ملک بھر میں درماندہ کشمیری طلاب کی حالت زار

حسنین مسعودی نے طلباء کو واپس وادی لانے کا مطالبہ دہرایا

7 اپریل 2020 (08 : 02 AM)   
(      )

نیوز ڈیسک
سرینگر//نیشنل کانفرنس کے رکن پارلیمان حسنین مسعودی نے ملک کی مختلف ریاستوں میں درماندہ کشمیری طالب علموں کو کشمیر واپس لانے کا مطالبہ دہرایا ہے۔ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ فی الوقت کشمیر کے بیسیوں طالب علم اندور،جیسلمیر، بنگلورواوردہلی میں پھنسے ہیں جہاں انہوں نے قرنطینہ کی مدت بھی مکمل کی ہے اور وہ اب کشمیر جانے کے انتظار میں ہیں ۔انہوں نے ان طالب علموں کی حالت زار پر تشویش کااظہار کرتے ہوئے کہا کہ انتظامیہ کی طرف سے ان طالب علموں کی حالت زار کو نظراندازکرنانازیبا ہے۔ انہوں نے کہا کہ دیگرریاستوں کی حکومتیں اپنی ریاستوں کے طالب علموں کو واپس لانے کیلئے اقدام کررہی ہیں تاکہ وہ اپنے گھر والوں سے مل سکیں ،لیکن جموں کشمیرانتظامیہ نے ان طالب علموں کیلئے کیا کیا ہے؟جیسلمیرمیں 150طلاب نے قرنطینہ مکمل کیا ہے ۔اسی طرح ملک کے دیگرشہروں میں بھی طلاب نے قرنطین کی مدت مکمل کی ہے ۔ان کیلئے اب وہاں شدت کی گرمی میں رہنا ناقابل برداشت بن چکاہے اور انتظامیہ انہیں واپس کشمیر لانے کیلئے کوئی سنجیدہ قدم نہیں اٹھارہی ہے ۔جسٹس مسعودی نے انتظامیہ پرزوردیا ہے کہ وہ ملک کی ریاستوں میں درماندہ کشمیری طلاب کو واپس کشمیر لانے کیلئے ٹھوس اقدام کریں۔
 

تازہ ترین