پلوامہ میں کار کے اندر 45کلو گرام بارود نصب کرنے میں حزب اور جیش ملوث: آئی جی

تاریخ    28 مئی 2020 (16 : 01 PM)   


نیوز ڈیسک
سرینگر//انسپکٹر جنرل آف پولیس، کشمیر رینج وجے کمار نے جمعرات کو بتایا کہ سیکورٹی فورسز نے پلوامہ میں ایک کار کے اندر نصب40سے45کلو گرام بارودی سرنگ کا بروقت پتہ لگاکر ایک حادثے کو ٹال دیا۔
ایک پریس کانفرنس کے دوران آئی جی کشمیر نے کہا کہ یہ کام حزب المجاہدین اور جیش محمد سے وابستہ جنگجوﺅں کا تھا تاکہ وہ سیکورٹی فورسز کو نشانہ بناسکیں۔
خبر رساں ایجنسی کے این او کے مطابق آئی جی کشمیر نے کہا کہ فوج، سی آر پی ایف اور پولیس کو مسلسل ممکنہ فدائی حملے کے بارے میں اطلاعات موصول ہورہی تھیں۔
انہوں نے کہا ” گذشتہ روز کئی مقامات پر خصوصی ناکے لگائے گئے تھے،ہمارے آدمیوں نے فدائی کو دو ناکوں پر روکنے کی کوشش کی اور وارنگ کے طور گولی بھی چلائی۔ حملہ آور نے دونوں ناکوں کو پھاند کر آخر کار راجپورہ کے آئن گنڈ نامی گاﺅں کے نزدیک گاڑی چھوڑ دی۔آج صبح بم ناکارہ بنانے والی ٹیم کو جائے مقام پر لایا گیا“۔
آئی جی کے مطابق اُن کا اندازہ تھا کہ کار کے اندر10سے15کلو گرام تک بارود نصب ہے لیکن بعد میں معلوم ہوا کہ یہ40سے 45کلو گرام تک ہے جس کے دھماکے سے کار15میٹر اُوپر تک اٹھ گئی۔
آئی جی کشمیر نے کہا کہ کار کے اندر بارودنصب کرنے میں عادل نامی ایک حزب کے جنگجو سمیت جیش اور حزب کے مزید کئی جنگجو بھی ملوث ہےں جو اصل میں 17ماہ رمضان کو یوم جنگ بدر کے موقع پر سیکورٹی فورسز کو نشانہ بنانا چاہتے تھے لیکن ایسا نہیں کرسکے۔
واضح رہے کہ فورسز نے آج صبح جنوبی ضلع پلوامہ کے راجپورہ علاقے میں ایک کار سے بارودی سرنگ بر آمد کرکے اُسے ناکارہ بنایا۔
 اس سرنگ کا پتہ فورسز اور پولیس کی ایک مشترکہ ٹیم نے تلاشی آپریشن کے دوران مشترکہ طور لگایا۔ 
اس موقع پر بم ناکارہ بنانے والی ٹیم کو طلب کیا گیا جس نے سرنگ کوکار کے اندر ہی دھماکہ کرکے اُڑادیا۔ ذرائع نے کہا کہ دھماکے سے زور دار اور خوفناک آواز پیدا ہوگئی تاہم اس سے کوئی جانی نقصان نہیں ہوا۔ذرائع نے مزید کہا کہ یہ ایک انتہائی طاقتور بارودی سرنگ تھی جو کافی نقصان پہنچانے کی صلاحیت رکھتی تھی۔
 
 

تازہ ترین