راجستھان کا سیاسی بحران ختم | گہلوت حکومت نے اسمبلی میں اعتماد کا ووٹ حاصل کیا

تاریخ    15 اگست 2020 (00 : 02 AM)   


یو این آئی
جے پور //راجستھان میں اشوک گہلوت حکومت نے کل اسمبلی میں صوتی ووٹ سے اعتماد حاصل کرلیا۔ جس نے ریاست میں کانگریس کی صفوں میں بغاوت کے باعث پیدا ہونے والے خطرہ کو ختم کیا۔پارلیمانی امور کے وزیر شانتی دھاریوال کی طرف سے تحریک عدم اعتماد کو ووٹوں کے ذریعے منظور کیا گیا ۔ یہ سچن پائلٹ کی سربراہی میں کانگریس کے 19 ناراض ممبران اسمبلی کی پارٹی میں واپسی کے بعد متوقع جیت تھی۔ اسپیکر ڈاکٹر سی پی جوشی نے دونوں فریق سے تین گھنٹے سے زیادہ وقت تک بحث کروائی۔وزیراعلیٰ اشوک گہلوت نے بحث میں اٹھائے گئے سوالات کا جواب دیتے ہوئے بھارتی جنتا پارٹی(بی جے پی)کی مرکزی قیادت کو نشانہ بنایا اور کہا کہ مرکزی رہنماوں نے حکومت گرانے کی ٹھان لی تھی،میں نے بھی یہ عزم کیا ہے کہ اپنی حکومت کسی بھی قیمت پر نہیں گرنے دوں گا۔انہوں نے کہا کہ ملک میں جس شکل میں اروناچل پردیش ،بی جے پی نے کانگریس کے 45 میں سے 40 ایم ایل اے چرا لیے۔مدھیہ پردیش،کرناٹک گوا،منی پور میں ہمارے اراکین اسمبلی کی خریدوفروخت ہوئی۔اس طرح آئین کی دھجیاں اڑائی جارہی ہیں۔انہوں نے کہا کہ ایسی ہی سازش یہاں بھی کی گئی اس میں بی جے پی کامیاب نہیں ہوسکی۔انہوں نے کہا کہ اس سازش میں بی جے پی کے مقامی لیڈران کو نظر انداز کر کے مرکزی وزیر حکومت کو غیر مستحکم کرنے کی سازش رچتے رہے۔کہا کہ ایک آڈیو میں مرکزی وزیر کا کردار بھی سامنے آیا ہے۔
 

تازہ ترین