’’کورونا وَبا ‘‘

جموں وکشمیر میں آئیسولیشن او رکورنٹین کی مناسب سہولیات قائم : اتل ڈولو

تاریخ    24 مارچ 2020 (00 : 01 AM)   


جموں//جموںوکشمیر کی اِنتظامیہ کورونا وائرس کے ممکنہ پھیلائو کو روکنے کے لئے ایک جامع منصوبہ ترتیب دے رہی ہے اور حکام نے پورے خطے میں آئیسولیشن اور کورنٹین کی سہولیات کو مزید وسعت دینے کا فیصلہ کیا ہے۔حکومت نے مخصو ص ہسپتالوں میں معمول کی سرگرمیاں بند کرنے کا فیصلہ کیا ہے جبکہ باقی ہسپتالوں کو ضرورت پڑنے کی صورت میں آئیسولیشن او رکورنٹین مراکز میں تبدیل کیا جائے گا۔اِس سلسلے میں یہاں منعقدہ ایک میٹنگ کے دوران فیصلہ لیا گیا ۔ یہ میٹنگ فائنانشل کمشنر صحت و طبی تعلیم اتل ڈولو کی صدارت میں منعقد ہوئی جس میں کووِڈ ۔19سے نمٹنے کے لئے جاری سرگرمیوں کا جائزہ لیا گیا۔میٹنگ میں آئیسولیشن اور کورنٹین کی دستیابی کے لئے بنیادی ڈھانچے کی تیاری اور اِنسانی وسائل کو مزید متحرک کرنے کے بارے میں کئی فیصلے لئے گئے۔میٹنگ میں فیصلہ لیا گیا کہ کسی بھی ممکنہ صورتحال سے نمٹنے کے لئے آئیسولیشن بستروں اور کورنٹین سہولیات کو مز ید وسعت دی جارہی ہے۔تیاریوں کے حوالے سے حکومت نے کہاہے کہ جموںمیں گورنمنٹ ہسپتال گاندھی نگر کو مکمل طور کووڈ۔19ہسپتال میں منتقل کرنے کا فیصلہ لیا گیا ہے جس میں حال میں تعمیر شدہ 200بستروں پر مشتمل جدید بلاک بھی شامل ہیں۔حکومت نے فیصلہ لیا ہے کہ ستواری جموں کے جی بی پنت ہسپتال کو آئیسولیشن سہولیات کے لئے استعمال کیا جائے گا جبکہ نفسیاتی ہسپتال جموں کو بھی آئیسولیشن وارڈ میں تبدیل کیا جائے گا۔تاہم نفسیاتی ہسپتال کو فی الحال سی ڈی ہسپتال جموں منتقل کیاجائے گا۔کشمیر صوبے میں تیاریوں کے حوالے سے بتایا گیا کہ مختلف ہسپتالوں میں آئیسولیشن سہولیات قائم کرنے کے علاوہ حکومت نے سکمز میڈیکل کالج بمنہ ، سی ڈی ہسپتال سری نگر ، جے ایل این ایم ہسپتال سری نگر اور پولیس ہسپتال سری نگر کو مکمل طور آئیسولیشن مقاصد کے لئے استعمال کرنے کا فیصلہ لیا ہے۔حکومت نے گاندربل ، کپواڑہ ،پلوامہ اور شوپیان کے ضلع ہسپتالوں کو بھی آئیسولیشن بستروں کی تعداد میں اضافہ کرنے کی خاطر استعمال میں لانے کا فیصلہ کیا ہے۔اَتل ڈولو نے انسانی وسائل اور ضروری سازو سامان کو متحرک کرنے کی افسران کو ہدایت دی اور آئیسولیشن سہولیات کے مناسب کے لئے ڈاکٹر وں کی ڈیوٹی ترتیب دینے پر زور دیا۔اُنہوں نے کہا کہ ونٹیلٹروں کے استعمال اور کووڈ۔19 کے مشتبہ مریضوں کے علاج و معالجہ کے لئے طبی او ر نیم طبی عملے کو ضروری تربیت دی جائے گی۔ہسپتالوں کو ہدایت دی گئی ہے کہ وہ غیر لازمی سرگرمیوں کو فی الحال معطل کریں اور ہنگامی صورتحال پیدا ہونے کو روکنے کے لئے کام کریں۔حکومت نے کہا ہے کہ ممکنہ ہنگامی صورتحال سے نمٹنے کے لئے این ایچ ایم / آئی ایس ایم ڈاکٹروں اور ایم ایل پیز کی خدمات بھی حاصل کی جائیں گی۔میٹنگ میں فیصلہ لیا گیا کہ نیشنل ہیلتھ مشن کی جانب سے میڈیکل افسروں کے واک اِن انٹرویو کو جلد از جلد مکمل کیا جانا چاہیئے۔میٹنگ میں صوبائی کمشنر جموں سنجیوور، مشن ڈائریکٹر این ایچ ایم بھوپندر کمار ،ڈائریکٹر ہیلتھ جموں ڈاکٹر رینو شرما، پرنسپل جی ایم سی جموں ڈاکٹر سنندا رینہ ، نئے میڈیکل کالجوں کے ڈائریکٹر ڈاکٹریشپال شرمااور صحت و طبی تعلیم کے جوائنٹ ڈائریکٹر پلاننگ مدن لال موجو دتھے۔کشمیر صوبے کے متعلقہ افسروں نے ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے میٹنگ میں شرکت کی۔

تازہ ترین