لکھن پور ٹول پلازہ پر اپوزیشن جماعتیں متحد

مقامی نوجوان کی حمایت کااعلان ،دستخطی مہم شروع

تاریخ    29 جولائی 2020 (00 : 03 AM)   


سید امجد شاہ
جموں// لکھن پور ٹول پلازہ نے تمام اپوزیشن سیاسی جماعتوں کو بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے گڑھ میں مقامی نوجوانوں سے ہاتھ ملانے کا موقعہ فراہم کیا ہے۔آل پارٹی ٹول پلازہ ایکشن کمیٹی یوتھ چیئرمین سنی شرما کے مطابق ’’آج ہم نے ٹول پلازہ کی مخالفت کرتے ہوئے لکھن پور میں دستخطی مہم کا آغاز کیا اور 2000 سے زائد افراد نے اس پر دستخط کئے ‘‘۔سنی شرما نے 11 سال قبل امر ناتھ زمینی تنازعہ پر ہوئی ایجی ٹیشن میں حصہ لیا تھا۔ شرما نے کہا کہ وہ لکھن پور میں ٹول پلازہ کے خلاف اپنا احتجاج تیز کردیں گے اور آنے والے دنوں میں وہ بند کی کال دیں گے۔ان کاکہناتھا’’ضلع کے نوجوانوں میں حکومت کے خلاف ناراضگی ہے، لاک ڈائون ، اشیائے ضروریہ کی قیمتوں میں اضافے اور پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں بڑھ جانے کی وجہ سے بہت سے ملازمت سے ہاتھ دھو بیٹھے ہیں، نوجوانوں کو ٹول پلازہ کے ذریعہ سڑکوں پر آنے پر مجبور کیا گیاہے‘‘۔معروف سماجی کارکن آئی ڈی کھجوریہ نے کشمیرعظمیٰ سے بات کرتے ہوئے کہا’’لوگ اپنے خصوصاً نوجوانوں کے مستقبل سے پریشان ہیں، وہ 5 اگست کے بعد کیا ہوا اس پر تبادلہ خیال کر رہے ہیں‘‘۔بی جے پی کے سینئر لیڈر و سابق ایم ایل اے کٹھوعہ راجیو جسروٹیا نے اعتراف کیا کہ لوگوں میں ناراضگی ہے اور انہوں نے عوام کی تشویش کو پارٹی تک پہنچادیاہے ۔ان کاکہناتھا’’لوگوں کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے کیونکہ وہ روٹ پر روزانہ سفر کرتے ہیں، محدود بجٹ کی وجہ سے انہیں تشویش لاحق ہے، ہر کسی کو اس کی فکر ہے ‘‘۔ کٹھوعہ ضلع بی جے پی کا مضبوط گڑھ ہے جہاں لوگوں نے ٹول پلازہ کے قیام پر شدید رد عمل کا اظہار کیا ہے اور اس کو منسوخ کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔اس اقدام سے اپوزیشن کی سیاسی جماعتوں کو موقعہ ملا ہے کہ وہ ایک پلیٹ فارم پر آئیں اور مقامی لوگوں کے احتجاج میں شامل ہوں ۔

تازہ ترین