’سفری تاریخ چھپانا بڑا گناہ ، رضاکارانہ طور تفصیلات ظاہرکرنا نیک کام ‘

4 اپریل 2020 (00 : 01 AM)   
(      )

یواین آئی
جموں// جموں وکشمیر کے پولیس سربراہ دلباغ سنگھ نے کہا کہ کورونا وائرس کے خطرے کے چلتے سفری تاریخ چھپانا ایک بہت بڑا گناہ ہے اور اس کو ظاہر کرنا ایک نیک کام ہے۔ انہوں نے کہا کہ رضاکارانہ طور پر اپنی سفری تاریخ ظاہر کرنے والوں کے خلاف کوئی مقدمے درج نہیں ہوں گے۔ دلباغ سنگھ نے ملکی یا غیر ملکی سفر سے واپس لوٹنے والوں سے ایک بار پھر اپنی سفری تاریخ ظاہر کرنے کی اپیل کرتے ہوئے کہا،’’سفری تاریخ ظاہر نہ کرنا بہت بڑا گناہ ہے اور اس کو ظاہر کرنا ایک نیک کام ہے۔
کنٹیکٹ ٹریسنگ کے ذریعے ہم نے سفری تاریخ چھپانے والے کئی افراد کا پتہ لگایا اور انہیں قرنطینہ مراکز منتقل کیا۔ ابھی بھی ممکن ہے کہ کسی نے سفری تاریخ ظاہر نہ کی ہو۔ میرا ماننا ہے کہ سفری تاریخ ظاہر کرنے سے سماج کا بہت بڑا فائدہ ہوگا‘‘۔ ان کا مزید کہنا تھا،’’اب بھی اگر کوئی رضاکارانہ طور پر سامنا آتا ہے اور کہتا ہے کہ میں فلاں جگہ سے آیا تو اس کے خلاف کوئی ایف آئی آر درج نہیں ہوگی۔ سفری تاریخ چھپانے والے اپنے اہل خانہ کے ساتھ ساتھ پورے سماج کے لئے خطرہ بن رہے ہیں‘‘۔ پولیس سربراہ نے کہا کہ کورونا وائرس کے خلاف لڑائی سب کو مل کر لڑنی ہے اور اب تک لوگوں نے انتظامیہ کو جو تعاون دیا ہے وہ قابل تحسین ہے۔ ان کا کہنا تھا،’’کورونا وائرس کسی ایک محکمے یا کسی ایک مخصوص شخص کے لئے چیلنج نہیں ہے بلکہ یہ ایک ایسی لڑائی ہے جس کو سب نے مل کر لڑنا ہے۔ ہمیں کورونا وائرس کے قہر کو ہرانا ہے۔ لوگ بہت حد تک اپنا تعاون دے رہے ہیں۔ احتیاط کریں گے تو کورونا پھیلنے کی زنجیر کو بہ آسانی توڑیں گے‘‘۔
دلباغ سنگھ نے کہا کہ جموں وکشمیر میں اب تک 42 علاقوں کو ریڈ زون قرار دیا جاچکا ہے اور ایسے علاقوں میں لوگوں کی مدد کے لیے سول انتظامیہ کے ساتھ ساتھ پولیس کے اہلکار تعینات ہیں۔ انہوں نے کہا،’’جموں وکشمیر میں قریب 42 علاقوں کو ریڈ زون قرار دیا گیا ہے۔ یہ ایسے علاقے جو کسی کورونا وائرس مریض کا آبائی علاقہ ہے یا کوئی مریض اس جگہ پر ٹھہرا ہو۔ ایسے علاقوں میں زیرو موومنٹ یقینی بنائی جارہی ہے۔ وہاں ہمارے اہلکار تعینات کئے جاتے ہیں جو لوگوں کی مدد کرتے ہیں‘‘۔ پولیس سربراہ نے لوگوں سے اپیل کی کہ اگر انہیں کوئی مدد چاہیے تو وہ پولیس کی طرف سے ہر ضلع میں قائم کئے گئے کنٹرول رومز سے رابطہ کریں۔ انہوں نے کہا،’’ ہم نے لوگوں کی مدد کے لئے ہر ضلع میں پولیس ہیلپ لائن کنٹرول روم قائم کئے ہیں اور ان کے نمبرات جاری کردیے ہیں۔ میں نے ہر ضلع کے ایس پی کو کہہ دیا ہے کہ وہ رضاکار، جو ان ہیلپ لائن نمبرات پر کال کرنے والوں کی مدد کے لئے آگے آنا چاہتے ہیں، ان کی خدمات حاصل کی جائیں۔ کسی کی دوائی ختم ہوئی ہے یا ہسپتال جانا ضروری ہے، یا کوئی دوسرے ضروری کام ہیں تو وہ لوگ ان نمبرات پر رابطہ قائم کرسکتے ہیں‘‘۔ 

تازہ ترین