مایوس نہ ہو اللہ بہت بڑا ہے | تدابیر کے ساتھ توکل اعلیٰ صفت ہے

فکرو ادراک

تاریخ    6 اپریل 2020 (41 : 12 AM)   


عبدالمنعم فاروقی
’’اللہ‘‘ اس ذات کا نام ہے جو سب سے بڑا ، سب سے بلند ،سب سے جدا ،سب سے الگ ہے۔وہ سب کا خالق ہے ، اس کے مقابلہ میں ہر ایک چیز اس کی مخلوق اور اسی کی تخلیق کا شاہکار ہے۔وہ اپنی قدرت ،طاقت،بادشاہت اور علم وحکمت ،بزرگی اور بڑائی میں یکتا ہے۔وہ اکیلا ،بے عیب ،بے نیاز اور بے مثال ہے۔اس نے محض اپنی قدرت وطاقت اور قوت وارادہ سے کائنات اور اشیائے کائنات کو وجود عطا کیاہے ،وہ جو چاہتا ہے وہ کرتا ہے اور جیسے چاہتا ہے ویسا ہی کرتا ہے،کوئی اسے روک ٹوک کرنے والا نہیں۔اس کا کوئی مشیر ہے نہ وزیر،آسمان وزمین کا قیام اور چاند وسورج کا قرار اسی کے دم سے ہے۔بجلی کی کڑک ،سورج کی چمک اور چاند کی دمک اسی کے حکم سے ہے۔ سمندر کی گہرائی ،زمین کی چوڑائی ،آسمان کی اونچائی اور پہاڑوں کی طاقت کو وہ خوب جانتا ہے۔جنگل،دریا،پہاڑ،درخت اور باغات کے دلفریب نظارے اسی کے ’’کن‘‘ کا نتیجہ ہیں ، وہی سب کا داتا ہے اور سب کو دیتا بھی وہی ہے، وہ ہر ایک کی سنتا ہے اور ہر ایک کی بولی سے واقف ہے ۔ دینا ولینا ،نفع ونقصان ،صحت اور بیماری اسی کے قبضہ میں ہے،ا س کو ماننا اور اسی کی ماننا سب پر لازم ہے۔وہ اگر دینا چاہے تو کوئی روک نہیں سکتا اور اگر وہ روکنا چاہے تو کوئی دے نہیں سکتا۔وہ گمان کے مطابق بندوں کے ساتھ معاملہ کرتا ہے ،وہ اپنے بندووں کو اسی پر بھروسہ کرنے اور اسی پر توکل رکھنے کی تعلیم دیتا ہےکیونکہ کام بننے اور بگڑ نے میں اسی کا دخل ہے ،وہ بھروسہ کرنے والوں کے بھروسہ کو پورا کرتا ہے ۔
توکل علی اللہ ایمان کی روح اور توحید کی بنیاد ہے،اسباب اختیار کرکے نتیجہ اللہ تعالیٰ کی ذات پر چھوڑ دینے کا نام توکل ہے ۔اللہ تعالیٰ کی ذات پر ایمان لانے کے بعد اہل ایمان کو جس کی تعلیم دی گئی ہے وہ اس پر توکل وبھروسہ ہے ،بلاشبہ توکل علی اللہ ایمان کا جزو ہے،توکل بہت عظیم صفت ہے ،جس شخص میں یہ صفت پائی جاتی ہے وہ کبھی نامراد اور مایوس نہیں ہوتا،درحقیقت متوکلین ہی سچے موحدین ہیں۔ توکل خدا سے ملاتا ہے ، اس کی مدد ونصرت کا در کھلاتا ہے ، اعتماد جگاتا ہے اور حوصلہ بڑھاتا ہے ،توکل آدمی کو مایوسی کے دلدل سے نکال کر امید کی چوٹی پر پہنچا تا ہے،اندھیرے سے روشنی کی طرف لاتا ہے اور یقین کامل پیدا کرتا ہے،قرآن مجید میں توکل کی تعلیم دی گئی ہے، یہ انبیاء ؑ کی صفت ،اولیاء ؒ کی علامت اور نیک بندوں کی نشانی ہے، جو شخص اللہ تعالیٰ کی ذات پر توکل کرتا ہے تو یقینا ذات خداوندی اس کے لئے کافی ہوجاتی ہے ، قرآن مجید میں ہے : ’’اور جو کوئی اللہ پر بھروسہ کرے تو اللہ اس (کاکام بنانے)کے لئے کافی ہے،یقین رکھو کہ اللہ اپنا کام پورا کرکے رہتا ہے البتہ اللہ نے ہر چیز کا ایک اندازہ مقرر کر رکھاہے‘‘ ،(الطلاق۔۳)یعنی جو اللہ پر بھروسہ کریں گے تو اللہ اپنی قدرت سے ان کے کام بنائیں گےلیکن کام بنانے کی نوعیت اور اس کا وقت وہ خود مقرر فرماتے ہیں کیونکہ انہوں نے ہر چیز کا ایک نپا تلا اندازہ طے کر رکھا ہے ،اس لئے بندہ مومن کو چاہیے کہ اپنی بساط کے مطابق کام کرے اور باقی معاملہ اللہ کے سپرد کردے اور یقین کامل و مکمل بھروسہ رکھیں ،اللہ اپنے علم وحکمت سے اسے ضرور پورا کرکے رہیں گے، قرآن مجید کی ایک دوسری آیت میں مؤمنین کو ان الفاظ کے ذریعہ توکل کی تاکیدی تعلیم دی گئی ہے :ِ ’’اور جن لوگوں کو بھروسہ رکھنا ہو انہیں اللہ ہی پر بھروسہ رکھنا چاہیے ‘‘ (ابراہیم۔۱۲ )مذکورہ آیات کے علاوہ دیگر مقامات پر اہل ایمان کو توکل کی تاکید کی گئی ہے ۔
رسول اللہ ؐ نے صحابہ ؓ کے واسطے سے امت مسلمہ کو توکل کی تعلیم وتلقین فرمائی ہے ،ذخیرہ احادیث میں ایسی بہت سی احادیث ہیں جن میں اللہ کی ذات پر توکل وبھرسہ کی تعلیم دیتے ہوئے بندوں کو ذات واجب الوجود پر یقین کامل رکھنے اور مکمل بھروسہ کرنے کی تلقین کی گئی ہے ،یقینا توکل ایک ایسی چیز ہے جو آدمی کو دنیا میں کامیاب اور آخرت میں نجات دلانے کے لئے کافی ہے ،رسول اللہ ؐ کا ارشاد ہے : ’’ میری امت کے ستر ہزار آدمی بلا حساب وکتاب جنت میں داخل ہوں گے ،صحابہ ؓ نے عرض کیا :اے اللہ کے رسول ؐ !وہ کون لوگ ہیں ؟ آپ ؐ نے ارشاد فرمایا: یہ وہ لوگ ہوں گے جو جھاڑ پھونک نہیں کرواتے ،بد فالی نہیں لیتے ،آگ سے نہیں دغواتے اور اپنے رب پر توکل کرتے ہیں (مسلم۔۳۲۱) ۔اسباب اختیار کئے بغیر سارا کام اللہ کی ذات پر چھوڑ دینا توکل کے منافی ہے ،درحقیقت یہ توکل نہیں بلکہ غیر ذمہ دارانہ عمل اور عقل وفہم سے دوری کا نتیجہ ہے ،انہیں معلوم ہونا چاہیے کہ اللہ نے دنیا کو اسباب کی جگہ بنائی ہے اور اس کے فعل کا ظہور اسباب کے پردوں سے ظاہر ہوتا ہے مگر وہ اسباب کا پابند نہیں ہے بلکہ ہم کو اسباب کاپابند بنایا گیا ہے ،ایک موقع پر آپ ؐ سے کسی نے توکل کے متعلق پوچھا کہ کیا اونٹ کو رسی سے باندھ کر توکل کرنا ہے یا کھلا چھوڑ کر ؟ تو جواب میں آپ ؐ نے ارشاد فرمایا:  ’’ اسے باندھ لو پھر اللہ پر توکل کرو‘‘۔( ابن حبان۔۷۳۱)
پیغمبر سیدنا ایوب ؑ کا واقعہ قرآن مجید میں مذکور ہے کہ جب اللہ تعالیٰ نے انہیں مہلک بیماری کے ذریعہ آزمایا اور وہ صبر وضبط کی مورت بنے رہے ، بیماری پر صبر کرتے ہوئے بقیہ نعمتوں پر شکر بجالاتے رہے اور خدا کی یاد کے ذریعہ دن گزارتے رہے ،جس وقت ان کی دعا قبول ہوئی تو انہیں حکم دیا گیا جس کا ذکر قرآن مجید میں اس طرح کیا گیا ہے کہ :’(ہم نے ایوبؑ سے کہا)اپنا پاؤں زمین پر مارو ،لو!یہ ٹھنڈا پانی ہے نہانے کے لئے بھی اور پینے کے لئے بھی‘‘(ص:۴۲)، سیدنا ایوب ؑ کے زمین پر پیر مارتے ہی اس جگہ چشمہ نکل آیا ،اسے پینے اور نہانے سے ان کی ساری بیماری جاتی رہی اور وہ پہلے کی طرح صحت مند اور تندرست ہوگئے ،حضرت سیدنا ایوبؑ کا صبر وضبط اور تحمل وبرداشت مثالی تھا ،ان کے توکل کا انداز عجب اور نرالہ تھا، انہیں بھر پور یقین اور مکمل بھروسہ تھا کہ ایک دن خدا کی مدد ونصرت کا ظہور ہوگا اور اس بیماری سے انہیں نجات حاصل ہوگی ،وہ یاد الٰہی میں بدستور لگے رہے اور اللہ پر کامل توکل کرتے رہے،جب انہیں خدا کی جانب سے شفا یاب ہونے کی خوشخبری سنائی گئی تو انہیں حکم دیا گیا کہ اپنے پیرو کو زمین پر ماریں ،اس سے پانی ابل پڑے گا اور اسے پئیں اور نہائیں جس سے بیماری دور ہوجائے گی ، جس سے صاف ظاہر ہوتا ہے کہ دنیا دار الاسباب ہے اور بندہ اسباب کا پابند ہے ،اپنی بساط وکوشش کے مطابق بندوں کو اسباب اختیار کرنا چاہیے لیکن بھروسہ اسباب پر نہیں بلکہ مسبب الاسباب پر رکھنا چاہیے ،کیونکہ اسباب بھی اذن الٰہی کے محتاج ہوتے ہیں ۔
رسول اللہ ؐ کی پوری حیات طیبہ پر نظر ڈالئے تو پتہ چلے گا کہ آپ ؐ نے قدم قدم پر اسباب اختیار فرمائے ہیں مگر نظر مسبب الاسباب پر رکھ کر مکمل توکل وبھروسہ اسی ذات پر فرمایا جو اسباب کی بھی خالق ہے ،آپؐ نے نہ صرف اسباب اپنایا بلکہ ساتھ ہی توکل کی تعلیم بھی دی بلکہ امت کے سامنے توکل کا وہ اعلی نمونہ پیش فرمایا جس کی تاریخ میں مثال ونظیر نہیں ملتی، کتب سیرت توکل کے واقعات سے بھرے پڑے ہیں ، 
 متوکلین کے لئے اللہ نے ہر زمانے میں کامیابی کے راستے دکھائے ہیں اور ان کے ساتھ مدد ونصرت کا معاملہ فرمایا ہے،وہ کبھی مایوسی کا شکار نہیں ہوئے کیونکہ ان کی نظر اسباب پر نہیں بلکہ صاحب قدرت وکمال مسبب الاسباب پر تھی ،مگر ایسا بھی نہیں ہوا کہ انہوں نے اسباب کے بغیر مددطلب کی ہو بلکہ اسباب اختیار کیا اور پھر نتیجہ اللہ کے سپرد کردیا ،ان کے توکل اور پختہ یقین نے انہیں گھنے جنگل میں راستے فراہم کئے،سمندر کی موجوں نے بحفاظت ساحل تک چھوڑ دیا ، صحرا ء نے پانی فراہم کئے ، درندوں نے تعمیل حکم میں گردنیں جھادیں اور ہزاروں کے لشکر پر مٹھی بھر متوکلین غالب آگئے ، موجود حالات جو مجموعی طور پر تمام مسلمانان عالم کے لئے تشویش ناک اور فکر طلب ہیں ، ہر طرف سے مسلمانوں پر شکنجہ کسا جارہا ہے ،انہیں دبانے کی کوششیں کی جارہی ہیں ،باطل اکھٹا ہوکر ان کی قوت کو توڑ نے میں لگا ہوا ہے ، مذہبی ،دینی ، اخلاقی ،معاشی ،سیاسی اور حکومتی ہر لحاظ سے انہیں کمزور کردینا چاہتے ہیں ، مسالک کے نام پر ان میں تفریق پیدا کی جارہی ہے، انصاف کے نام پر شرعی قوانین میں ترمیم کی کوشش ہورہی ہےاور ذہنی طاقت کا سہارا لے کر ان کی اجتماعی طاقت کو ٹکڑوں میں باٹنے کا کام کیا جارہا ہے،الغرض کسی نہ کسی بہانےانہیں زیر کرنے کا عمل جاری ہے۔آج جبکہ کورونا نامی وبائی بیماری نے پورے عالم کو تشویش ناک صورت حال سے دوچار کردیا ہے ،جس اثر ہمارے ملک میں پڑچکا ہے تو اس سے نجات پانے کے لئے جو راہیں اپنائی جارہی ہیںوہ اگرچہ ابھی تک کارگر ثابت نہیں ہوپارہی ہیںلیکن افسوس ناک بات یہ ہے کہ اس وبائی بیماری کا نزلہ بھی مسلمانوں پر ڈالنے کی کوشش کی جارہی ہے۔ باشعور مسلمانوں اور ملت کے درد مندوں کے لئے لمحہ فکریہ ہے ،کوششیں کرنے والے کوششیں کر رہے ہیں مگر عام لوگ بے چین وبے قرار ہیں اور بعض تو زبان سے مایوسانہ الفاظ ادا کرنے لگے ہیں ، ان کے الفاظ بتارہے ہیں کہ وہ سب کچھ اسباب کو سمجھ بیٹھے ہیں ،ان کے دل توکل سے خالی ہیں، ایسے نازک اور ناگفتہ بہ حالات میں مسلمانوں کو تعلیم دی گئی ہے ،انہیںسبق پڑھایا گیا ہے اور پچھلے تاریخی واقعات یاد دلاکر بتا یا گیا ہے کہ اہل ایمان وہ ہوتے ہیں جو خدا پر توکل رکھتے ہیں اور خدا کی ذات کا کامل یقین واعتماد کرتے ہیں ،وہ کبھی بھی کسی بھی حالت میں مایوس نہیں ہوتے اور نہ ہی افسردگی کا اظہار کرتے ہیں ،وہ اپنی صلاحیتوں کا بھر پور استعمال کرتے ہیں اور اسباب اپناتے ہیں مگر توکل خدا کی ذات پر رکھتے ہیں۔مسلمان کبھی مایوس نہیں ہوتا کیونکہ اس کے پاس مایوسی تو کفر ہے ،اسے معلوم ہے کہ جو خدا سورج جیسی طاقت کو رات میں غروب کرتا ہے ،تاریکی سے روشنی نمودار کرتا ہے ،زمین سے غلہ اُگاتا ہے اور بے جان سے جاندار اور جاندار سے بے جان پیدا کر تا ہے تو پھر ناموافق حالات کو موافقت میں تبدیل بھی کر سکتا ہے اور اس نے توکل کرنے والوں کے ساتھ کرکے بھی دکھایا ہے۔جو حالات سے ڈر کر خوف زدہ ہو رہے ہیں اور اپنے دل چھوٹے کر رہے ہیں ہم ان سے یہی کہیں گے کہ مایوس نہ ہو اللہ بہت بڑا ہے ۔