راجوری کے متعدد سیکٹروں میں گولہ باری

تاریخ    5 مئی 2020 (00 : 01 AM)   


سمت بھارگو
راجوری //حد متارکہ پر ہند و پاک افواج کے درمیان کشیدگی برقرار ہے اور پیر کے روز بھی گولہ باری کا سلسلہ جاری رہا۔ اتوار اور پیر کی درمیانی شب راجوری کے لگ بھگ دس گائوں اس گولہ باری کی زد میں آئے تاہم خوش قسمتی سے کوئی جانی نقصان نہیں ہوا۔سرکار ی ذرائع نے بتایاکہ رات 10بجے کے قریب راجوری کے ترکنڈی، ویر بڈیشوراور منجاکوٹ و پونچھ کے بالاکوٹ علاقوں میں فائرنگ و گولہ باری شرو ع ہوئی اوراس دوران ویربڈیشور، رتل، بسالی، چٹی بکری، نمبلاں، شرما بستی، نائیکہ، پنج گرائیں، پریالی، سرولہ، منگلناڑ، راجدھانی و دیگر کچھ علاقے اس کی زد میں آئے ۔ ذرائع نے بتایاکہ یہ سلسلہ لگ بھگ چھ گھنٹوں تک جاری رہا اورصبح ہونے پر کشیدگی تھم گئی ۔ذرائع نے بتایاکہ نائیکہ پنج گرائی اور پریالی میں رہائشی آبادی بھی گولہ باری کی زد میں آئی تاہم خوش قسمتی سے کوئی جانی نقصان نہیںہوا اور گولے مکانات کے گرد گرتے رہے ۔محکمہ مال کے ایک افسر نے بتایاکہ تحصیلدار منجاکوٹ محمد صغیر کی قیادت میں ایک ٹیم نے متاثرہ علاقوں کا دورہ کیا اور یہ پایاگیاکہ بکروال طبقہ سے تعلق رکھنے والے محمد طارق ، غلام حسین اور محمد صدیق پسران محمد اسمٰعیل کی کم سے کم 10بھیڑیں مارٹر گولوں کی زد میں آکر ہلاک ہوگئیں ۔انہوں نے بتایاکہ اس دوران ایک کچا مکان اور گائو خانہ بھی تباہ ہواہے جو محمد رشید ولد سائیں گجر ساکن راجدھانی کا تھا۔اسی طرح سے محمد بابو اور محمد تنویرساکن نائیکہ پنج گرائیں کے مکانات کو بھی نقصان پہنچاہے ۔تحصیلدار منجاکوٹ محمد صغیر نے بتایاکہ بکروال کنبے نشیبی علاقوں سے پہاڑی علاقوں کی طرف ہجرت کے دوران رات کو راجدھانی چور گلی میں ٹھہرے ہوئے تھے جہاں مارٹر شیلوں کی زد میں آکر ان کی دس بھیڑیں ہلاک ہوگئی ہیںجبکہ کئی لاپتہ ہوئی ہیں۔ انہوں نے بتایاکہ نقصا ن کا جائزہ لیاجارہاہے ۔دریں اثناء نوشہرہ کے کلال علاقے میں بھی پیر کی شام سے شدید گولہ باری شروع ہوگئی جو آخری اطلاعات موصول ہونے تک جاری تھی۔ذرائع نے بتایاکہ تازہ فائرنگ اور گولہ باری شام 4بجے شروع ہوئی جو تادم تحریر جاری تھی۔وہیں کیری بٹل سیکٹر بھی فائرنگ اور گولہ باری کی زد میں ہے ۔
 

تازہ ترین