تازہ ترین

سرکاری تعمیراتی کامو ں میں خرد برد

سابق سپرانٹنڈنٹ انجینئر کیخلاف فرد جرم عائد

تاریخ    7 اگست 2020 (00 : 02 AM)   


سرینگر// انسداد رشوت ستانی ادارےنے محکمہ تعمیرات عامہ کے سابق سپر انٹنڈنٹ انجینئر کے خلاف عدالت میں بدعنوانی کے ایک کیس میں فرد جرم عائد کی ہے ۔پولیس اسٹیشن ویجی لنس کشمیر میں ایف آئی آر زیر نمبر26/2011درج کیا گیا تھاجس کے تناظر سپیشل جج اینٹی کورپشن اننت ناگ کی عدالت میں4افراد کے خلاف چالان پیش کیا گیا۔اینٹی کورپشن بیورو نے محکمہ تعمیرات عامہ کے ایک سبکدوش سپرانٹنڈنٹ انجینئر ،جے کے پی سی سی یونٹ اسکینڈ کے ڈرافٹس مین اور یونٹ11کولگام کے سینئر اسسٹنٹ سمیت ایک اور شخص کے خلاف مجرمانہ سازش،دستاویزات میں قلم زنی،اور انہیں جعلسازی کیلئے استعمال کرنے کی پاداش میں یہ فرد جرم عدالت میں پیش کی۔ انٹی کورپشن بیورو کے مطابق یہ معاملہ2008سے2010تک کا ہے جب جموں کشمیر پروجیکٹس کنسٹریکشن کارپوریشن کو ضلع کولگام میں کئی سرکاری دفاتر اور عمارتیں تعمیر کرنے کا کام سونپا گیا،جن میں ضلع ترقیاتی کمشنر کے دفتر و منی سیکریٹریٹ کولگام کی تعمیر کا کام بھی شامل ہیں۔اے سی بی کا کہنا ہے کہ  ایک اینٹ بٹھہ مالک نے اس وقت کے ڈپٹی جنرل منیجر جے کے پی سی سی11یونٹ،ڈرافٹص مین اور کیمپ کلرک سے مل کر مجرمانہ سازش کی،اور مختلف سرکاری دفاتروں اور عمارتوں کی تعمیر کیلئے غیر قانونی اور بدعنوانی کرکے بڑی تعداد میں اینٹوں کی خریداری کی۔ اینٹی کورپشن بیورو کا کہنا ہے کہ اس مقصد کیلئے ان چاروں افراد نے ایک دوسرے کی مدد سے دستاویزات میں قلم زنی کی،اور ان کا ناجائز استعمال کیا،تاکہ اس بات کو یقینی بنایا جائے کہ دیگر تمام بولی دہندگان کو مقابلے سے دور رکھا جائے۔ فرد جرم میں کہا گیا ہے کہ ڈپٹی جنرل منیجر نے دانستہ طور پر اینٹوں کیلئے مطلوب ٹینڈروں کو کم تشہیر دی اور ان ہی اخبارات میں ٹینڈروں کو شائع کیا گیا جو کولگام علاقے میں تقسیم کئے جاتے ہیں۔بیورو کا کہنا ہے کہ اس طریقے سے انہوں نے مخصوص بٹھہ مالک کو اضافی قیمتوں میں ٹینڈر تفویض کیااور یہ قیمتیں اس قدرزیادہ تھیں کہ اس وقت علاقے میں کرایہ سمیت اینٹوں کی قیمت اس سے کم تھی۔بیورو کا مزید کہنا ہے کہ اس طرح9لاکھ18ہزار833اینٹوں کا ٹینڈر فی اینٹ4روپے44پیسہ کے حساب سے دیا گیا،جبکہ اس وقت علاقے میں اینٹ کی قیمت معہ کرایہ3روپے76پیسہ تھی۔ فرد جرم میں مزید کہا گیا ہے کہ اس نتیجے میں6لاکھ24ہزار806روپے کو چونا خزانہ عامرہ کو لگایا گیا،جس کے بعد ویجی لنس آرگنائزیشن کشمیر نے کیس درج کرکے تحقیقات کا سلسلہ شروع کیا۔بیورو کا کہنا ہے چاروں افراد کو پولیس حراست میں عدالت کے سامنے پیش کیا گیا۔