مزید خبرں

26 مارچ 2020 (00 : 01 AM)   
(      )

قرنطینہ مراکز میں قیام وطعام ، 45کروڑ روپے واگذار

سید امجد شاہ 
جموں //حکومت نے قرنطینہ مراکز میںلوگوں کے قیام و طعام کیلئے 45کروڑ روپے  واگزار کئے ہیں ۔فائنانشل کمشنر محکمہ خزانہ ڈاکٹر ارون کمار مہتا کی طرف سے جاری ہوئے ایک سرکیولر کے مطابق قرنطینہ میں قیام و طعام پر خرچ کیلئے 45کروڑ روپے واگزار کئے گئے ہیں اور یہ رقم ڈیزاسٹر ریسپانس فنڈ کے تحت جاری کی گئی ہے ۔ اس رقم سے 21دن کے لاک ڈائون کے دوران جموں وکشمیر کے لوگوں کو مدد فراہم ہوگی ۔سرکیولر کے مطابق اس رقم سے مفت راشن فراہم کیاجائے گا اور ساتھ ہی یومیہ مزدوروں اور جھگی جھونپڑی میں رہنے والے افراد بھی اس کے دائرہ میں لائے جاسکتے ہیں ۔محکمہ خزانہ کے مطابق اس سلسلے میں خریدی جانیوالی اشیاء کے بل لاک ڈائون کی وجہ سے جمع نہیں کروائے جاسکتے لہٰذا انہیں مالی سال 2020-21میں پیش کیاجائیگا۔اسی طرح سے حکومت جموں وکشمیر کے 22.10لاکھ جن دھن یوجنا اکائونٹس ہولڈروں کو ڈرافٹ سہولت فراہم کرے گی ۔ان اکائونٹس میں سے 16.05لاکھ اکائونٹ جموں و کشمیر بینک سے وابستہ ہیں جبکہ دیگر 6.05اکائونٹ دیگر بینکوں میں کھلوائے گئے ہیں ۔
 
 
 
 

لورمنڈا میں 1772 کی سکریننگ

۔4 نیپالی مزدور قرنطینہ میں منتقل

نیوز ڈیسک
 
سرینگر //جموں وکشمیر داخل ہونے والے 1772 افراد کو لورمنڈا میں سکریننگ کے عمل سے گذارا گیا جبکہ 4نیپالی مزدوروں سمیت 6 افراد کو قرنطینہ مراکز منتقل کیا گیا ہے۔اس دوران جموں وکشمیر کی پنجاب کے ساتھ لگنے والی سرحد پوری طرح سے سیل ہے جس کی وجہ سے وہاں جموں کشمیر میں داخل ہونے والوں کی خاصی تعداد جمع ہوگئی ہے اوراُن کے کھانے پینے کے انتظام کیلئے مقامی سکھ فرقے سے وابستہ افراد متحرک ہوگئے ہیں ۔ ذرائع کے مطابق لور منڈا قاضی گنڈ کے مقام پر سریننگ کے دوران 4 نیپالی مزدورں سمیت 6 افرار میں کورونا کی علامات پانے کے بعد اُنہیں قرنطینہ مراکز منتقل کردیا گیا۔ سرکاری ترجمان روہت کنسل نے ایک ٹویٹ میں بتایا کہ پنجاب سے سلگنے والی جموں کشمیر کی سرحد کو لکھن پور پر سیل کیاگیاہے اور داخل ہونے والے تمام شہریوں کو کٹھوعہ قرنطینہ مرکز بھیجاجارہاہے ۔انہوںنے عوام سے اپیل کی کہ وہ کورونا وائرس کے خلاف جاری جنگ میں تعاون دیں۔انہوں نے وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ جموں کشمیر سے تعلق رکھنے والے باہر سے آنے والے ہر فرد کو 14روز کیلئے قرنطینہ میں رکھنا لازمی قرار دیاگیاہے جس کیلئے کٹھوعہ میں 1395افراد کی گنجائش والے21مراکز قائم کئے گئے ہیں۔ایس ایس پی کٹھوعہ شیلندرا مشرا کے مطابق لوگ انتظامیہ اور پولیس کو تعاون دے رہے ہیں اور ضرورت پڑنے پر مزید قرنطینہ مراکز قائم کئے جاسکتے ہیں۔انہوںنے بتایاکہ سینکڑوں کی تعداد میں افراد، جن میں سے بیشتر کشمیر سے تعلق رکھتے ہیں ، لکھن پور سرحد پر پہنچے اور جموں وکشمیر میں داخل ہونے کی درخواست کی، اُنہیں کھانا وغیرہ  فراہم کرنے کے بعد قرنطینہ بھیج دیاگیا۔معلوم ہوا ہے کہ لکھن پور میں سکھ فرقے سے وابستہ رضاکار سامنے آئے ہیں اور وہ پنجاب سے لگنے والی سرحد پر پہنچنے والے لوگوں کو کھانے پینے کی اشیاء فراہم کررہے ہیں۔
 
 

 ملازمین کی پینشن واگذار کرنے کی ہدایت 

نیوز ڈیسک
 
جموں//لیفٹینٹ گورنر گریش چندر مرمو کی صدارت میں منعقدہ انتظامی کونسل کی میٹنگ کے دوران متعلقہ افسروں کو ہدایت دی گئی ہے کہ وہ پینشنروں کی ایک ماہ کی پینشن ریلیز کریں تا کہ کووڈ 19 سے پیدا شدہ صورتحال کی وجہ سے انہیں مشکلات کا سامنا نہ کرنا پڑے ۔ اس سلسلے میں محکمہ خزانہ کو ضروری کارروائی کرنے کی ہدایت دی گئی ہے ۔ انتظامی کونسل کے اس فیصلے سے جموں کشمیر کے ہزاروں پینشنروں کو راحت ملے گی ۔ یہ بات قابلِ ذکر ہے کہ کل یہاں منعقد ہوئی انتظامی کونسل کی میٹنگ میں یومیہ اجرت پر کام کرنے والے ورکروں کا ایک ماہ کا مشاہرہ واگذار کرنے کو بھی منظوری دی گئی ۔ کل منعقد ہوئی انتظامی کونسل کی میٹنگ میں تمام راشن کارڈ ہولڈروں کے حق میں اپریل اور مئی کی پیشگی راشن فراہم کرنے کو بھی منظوری دی گئی اس کے علاوہ فیصلہ لیا گیا کہ مستحق بچوں میں ایک ماہ کا مڈ ڈے میل تقسیم کیا جائے گا ۔ انتظامی کونسل کی میٹنگ میں فیصلہ لیا گیا کہ مجبور اور غریب لوگوں میں خوراک کے پیکٹ تقسیم کئے جائیں گے ۔ 
 
 
 

تازہ ترین