لاک ڈائون میں پھنسے بے یارو مدد گارمزدور

پُرخطرراستے سے گھر جانے والے35دھر لئے گئے

تاریخ    3 اپریل 2020 (00 : 01 AM)   


عارف بلوچ
اننت ناگ //پولیس نے ویری ناگ کے قریب رام بن کے35افراد کواُس وقت حراست میں لیا جب وہ پُرخطر راستہ سے جواہرٹنل عبورکرناچاہتے تھے۔ کشمیر عظمٰی کواپنی روداد سناتے ہوئے ان لوگوں نے کہا کہ وہ کافی عرصہ سے کشمیر میں مزدوری کے لئے آتے ہیں ،تاہم اچانک لاک ڈاون کے اعلان کے ساتھ ہی وہ لوگ سخت مشکلات سے دوچار ہوگئے ۔ محمد صادق نامی مزدور کا کہنا تھا کہ لاک ڈاون کے ساتھ ہی کام ٹھپ ہوگیا ۔مزدوری نہ ملنے کے سبب مکان مالکان نے اُنہیں گھر خالی کرنے کا حکم دیا جس کے سبب وہ لوگ سڑک پر آگئے  ۔اُنہوں نے کہا کہ کوئی بھی شخص وبائی بیماری کے سبب اُنہیںگھر میں داخل ہونے نہیں دیتا  ۔گھر پہنچنے کے لئے راستے بند ہیں لہذا نہوں نے گھر پہنچنے کے لئے پیدل سفر شروع کیا لیکن جواہر ٹنل پہنچتے ہی پولیس نے اُنہیں روکا اور آگے جانے کی اجازت نہیں دی جس کے بعد وہ لوگ واپس ویری ناگ پہنچے اور کپرن سے پہاڑی راستہ سفر کرنا شروع کیا ، تاہم پولیس نے اُنہیں بیچ راستہ میں ہی حراست میں لیا ۔اُنہوں نے کہا کہ ہمیں معلوم ہے کہ راستہ کافی خطرناک ہے، تاہم بھوکے پیٹ اور کھلے آسمان تلے مر جانے سے بہتر ہے کہ جوکھم اُٹھایا جائے ۔محکمہ صحت کے ایک آفیسر کا کہنا تھا کہ دو دن پہلے پولیس نے پیدل سفر کرنے والے4افراد کو حراست میں لے کر اسپتال پہنچایا جوکئی روز کے بھوکے اور تھکے ہوئے تھے ۔سبھی افراد کو رات بھر اسپتال میں ہی رکھا گیا اور اگلے روز اُنہیں واپس جانے کے لئے کہا گیا۔اُنہوں نے کہا کہ غیر مقامی افراد لاک ڈاون کے سبب سخت مشکلات سے دوچار ہیں ،لہذا سبھی غیر سرکاری تنظیموں کو ایسے بے بس افراد کے لئے آگے آنا چاہیے،تاکہ مستقبل میں کسی بھی امکانی حادثہ کو روکا جاسکے ۔ایس ڈی ایم ڈورو غلام رسول کا کہنا ہے کہ ویری ناگ میں درماندہ مسافروں کو گھر تک پہنچانے کے لئے اقدامات کئے جارہے ہیں ،تاہم انتظامیہ نے پہلے ہی ایسے لوگوں کے لئے ہدایت واضح کی ہے کہ وہ فی الحال نقل مکانی سے پرہیز کرے اور اگر کوئی بھی شخص ایسے افراد کو گھر سے یا نوکری سے نکال رہا ہے تو اُنہیں چاہیے کہ معاملہ پولیس کے نوٹس میں لائے ۔اُنہوں نے لوگوں سے اپیل کی کہ وہ پُر خطر راستوں پر پیدل سفر کرنے سے پرہیز کریں۔

تازہ ترین