تازہ ترین

حکومت قومی تعلیمی پالیسی2020کی موثر عمل آوری کی وعدہ بند:سامون

۔ 600سے زائد پیشہ وارانہ لیبارٹریاں قائم ہونگیں

تاریخ    20 ستمبر 2020 (00 : 02 AM)   


 سرینگر//تعلیمی پالیسی 2020 اور جموں کشمیر میں اس کی موثر عمل آوری کیلئے نقشہ راہ پر ایک آن لائن پینل مباحثے کا انعقاد ہوا ۔ پینل مباحثے کا اہتمام سماگرہ سکھشا جے اینڈ کے اور انڈین انسٹی چیوٹ آف پبلک ایڈمنسٹریشن ، جے کے ریجنل برانچ کی جانب سے کیا گیا ۔ مباحثے میں قریباً 150 شرکاء نے حصہ لیا جن میں چیف ایجوکیشن افسران ، ڈی آئی ای ٹیز کے پرنسپل اور سربراہان ، نجی سکولوں کے نمائندگان ، اساتذہ ، آئی آئی پی اے اور سول سوسائٹی کے ارکان نے حصہ لیا ۔ پرنسپل سیکریٹری تعلیم اور سکل ڈیولپمنٹ ڈاکٹر اصغر حسن سامون نے اپنے خطبے میں جموں کشمیر میں تعلیمی شعبے میں بہتری لانے کیلئے اٹھائے جا رہے اقدامات کو اجاگر کیا ۔ انہوں نے کہا کہ حکومت قومی تعلیمی پالیسی 2020 کی موثر عمل آوری کیلئے وعدہ بند ہے اور اس کیلئے تعلیمی ڈھانچے اور اس کے قواعد و ضوابط میں اصلاحات کئے جا رہے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ محکمہ زائداز 600  پیشہ وارانہ لیبارٹریاں قائم کر رہا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ محکمہ تعلیم ابتدائی تعلیم پر توجہ مرکوز کر رہا ہے اور اس سلسلے میں اساتذہ کی تربیت کیلئے ماہرین کی خدمات حاصل کی جائیںگی ۔ انہوں نے کہا کہ نئی تعلیمی پالیسی کے تحت اساتذہ کی کلہم تربیت کیلئے 50 گھنٹوں کی تربیت فراہم کرنے پر غور کیا جا رہا ہے ۔ اس موقعہ پر ڈائریکٹر این سی ای آر ٹی نئی دہلی پروفیسر ہرش کے سینہ پتی نے کہا کہ نئی تعلیمی پالیسی میںاکتباسی صلاحیتوں کے بجائے تقابلی صلاحیتوں پر توجہ مرکوز کی جا رہی ہے جس کی اگر موثر عمل آوری یقینی بنائی جائے تو ہمارے نوجوان ملک و قوم کیلئے ایک اثاثہ ثابت ہوں گے ۔ وائس چانسلر جموں یونیورسٹی ، پروجیکٹ ڈائریکٹر سماگری سکھشا ابھیان نے بھی اس موقعہ پر اپنے خیالات کا اظہار کیا ۔ ڈائریکٹر سیمنار ز ، آئی آئی پی اے جے کے آر بی کے بی جنڈیال نے اپنے استقبالیہ خطبے میں پینسلٹوں کو متعارف کرایا جبکہ سیکرٹری آئی آئی پی اے ، جے کے آر بی پروفیسر الکا شرما نے شکریہ کی تحریک پیش کی ۔