لاک ڈائون کا71واں دن، آمد و رفت میں بتدریج اضافہ، بندشیں ہٹ گئیں

تاریخ    2 جون 2020 (00 : 03 AM)   


بلال فرقانی
سرینگر// ملک گیر لاک ڈائون کے 71ویں روز اتوار کو وادی بھر میں بندشوں کی صورتحال قدرے تبدیل ہوئی ۔ شبانہ کرفیو کے نفاذ کے بعد پیر کی صبح سے ہی شہر سرینگر کے سبھی علاقوں اور وادی کے دیگر قصبوں میں بندشیں نرم کی گئیں اور نجی گاڑیوں کی آمد و رفت میں کوئی خلل نہیں ڈالا گیا۔ سڑکوں پر بچھائی گئیں خاردار تاریں ہٹا دی گئیں تھیں جس کی وجہ سے لوگوں کی آمد و رفت میں اضافہ ہوا۔ نجی گاڑیوں کی معمول کی آمد و رفت میں پچھلے کئی روز سے بتدریج اضافہ دیکھنے میں آرہا ہے۔شہر میں آٹو رکھشا بھی اب نظر آنے لگے ہیں اور پائین شہر کیساتھ ساتھ سیول لائنز میں بھی ان کی تعداد میں اضافہ ہورہا ہے۔لوگ ایک جگہ سے دوسری جگہ تک موٹڑ سائیکلوں، پرائیویٹ گاڑیوں اور آٹو رکھشا کا استعمال کررہے ہیں۔اب بازاروں میں دکانیں بھی کھلنی شروع ہوگئی ہیں۔بیکری، سبزی فروش،کریانہ دکانیں، قصائی کی دکانیں، کپڑے فروخت کرنے والی دکانیں ، بک سیلر اور کھانے پینے کی اشیاء فروخت کرنے والی ہول سیل و رٹیل دکانیں بھی کھل گئیں ہیں۔ابھی زیادہ تعداد میں دکانیں نہیں کھل پائی ہیں البتہ جن دکانداروں کی دکانیں اپنے مقامی مارکیٹ میں ہیں انہوں نے اپنی دکانیں کھول دی ہیں کیونکہ انہیں دوسری جگہوں سے نہیں آنا پڑرہا ہے۔کالونیوں کی دکانیں پہلے ہی کھول دی گئیں تھیں۔۔لاک ڈائون کے پانچویں مرحلہ کا آغاز آج سے ہوگیا ہے اور ضلع انتظامیہ سرینگر نے شہر میں کاروباری و تجارتی سرگرمیاں شروع کرنے کی محدود اجازت دیدی ہے۔ انتظامیہ کا کہنا ہے کہ بیرون ریاستوں سے واپس لوٹنے والے افراد کے نمونے مثبت آرہے ہیں اور جب سے شہریوں کی واپسی شروع ہوگئی ہے کورونا متاثرین میں بہت زیادہ اضافہ ہونے لگا ہے لہٰذا انتظامیہ کوئی بھی رسک نہیں لینا چاہتی۔وادی کے دیگر قصبوں میں بھی اب صورتحال تبدیل ہوتی جارہی ہے۔ قصبوں میں لوگوں کی آمد و رفت میں تھوڑا بہت اضافہ ہوتا جارہا ہے اور نجی گاڑیوں کی آمد و رفت بھی بڑھ رہی ہے۔تاہم وادی کے ریڈ زون علاقوں میں کسی قسم کی آمد و رفت کی اجازت نہیں ہے۔
 

تازہ ترین