی وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کشمیر سے متعلق اسلامی تعاون تنظیم (او آئی سی) رابطہ گروپ  سے کہا ہے کہ بھارت کی جانب سے پاکستان کے خلاف سخت بیانات معمول بن رہے ہیں، جس میں فوجی کارروائی کی دھمکی بھی شامل ہے۔ایک میڈیارپورٹ کے مطابق نیو یارک میں اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس، جس میں کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں زیر بحث آئیں گی، کے حاشیہ پر او آئی سی کے رابطہ گروپ کا اجلاس ہوا۔او آئی سی کے اجلاس میں سعودی عرب، نائیجریا اور آذربائیجان نے شرکت کی۔ اقوام متحدہ کے سفیر برائے او آئی سی آبزرور مشن کے سربراہ اگشین مہدیف نے اجلاس میں او آئی سی کے سیکریٹری جنرل کی نمائندگی کی۔