تازہ ترین

کورونا سے ایک اور موت، مہلوکین کی تعداد 34

مثبت کیسوں میں26حاملہ خواتین سمیت139کا اضافہ

تاریخ    4 جون 2020 (00 : 03 AM)   


پرویز احمد

 اسپتال سیکورٹی گارڈ اور طبی عملے کے 3افراد بھی متاثرین میں شامل

 
سرینگر//پٹن میں29مئی کو فوت ہونے والے86سالہ معمر شخص کی رپورٹ 5دن بعد مثبت آئی ہے۔ اسطرح جموں و کشمیر میں کورونا سے ہونے والے اموات کی تعداد 34ہوگئی ہے جن میں 4جموں جبکہ 30کشمیر سے ہیں۔  ادھر بدھ کو جموں کشمیر میں 26حاملہ خواتین، 4بی ایس ایف اہلکار،3ڈاکٹر، ایک ایکسرے ٹیکنیشین، اسپتال سیکورٹی گارڈ سمیت 139افراد کی رپورٹیں مثبت آئی ہیں، متاثرین کی کل تعداد 2857 ہوگئی ہے جن میں سے 672جموں جبکہ 2185 مریضوں کا تعلق کشمیر سے ہے۔بدھ کے متاثرین میں 1اننت ناگ،2کولگام، 14سرینگر، 10 کپوارہ، 27بارہمولہ، 24شوپیان، 9 بانڈی پورہ، 6بڈگام، 13پلوامہ، 3 گاندربل،10جموں، 3 ادھمپور،10پونچھ، 3سانبہ اور 4راجوری سے تعلق رکھتے ہیں۔ 

معمر شخص فوت

 کیمونٹی ہیلتھ سینٹر پٹن میں فوت ہونے والے 86 سالہ معمر شخص کی رپورٹ 5دن بعد مثبت آئی ہے۔فوت ہونے کے بعد کمیونٹی ہیلتھ سینٹر میں ڈاکٹروں نے معمرشخص کا نمونہ حاصل کرکے تشخیص کیلئے بھیجاتھا ،جو بدھ کو سی ڈی لیبارٹری میں مثبت قرار دیا گیا۔ ڈپٹی کمشنر بارہمولہ جی این ایتو نے بتایا’’ مذکورہ شخص کی موت کیمونٹی ہیلتھ سینٹر پٹن جاتے ہوگئی تھی لیکن ڈاکٹروں نے اسکا نمونہ حاصل کیا تھا، جو بدھ کو مثبت آیا ‘‘۔  انہوں نے کہا ’’ مریض کی تدفین کورونا وائرس کیلئے بنائے گئے قوائد و ضوابط کے تحت کی گئی ‘‘۔    

سی ڈی اسپتال

میڈیکل کالج سرینگر ترجمان ڈاکٹر محمد سلیم خان نے بتایا ’’پچھلے 24گھنٹوں کے دوران1000نمونوں کی تشخیص کی گئی جن میں سے93مریضوں کی رپورٹیں مثبت آئیں جبکہ 907نمونے منفی قرار دئے گئے‘‘۔ ڈاکٹر سلیم خان نے بتایا ’’66میں سے26بارہمولہ،9بانڈی پورہ،11کپوارہ ،3گاندربل، 15شوپیاںاور1بڈگام اور ایک سرینگر سے ہے۔ڈاکٹر سلیم خان نے بتایا ’’ بارہمولہ کے 26مریضوں میں سے 13حاملہ خواتین، 2ڈاکٹروں سمیت 19افراد سوپور ضلع سے ہیں جبکہ4حاملہ خواتین، وائرس متاثرین کیلئے نامزد خصوصی اسپتال کے ایک سیکورٹی گارڈ سمیت 7افراد جی ایم سی بارہمولہ میں مثبت قرار دئے گئے ہیں‘‘۔ انہوں نے کہا ’’ بانڈی پورہ میں کے 9مریضوں کی رپورٹ مثبت آئی اور ان 9مریضوں میں ایک بی ایس ایف اہلکار اور ایک ایکسرے ٹیکنیشین بھی شامل ہے‘‘۔ڈاکٹر سلیم خان نے بتایا ’’ شوپیاں ضلع سے تعلق رکھنے والے 15مریضوں کی رپورٹیں مثبت آئیں ہیں جن میں 4حاملہ خواتین بھی شامل ہیں۔ انہوں نے کہا ’’ سرحدی ضلع کپوارہ میں 4بی ایس ایف اہلکاروں، 4حاملہ خواتین اور ایک ڈاکٹر سمیت 11مریضوں کی رپورٹیں مثبت آئیں ہیں‘‘۔ انہوں نے کہا’’ وسطی کشمیر کے گاندربل ضلع میں 3کی رپورٹ مثبت آئی اور ان میں ایک حاملہ خاتون بھی شامل ہے۔ 

سکمز 

میڈیکل سپر انٹنڈنٹ ڈاکٹر فاروق احمد جان نے بتایا ’’ پچھلے 24گھنٹوں جے دوران 1048نمونوں کی تشخیص کی گئی جن میں سے 15مثبت  جبکہ 1037رپورٹیں منفی آئی ہیں‘‘۔ ڈاکٹر جان نے بتایا کہ 15میں سے 10کا تعلق سرینگر ضلع سے ہے‘‘۔ انہوں نے کہا ’’3بڈگام، ایک اننت ناگ اور ایک کولگام سے تعلق رکھتا ہے۔ ڈاکٹر جان نے بتایا کہ سرینگر میں مثبت قرار دئے گئے 10مریضوں میں سے 3احمد نگر،1الٰہی باغ،مڈ 1باغ نوشہرہ،1شاہ فیصل کالونی صورہ،1باغوان پورہ لال بازار، 1برزلہ،1نورباغ اور1برزہامہ سرینگرہے‘‘۔ ڈاکٹر جان نے بتایا’’ بڑگام سے تعلق رکھنے والے 3مریضوں میں سے ایک کنی پورہ بڈگام،ایک اومپورہ بڈگام اور ایک بیورہ بڈگام سے ہے‘‘۔ انہوں نے کہا کہ اس کے علاوہ ایک 30سالہ نوجوان کا تعلق دمہال اننت ناگ اور ایک 27سالہ خاتون کا تعلق ہمپشری کولگام سے ہے۔ انسٹی ٹیوٹ کے شعبہ عوامی رابطہ کے اسسٹنٹ ڈائریکٹر کی جانب سے جاری کئے گئے اعدادوشمار میںبتایا گیا ہے کہ ابتک کل500مشتبہ مریضوں کا داخلہ کیا گیا جن میں سے423مریضوں کو قرنطینہ کی مدت مکمل کرنے کے بعد گھر روانہ کردیا گیا جبکہ53مثبت قرار دئے گئے مریضوں کو گھر بھیجا گیا ہے۔ ابتک55700نمونوں کی تشخیص کی گئی ہے جن میں سے54759کو منفی قرار دیا گیا ہے جبکہ941مریضوں کی رپورٹیں مثبت آئیں ہیں۔ 

 جموں

بدھ کو جی ایم سی جموں ، کرشنا ریسرچ لیبارٹری اور آئی ائی ایم سرینگر سے 38افراد کی رپورٹیں مثبت آئی ہیں جن میں 19جی ایم سی جموں،8کرشنا لیبارٹری، 8 کے آر ایس ایل ائے اور 3کی رپورٹ آئی آئی آئی ایم سرینگر سے مثبت آئی ہے۔  

حکومتی بیان

حکومت نے کہا ہے کہ پچھلے چوبیس گھنٹوں کے دوران کورونا وائرس کے139نئے مثبت معاملات سامنے آئے ہیںجن میں سے109کا تعلق کشمیر صوبے سے اور 30 کا تعلق جموں صوبے سے ہیں اور اس طرح مثبت معاملات کی کل تعداد2,857تک پہنچ گئی ہے۔حکومت کی طرف سے جاری کئے گئے روزانہ میڈیا بلیٹن میں بتایا گیا ہے کہ نوول کورونا وائرس کے2,857 مثبت معاملات سامنے آئے ہیں جن میں سے 1,816سرگرم معاملات ہیں ۔ اب تک 1007اَفراد شفایاب ہوئے ہیںاور34اَفراد کی موت واقع ہوئی ہے ۔اِس دوران بدھ کو مزید34 مریض صحتیاب ہوئے ہیںجن میںجموں صوبے کے04 اور کشمیر صوبے کے 30 اَفراد شامل ہیں ، جن کو جموں و کشمیر کے مختلف ہسپتالوں سے رخصت کیا گیا۔بلیٹن میں مزید کہا گیا ہے کہ اب تک 1,89,364ٹیسٹوں کے نتائج دستیاب ہوئے ہیں جن میں سے  03؍جون2020ء کی شام تک 1,86,506نمونوں کی رِپورٹ منفی پائی گئی ہے ۔علاوہ ازیں اب تک1,93,145افراد کو نگرانی میں رکھا گیا ہے جن کا سفر ی پس منظر ہے اور جو مشتبہ معاملات کے رابطے میں آئے ہیں۔ ان میں 44,389 اَفراد کو ہوم قرنطین میں رکھا گیا ہے جس میں سرکار کی طرف سے چلائے جارہے قرنطین مراکز بھی شامل ہیں ۔ اس کے علاوہ45 اَفراد کو ہسپتال قرنطین میں رکھا گیا ہے۔1,816کو ہسپتال آئیسولیشن میں رکھا گیا ہے جبکہ 53,639 اَفراد کو گھروں میں نگرانی میں رکھا گیا ہے۔اسی طرح بلیٹن کے مطابق93,222اَفرادنے 28روزہ نگرانی مدت پوری کی ہے۔بلیٹن کے مطابق ضلع اننت ناگ میں 350 مثبت معاملے سامنے آئے ہیںجن میں 193 سرگرم ہیں۔ 152 شفایاب ہوئے ہیں اور05 کی موت واقع ہوئی ہے۔کولگام میں313 مثبت معاملات پائے گئے ہیںجن میں264سرگرم معاملات ہیںاور 45صحتیاب ہوئے ہیںاور04 کی موت واقع ہوئی ہے۔اُدھر سری نگر میں اب تک کورونا وائرس کے 319 معاملات کی تصدیق ہوئی ہے جن میں سے169 سرگرم معاملات ہیں ۔143 مریض صحتیاب ہوئے ہیں جبکہ07 کی موت واقع ہوئی ہے جبکہ کپواڑہ میں 299مثبت معاملات درج کئے گئے ہیں اور 222 سرگرم معاملات ہیں اور76صحتیاب ہوئے ہیںجبکہ ایک کی موت واقع ہوئی ہے۔ضلع بارہمولہ میں اب تک کورونامریضوں کی تعداد 272ہوئی ہیںجن میں سے 161سرگرم معاملات ہیں اور07مریضوں کی موت واقع ہوئی ہیںاور 104صحتیاب ہوئے ہیں۔بانڈی پورہ میں اب تک 161 مثبت معاملات سامنے آئے ہیں جن میں سے24 سرگرم معاملات ہیں ، 136مریض صحتیاب ہوئے ہیںجبکہ ایک کی موت واقع ہوئی ہے۔اِدھرضلع شوپیان میں 205 مثبت معاملات سامنے آئے ہیںجن میں 93 سرگرم ہیں اور 109صحتیا ب ہوئے ہیںجبکہ 03کی موت واقع ہوئی ہے۔ضلع بڈگام میں کورونا وائرس سے متاثرہ افراد کی کُل تعداد اب تک 124ہوئی ہیںجن میں سے 55سرگرم ہیں اور67اَفراد صحتیاب ہوئے ہیںجبکہ02 کی موت واقع ہوئی ہے ۔گاندربل میں کل 37مثبت معاملات سامنے آئے ہیں جن میں11 سرگرم معاملات ہیں اور 26 اَفراد شفایاب ہوئے ہیں۔پلوامہ ضلع میں کووِڈ ۔19کے 105 معاملات کی تصدیق ہوئی ہے جن میں92 سرگرم معاملات ہیں اور 13  مریض صحتیاب ہوئے ہیں۔ اسی طرح  جموں میں وائر س کے 167مثبت معاملات پائے گئے ہیں جن میں124سرگرم معاملات ہیں اور41 صحت یاب ہوئے ہیںاور02 کی موت واقع ہوئی ہیجبکہ رام بن میں153معاملات سامنے آئے ہیںجن میں 137سرگرم معاملات ہیں اور16 شفایاب ہوئے ہیںجبکہ کٹھوعہ میں80مثبت معاملہ سامنے آئے ہیںجن میں 53 سرگرم معاملات ہیںاور 27اَفراد صحتیاب ہوئے ہیں۔دریں اثنأاودھمپور ضلع میں اب تک کورونا مریضوں کی کُل تعداد 72 ہوئی ہیں جن میں سے 45معاملات سرگرم ہیں۔ 26اَفراد صحتیاب ہوئے ہیں جبکہ ایک کی موت واقع ہوئی ہے۔ ضلع سانبہ میں 48 مثبت معاملے کی تصدیق ہوئی ہے جن میں 35 سرگرم معاملات ہیں اور 13اَفراد شفایاب ہوئے ہیں۔اس طرح پونچھ میں59معاملے سامنے آئے ہیں جن میں 58سرگرم معاملات ہیں جبکہ ایک شفایاب ہوا ہے ۔۔راجوری ضلع میں کورونا کے اب تک40 مریض پائے گئے ہیںجن میں 35 معاملے سرگرم ہیں اور 05مریض شفایاب ہوئے ہیں اورریاسی میں بھی14 معاملات سامنے آئے ہیں جن میں11سرگرم ہیں اور03 اَفراد شفایاب ہوئے ہیں۔ کشتواڑ میں12 مثبت معاملے سامنے آئے ہیں جن میں09 معاملے سرگرم ہیں اور03 مریض پوری طرح سے صحتیاب ہوئے ہیں جبکہ ڈوڈہ میں 27 معاملات سامنے آئے ہیںجن میں سے 25معاملات سرگرم ہیں جبکہ ایک مریض پوری طرح صحتیاب ہوا ہے اور ایک مریض کی موت واقع ہوئی ہے۔
 
 

ملزم مثبت قرار

۔7پولیس اہلکار قرنطین،4بی ایس ایف اہلکار بھی متاثر

 پرویز احمد+اشرف چراغ
 
سرینگر +کپوارہ // گھریلو تشدد کے الزام میں پولیس سٹیشن نوہٹہ میں بند ایک ملزم کا ٹیسٹ مثبت آنے کے بعد اسکے رابطے میں آئے  7پولیس اہلکار قرنطین کر لئے گئے ہیں۔قابل ذکر ہے کہ وادی میں کورونا وائرس سے متاثرہ پولیس اہلکاروں کی تعداد پہلے ہی 119تک پہنچ گئی ہے ۔ بدھ کو کپوارہ میں سرحدی حفاظتی فورس کے 4اہلکاروں میں بھی وائرس کی تصدیق ہوئی ہے۔نوہٹہ پولیس نے گھریلو تشدد کے ایک کیس میں کلائی اندر رعناواری کے ایک شخص کو حراست میں لیا تھا، جس کے خلاف کیس بھی درج کیا گیا ہے۔مذکورہ ملزم کو کھانسی اور بخار ہوا اور اسے فوری طور پر اسپتال لیا گیا جہاں اس کے نمونے لئے گئے جو بدھ کو مثبت آگئے۔اسکے رابطے میں آنے والے 7پولیس جوانوں کو قرنطین کرلیا گیا ہے جبکہ دیگر کئی پولیس اہلکاروں کے نمونے بھی حاصل کئے گئے ہیں۔ادھر وادی میں پہلے ہی کپوارہ ڈسٹرکٹ پولیس لائنز کے دو اہلکاروں، ماگام پولیس سٹیشن میں 8 ، بارہمولہ میں5، پولیس لائنز اننت ناگ  میں 78،کولگام پولیس کیمپ میں 21، دمحال ہانجی پورہ پولیس کیمپ میں ایک، بانڈی پورہ میں 2اہلکاروںکے علاوہ بڈگام پولیس لائنز میں 2اہلکار وں کے نمونے مثبت قرار پائے گئے ہیں۔ دریں اثناء ترہگام کپوارہ  میں 102بٹالین بی ایس ایف کیمپ میں تعینات 4اہلکاروں کو بھی وائرس ہوا ہے۔پولیس نے کہا کہ یہ چاروں اہلکار چھتٰ پر گئے ہوئے تھے اور 29مئی کو اپنی ڈیوٹی پر حاضر ہوئے۔تاہم چاروں کو احتیاطی طور پر  یونٹ قرنطین میں ہی رکھا گیا اور 30مئی کو انکے نمونے لئے گئے جو بدھ کو مثبت قرار  پائے گئے۔بی ایس ایف حکام نے کہا کہ انکے ممکنہ رابطوں کی نشاندہی کی جارہی ہے۔دریں اثناء  بدھ کو پولیس لائنز اننت میں تعینات 20اہلکاروں کی رپورٹ منفی آنے کے بعد انہیں انتظامی قرنطین سے رخصت کیا گیا۔
 

 لاک ڈائون کا73واںدن

پائین شہرمیں سرگرمیاں، سیول لائنز بدستور بند

بلال فرقانی
 
سرینگر// ملک گیر لاک ڈائون کے 73ویںروز بدھ کو شہر سرینگر میں مختلف صورتحال دیکھی گئی۔ یکم جون سے ضلع انتظامیہ سرینگر کی جانب سے محدود تجارتی سرگرمیاں شروع کرنے کی اجازت دینے کیساتھ ہی پائین شہر میں کم و بیش سبھی تجارتی سرگرمیاں بحال ہوتی ہوئی نظر آنے لگی ہیں جبکہ تجارتی سرگرمیوں کی بحالی سے عام لوگوں کی آمد و رفت اور نجی گاڑیوں کی آواجاہی میں بھی کافی اضافہ دیکھا گیا۔ضلع انتظامیہ سرینگر نے ریڈ زون کے باہر کے علاقوں میں نئے قواعد و ضوابط کے تحت محدود کاروباری سرگرمیاں شروع کرنے کی اجازت دی ہے جس کے نتیجے میں قریب اڈھائی ماہ کے بعد پائین شہر میں معمولات زندگی بحال ہونا شروع ہوگئی ہے اور بدھ کو پہلی بار سیول لائنز میں ٹریفک جام کے مناظر بھی دیکھے گئے۔پائین شہر میں جہاں بیشتر تجارتی سرگرمیاں نظر آئیں البتہ بڑے مارکیٹ جزوی طور پر بند رہے جبکہ سیول لائنز علاقہ مکمل طور پر بند رہا۔لال چوک، بڈشاہ چوک، مائسمہ مارکیٹ، کوکر بازار، امیرا کدل مارکیٹ،جہانگیر چوک،مہاراجہ بازار،ہری سنگھ ہائی سٹریٹ، بٹہ مالو، ریذیڈنسی روڑ، پولو وویو،گائو کدل مارکیٹ، حاجی مسجد مارکیٹ، اوقاف مارکیٹ، ایکسچینج روڑ، بر بر شاہ،ڈلگیٹ، جواہر نگر، رام باغ، اقبال مارکیٹ گوگجی باغ، چھانہ پورہ، نٹی پورہ، باغات برزلہ اور دیگر بازار بند رہے۔ ان علاقوں میں کہیں کہیں کوئی اکا دکا دوکانیں کھلی تھیں تاہم بیشتر دکانیں بند رہیں۔لال چوک کو تاربندی سے بند کردیا گیا ہے۔دیگر ضلع مقامات پرکریانہ، دودھ ، گوشت، سبزی، بیکری، نانوائی، کپڑے ، ریڈی میڈ گارمنٹس، ہارڈ ویئر، ٹائلز،کھانے پینے کی اشیاء فروخت کرنے والی، بک سیلر اور ہول سیل و رٹیل دکانیں  جزوی طور پرکھول دی گئیں ہیں۔تاہم مجموعی طور پر بھرپور طریقے سے بازار نہیں کھل  رہے ہیں اور تجارتی سرگرمیاں مکمل طور پر بحال نہیں ہوسکی ہیں۔منگل کی صبح سے ہی شہر سرینگر کے سبھی علاقوں اور وادی کے دیگر قصبوں میں بندشیں مزید نرم کی گئیں اور نجی گاڑیوں کی آمد و رفت میں بہت زیادہ اضافہ دیکھا گیا۔ سڑکوں پر  رکاوٹیں ہٹا دی گئی ہیں جس کی وجہ سے لوگوں کی آمد و رفت میں اضافہ ہوا۔
 

قصائی مبتلا، بانڈی پورہ قصبہ سیل

۔68افراد قرنطین، نمونے حاصل

عازم جان 
 
بانڈی پورہ // بانڈی پورہ میں قصائی کا ٹیسٹ مثبت آنے کے بعد ضلع ہیڈ کوارٹر کو ریڈ زون قرار دیکر اسے سیل کردیا گیا ہے۔ ڈپٹی کمشنر بانڈی پورہ ڈاکٹر رویندر کمار نے احکامات صادر کئے کہ قصبے کو ریڈ زون قرار دیا جائے جس کے بعد قصبے کے تمام اندرونی اور بیرونی ریاستوں کوسیل کردیا گیا، تمام دکانیں اور نجی گاڑیوں پر پابندی لگا دی گئی جبکہ اہم شریف بانڈی پورہ کو بھی ریذزون قرار دیکر لوگوں کو گھروں میں اند رہنے کی ہدایت دی گئی ۔ چیف میڈیکل آفیسر بانڈی پورہ ڈاکٹر بشیر احمد خان نے بتایا کہ بانڈی پورہ قصبے سے 40 افراد کے نمونے لئے گئے اور انہیں قرنطین کرلیا گیا ہے جبکہ اہم شریف بانڈی پورہ میں28 افراد کو کورنٹین سنٹر چترنار میں داخل کیا گیا ہے۔بانڈی پورہ ضلع میں 8نئے معاملات مثبت آئے ہیں، جن میں 2 گریز ، ایک بنہ کوٹ ، ایک ناز کالونی بانڈی پورہ قصبہ ،ایک گنڑ پورہ ،ایک اشٹنگواورایک مگنی پورہ کا ہے۔ اس طرح  اب تک 159 مریضوں کی تعداد ہوگئیجن میں 134 صحت یاب ہوگئے ، 24  زیر علاج ہیں۔
 
 

مزید 3ڈاکٹر اور ایکسرے ٹیکنیشن مثبت ، طبی عملے کے 21متاثرین میں 15معالج شامل

پرویز احمد
 
 سرینگر //بدھ کو مزید 3ڈاکٹروں کی تشخیصی رپورٹ مثبت آنے کے بعد کشمیر میںکورونا وائرس سے متاثرہ ڈاکٹروں کی تعداد 15ہوگئی ہے جبکہ اس کے علاوہ ایک ایکسرے ٹیکنیشین کی رپورٹ بھی آئی ہے۔طبی عملی اور نیم طبی عملہ کے مزید 4افراد کے وائرس سے متاثر ہونے کے بعد متاثرین کی کل تعداد 21ہوگئی ہے جن میں سے 15ڈاکٹر ، 3نرسیں، 2نرسنگ آرڈرلی، ایک ایکسرے ٹیکنیشن اور ایک ڈرائیور بھی  ہے۔ ضلع اسپتال ہندوارہ میں تعینات 2ڈاکٹر وں کی رپورٹ مثبت آئی ہے ۔ معلوم ہوا ہے کہ ان میں سے ایک ڈاکٹر ہندوارہ ضلع اسپتال میں تعینات ہے جبکہ پٹن کا ایک ڈاکٹر چار ماہ سے رخصت پر ہے، اسکی رپورٹ بھی مثبت آئی ہے۔سوپور میں تعینات خواجہ باغ بارہمولہ کی خاتون لیڈی ڈاکٹر کا ٹیسٹ بھی مثبت آیا ہے۔ بانڈی پورہ ضلع اسپتال میں تعینات ایک ایکسرے ٹیکنیشن ساکن گنڈی پورہ بھی مثبت قرار دیا گیا ہے۔ اس سے قبل18مارچ کو وادی میں سامنے آنے والے پہلے کورونا کیس سے لیکر منگل 2جون تک مریضوں کا علاج کرنے والے معالجین بھی اسکی زد میں آگئے ہیں۔ 2مئی کو ابتک سپرسپیشلٹی اسپتال شرین باغ کے 2ڈاکٹر اور 3نرسیں، گورنمنٹ میڈیکل کالج سرینگر میں 2زیر تربیت ڈاکٹر، ڈینٹل کالج کے 2 ڈاکٹر ،صدر اسپتال کے 3ای این ٹی ڈاکٹر،ذہنی امراض اسپتال کا ایک ڈاکٹر، جے وی سی میں ایک ڈاکٹر اور لل دید و سی ڈی اسپتالوں میں تعینات 2نرسنگ آرڈر لی وائرس سے متاثر ہوگئے ہیں۔
 

تازہ ترین