تازہ ترین

۔15اگست کی آمد پر سرینگر میں سیکورٹی کے سخت انتظامات

کرکٹ سٹیڈیم اورلالچوک سیل ،سیول لائنز بند، ہر جگہ ناکے اور تلاشیاں

تاریخ    14 اگست 2020 (00 : 02 AM)   


بلال فرقانی
سرینگر//وادی میں15اگست کی مناسبت سے سخت ترین سیکورٹی انتظامات کئے گئے ہیں۔15 اگست کے پیش نظر غیر معمولی سیکورٹی انتظا مات اورموجودہ لاک ڈائون سے جمعرات کو وادی بھر میں پر تنا ئو صور تحا ل رہی ۔شہر میں دکانیں اور دیگرتجارتی اور کاروباری سرگرمیاں ٹھپ رہیںتاہم لوگوںکے چلنے پھرنے پر کوئی قدغن نہیں تھی۔کئی روٹوں پر چھوٹی مسافر گاڑیاں بھی نظر آئیں۔سیول لائنز میں تاریخی لالچوک مکمل طور سیل رہا۔ سرینگر میں15اگست کے حوالے سے سب سے بڑی تقریب سونہ وار کے کرکٹ اسٹیڈیم میں منعقد ہوگی۔جہاں لیفٹیننٹ گورنر ترنگا لہرائیں گے۔سٹیڈیم کو3روز قبل ہی مختلف فورسز ایجنسیوں نے اپنی تحویل میں لیا ہے،اور اسکے باہر سے گزرنے والی سڑک پر عارضی بنکروں کو قائم کیا گیا ہے،جس میں فورسز اہلکاروں کو تعینات کیا گیا ہے۔ اسٹیڈیم کے ارد گرد تین دائروں والی سیکورٹی تعینات کی گئی ہیں۔ شہر میں اضافی ناکے لگائے گئے ہیں۔ تقریبات کے دوران جنگجوئوں کے حملوںکا خدشہ موجود ہے جسے ٹالنے کیلئے پولیس وفورسز کو متحرک کردیا گیا ہے۔ نجی گاڑیوں اور موٹر سائیکلوں کی تلاشیاں بھی جاری ہیں،اور انکے دستاویزات کی بھی جانچ کی جارہی ہے۔ مولانا آزاد روڑ، بٹہ مالو ، جہانگیر چوک ، بمنہ ، رام باغ ، نشاط ، مگھر مل باغ ، خانیار ، قمرواری ، پارم پورہ اور سیمنٹ کدل میں وقفے وقفے سے سکوٹر و موٹر سائیکل سواروں ، آٹو رکھشا ، نجی گاڑیوں و مسافر گاڑیوں کی تلاشی لی جاتی رہی اور گاڑیوں کی رجسٹریشن سے متعلق دستاویزات کی جانچ پڑتال کا عمل بھی تیز رہا ۔ سرینگر میں داخل ہونے والے 4بڑی شاہراہوں زکورہ کراسنگ، رام باغ، پارم پورہ اور پانتھ چوک کے نزدیک پولیس نے خصوصی ناکے بٹھائے ہیں تاکہ جنگجوئوں کے سرینگر میں ممکنہ داخلے کو قبل از وقت روکا جائے ۔ ان ناکوں پر باریک بینی کے ساتھ گاڑیوں کی تلاشیاںلی جارہی ہیں۔ ادھر  پولیس نے ایک مشترکہ کارروائی میں سرینگر کے شہید گنج علاقہ کو محاصرے میں لیا اور تلاشییاں لیں۔ گذشتہ روز آبی گذر علاقے میں ہاوس بوٹوں کی تلاشیاں لیں گئیں۔ 15 اگست کی تیاریوں کے بارے میں آئی جی پی کشمیر نے کہا کہ سیکورٹی کے مکمل انتظامات کئے گئے ہیں اور مشتبہ افراد پر نگاہ رکھنے کے لئے زمینی اور فضائی نگرانی کی جائے گی۔انہوں نے کہا’’تمام سیکورٹی ادارے جنگجوئوں کے کسی بھی ممکنہ حملے کو ناکام بنانے کے لئے قریبی ہم آہنگی برقرار رکھے ہوئے ہیں‘‘۔آئی جی پی نے کہا ’’ جنگجوئوںکی موجودگی کا خطرہ موجود ہے لیکن ہم ان کے تمام منصوبوں کو ناکام بنانے اور سری نگر سمیت پورے وادی میں 15اگست کی تقریبات کو احسن طریقے سے یقینی بنانے کے لئے تیار ہیں‘‘۔ 
 
 

تقریبات میں شرکت

افسران کیلئے سرکیولر جاری

بلال فرقانی
 
سرینگر//جموں کشمیر کی حکومت نے سرینگر اور جموں میں منعقدہ ہونے والی15اگست کی تقاریب میں انڈر سیکریٹری عہدے کے اوپر افسروں کی موجودگی کو لازمی قرار دیا ہے۔حکومت نے جمعرات کے روز سرینگر اور جموں میں تعینات انڈر سکریٹریوں کے عہدے سے اوپر کے تمام افسران سے کہا  ہے کہ وہ سرینگر کے شیر کشمیر کرکٹ اسٹیڈیم سونہ وار اور جموں کے پریڈ گراؤنڈ میں بالترتیب منعقدہ اہم تقاریب میں ڈیوٹی کے حصے کے طور پر شرکت کریں۔سرکار کی جانب سے اس سلسلے میں جاری سرکیولر میں کہا گیا ہے کہ یہ اہم قومی تقریبات ہیں، سبھی سرکاری ملازم کا فرض ہے کہ وہ اس تقریب میں شرکت کریں ‘‘۔