ہیلتھ ایڈوائزری نظر انداز

اضافی کرایہ وصولنے کے باوجود گاڑیوں میں بھیڑ

تاریخ    11 جولائی 2020 (45 : 02 AM)   
(File Photo)

سرینگر//شہر سرینگر اوروادی کے دیگر علاقوں میں پبلک ٹرانسپورٹ کی سرگرمیوں کو اگرچہ بحال کردیا گیا تاہم ٹرانسپورٹروں کی جانب سے ہیلتھ ایڈوائزری کو بالائے طاق رکھا جارہا ہے جس کے نتیجے میں کوروناوائرس تیزی کے ساتھ پھیل جانے کا امکان بڑھ گیا ہے ۔ وادی کشمیر میں ایک طرف جہاں کووڈ19نے اپنا جال پوری طرح بچھادیا ہے اور کورونامعاملات میں تیزی کے ساتھ اضافہ کے ساتھ ساتھ اموات بھی بڑھ رہی ہے ۔ اس بیچ سرکار کی جانب سے پبلک ٹرانسپورٹ کی سرگرمیوں کو بھی کئی شراط پر بحال کیا گیا ہے جن میں مسافر گاڑیوں، سومو اور دیگر گاڑیوں میں سماجی دوری برقرارکھنے کے ساتھ ساتھ مسافروں کیلئے ماسک کا استعمال بھی لازمی بنایا گیا ہے تاہم ٹرانسپورٹروں کی جانب سے محکمہ ہیلتھ کی ایڈوائزری کو بالائے طاق رکھا جارہا ہے۔ شہر میں کئی روٹوں پر اگرچہ سومو سروس جزوی طور بحال ہوئی ہے تاہم گاڑیوں میں مسافروں کو پرانے طریقے سے ہی سوار کیا جارہا ہے ۔سرکار نے اگرچہ ٹرانسپورٹروں سے کہا ہے کہ وہ مسافر کرایہ میں 30فیصدی اضافہ کے ساتھ گاڑیوں میں کم مسافروں کوسوار کریںتاہم ٹرانسپورٹروں نے ایک طرف کرایہ میں30فیصدی اضافہ تو کردیا لیکن اس کے ساتھ ہی مسافروں کو گاڑیوں میں کھچا کھچ بھرا جارہا ہے جس کے باعث مہلک وائرس مزید تیزی کے ساتھ پھیل جانے کا امکان ہے ۔عوامی حلقوں نے مانگ کی ہے کہ اس جانب توجہ دی جائے ۔ ( سی این آئی )
 

تازہ ترین