تازہ ترین

وادی میں کورونا بندشوں کا عمل جاری

۔2 دن بعد لاک ڈائون میں کہیں نرمی تو کہیں سختی

تاریخ    7 اگست 2020 (00 : 02 AM)   


بلال فرقانی
سرینگر// 6اگست بروز جمعرات کورونا لاک ڈائون کے تیسرے مرحلے میں سرینگر سمیت وادی کے دیگر علاقوں میںبندشیں عائد رہیں تاہم شہر سرینگر، جہاں کورونا وائرس متاثرین کی تعداد سب سے زیادہ ہے، میں آٹو رکھشائوں اور چھوٹی مسافربردار گاڑیوں نے ٹرانسپورٹ ضوابط کی دھجیاں بکھیر دیں۔ عید کے بعد جمعرات کو بھی بندشوں کا مسلسل سلسلہ جاری رہا تاہم اس دوران کچھ علاقوں میں نرم اور کچھ میں سخت بندشیں دیکھنے کو ملیں۔سرینگر میں بیشتر سڑکوں کی تار بندی کی گئی تھی اور لالچوک کی طرف جانے والے راستوں کو مسدود رکھا گیا تھا،تاہم ڈلگیٹ اور جہانگیر چوک تک چھوٹی مسافربردار گاڑیوں اور آٹو رکھشائوں کی بھر مار سے کئی جگہوں پر جام کے مناظر بھی دیکھنے کو ملے۔صبح کے وقت سڑکوں پر ان گاڑیوں کی تعداد کافی زیادہ تھی اور معیاری عملیاتی طریقہ کار کو بھی بلائے طاق رکھ کر چھوٹی مسافر بردار گاڑیوں کو مسافروں سے کھچا کھچ بھرا  دیکھاگیا ،تاہم بعد از دوپہر ان کی تعداد میں کافی کمی واقع ہوئی۔سیول لائنز کیساتھ ساتھ شہر خاص میں ہر طرح کی دکانیں ،کاروباری ادارے اور تجارتی مراکز بند رہے۔شہر میںکورونا لاک ڈائون کے سبب جملہ سرگرمیاں مسلسل ٹھپ ہیں۔ فورسز نے مختلف رابطہ سڑکوں پر مشترکہ طور پر ناکے لگائے تھے اور رکا وٹیں بھی کھڑی کی گئی تھیں ،جسکی وجہ سے کئی مقامات پر نجی گاڑیوں کا جام بھی لگ گیا ۔ وادی کشمیر کے دیگر اضلاع بانڈی پورہ ،کپوارہ ،بارہمولہ ،بڈگام ،گاندر بل ،پلوامہ ،کولگام ،شوپیان اور اننت ناگ میں بھی کورونا لاک ڈائون کا ملا جلا ردِ عمل دیکھنے کو ملا۔ان سبھی اضلاع میں کہیں سختی کیساتھ لاک ڈائون جاری ہے ،تو کہیں لاک دائون میں نرمی بھی تھی ۔ اگرچہ گزشتہ دو روز کے دوران سخت ترین پابندیاں اور بندشیں عائد رہیں ،تاہم جمعرات کو ان میں کافی نرمی دیکھنے کو ملی ،جس دوران لوگ ضروری چیزوں کی خریداری اور دیگر کاموں کیلئے گھروں سے باہر آئے ۔ نامہ نگار اشرف چراغ کے مطابق سرحدی ضلع کپوارہ میں کورونا لاک ڈائون میں10اگست تک توسیع کی گئی ہے ۔بارہمولہ اورپلوامہ اضلاع میں بھی تا حکم ثانی کورونا لاک ڈائون کے تحت نافذ بندشوں اور پابندیوں میں توسیع کی گئی ہے۔