طالب علم جھیل ڈل میں نہانے کے دوران غرقآب

جوگی لنکر رعناواری میں کہرام،علاقے میںرواں برس میں غرقآبی کا تیسرا واقعہ

تاریخ    20 ستمبر 2020 (00 : 02 AM)   
(File Photo)

نیوز ڈیسک
سرینگر//پائین شہر کے جوگی لنکر رعناواری کا نویں جماعت کا طالب علم سنیچر کوجھیل ڈل میں نہانے کے دوران غرقآب ہوا ۔ طالب علم کی موت سے علاقہ بھر میں غم و اندوہ کی لہر دوڑ گئی اور علاقہ ماتم کدے میں تبدیل ہوا۔ جوگی لنکر علاقے میں یہ رواں برس کا یہ غرقآبی کا تیسرا واقعہ ہے ۔سنیچر کو نویں جماعت کا طالب علم کفایت احمد (عمر15سال )اپنے خالہ زاد بھائی اور دیگر دوستوں کے ہمراہ کانی کچہ جھیل ڈل نہانے کی غرض سے گیا ، جس دوران مذکورہ لڑکے نے دریاء میں چھلانگ لگائی تاہم وہ پانی سے باہر نہیں آیا اور ڈل کے پانیوں میں ڈوب گیا ۔ اس دوران آس پاس کے لوگوں نے اگرچہ پانی میں اُتر کر اس کو باہر نکالا اور فوری طور پر غوثیہ ہسپتال خانیار پہنچایا لیکن ڈاکٹروں نے اسے مردہ قراردیا۔ کفایت احمد کی اچانک موت سے علاقہ بھر میں غم و اندوہ کی لہر دوڑ گئی ۔ مذکورہ طالب علم کے بارے میں بتایا جاتا ہے کہ اس کی والدہ طلاق شدہ خاتون تھی اور بڑی محنت کرکے اپنے بیٹے کو پالتی تھی اور اس کو تعلیم کے زیور سے منورکرنے میں کوشاں تھیں ۔ کفایت اپنی ماں کا ایک واحد سہارا تھا۔ یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ جوگی لنکر رعناواری میں یہ غرقآبی کا رواں برس کا تیسرا واقعہ ہے ۔اس سے پہلے رواں ماہ 5ستمبر کو علاقے کے ڈگہ محلہ میں ابراہیم احمد شیخ ولد امتیاز احمد شیخ نامی 3سالہ بچہ اپنے گھر سے باہر نکلا اور نزدیکی ایک نالہ میں ڈوب گیا ۔ اس دوران بچے کو اگرچہ تھوڑی ہی دیر کے بعد پانی سے باہر نکالا گیا اور غوثیہ ہسپتال خانیار پہنچایا گیا تاہم ڈاکٹروں نے اسے مردہ قراردیا ۔ا س سے پہلے 27جولائی کو ایک اور بچہ جس کی عمر قریب پانچ برس تھی ،پانی میں میں ڈوب کر لقمہ اجل بن گیا تھا ۔ (مشمولات سی این آئی)

تازہ ترین