جموں میں جنتاکرفیو کا ہر جگہ سختی سے نفاذ ،کٹھوعہ سے لیکر پونچھ تک ویرانی

شام کو لوگوں نے تالیاں اور تھالیاں بجاکر ہیلتھ ورکروں کاحوصلہ بڑھایا

تاریخ    23 مارچ 2020 (06 : 12 AM)   
(عکاسی: میر عمران)

سید امجد شاہ
جموں //وزیرا عظم نریندر مودی کی کال پر پورے صوبہ جموں میں ’جنتا کرفیو ‘کا سختی سے نفاذ رہا اور کٹھوعہ سے لیکر پونچھ اور کشتواڑ تک ویرانی چھائی رہی ۔اتوار کو جہاں سڑکیں سنسان نظر آئیں ،وہیں پبلک ٹرانسپورٹ کے علاوہ نجی گاڑیاں بھی سرے سے غائب رہی اور پولیس نے کئی جگہوں پر خار دارتاریں بچھاکر کرفیو کے نفاذ کو یقینی بنایا ۔صوبہ بھر میں عوام کی طرف سے بھی کورونا وائرس کے پیش نظر اعلان کئے گئے کرفیوسے بھرپور تعاون کیاگیا ۔اس دوران ادویات ، دودھ، کریانہ ، سبزی اور پھلوں کی دکانیں بھی بند رہیں جنہیں گزشتہ دنوں کھلا رکھاگیاتھا۔جموں شہر و دیگر قصبہ جات میں صورتحال یہ تھی کہ بازاروں اور سڑکوںپر صرف پولیس اور نیم فوجی  اہلکار ہی نظر آرہے تھے اور نہ ہی کوئی گاڑی دوڑتی نظرآئی اور نہ ہی لوگوں کی آمدورفت تھی ۔لوگ صبح سے لیکر شام تک پورا دن گھروں ہی کے اندر رہے اور کسی نے بھی باہر جانے کو ترجیح نہیں دی ۔جموں میں پچھلے دوروز بھی لاک ڈائون رہا لیکن اتوار کو مکمل طور پر سناٹا اور ویرانی تھی ۔اتوار کی شام 5بجے لوگ اپنے گھروں کی چھتوں ، گلیوں اور دیگر جگہوں پرسامنے آئے اور انہوںنے پٹاخے پھوڑنے کے ساتھ ساتھ تالیاں اور تھالیاں بجائیں ۔اس اقدام کا مقصد محکمہ صحت کی طرف سے کئے گئے کورونا مخالف اقدامات کی ستائش کرنا اور محکمہ کے عملے کی حوصلہ افزائی کرناہے ۔کئی شخصیات نے تالیاں اور تھالیاں بجاتے ہوئے اپنی تصاویراور ویڈیوز سوشل میڈیا پر بھی شیئر کیں جن میں جموں یونیورسٹی کے سابق وائس چانسلر پروفیسر رامجی شرما بھی شامل ہیں ۔
 

تازہ ترین