تازہ ترین

بچوں کے تحفظ سے متعلق اقدامات کا جائزہ لیا گیا

13 مارچ 2020 (00 : 01 AM)   
(      )

جموں// نیشنل کمیشن فار پروٹیکشن آف چایلڈ رائیٹس ( این سی پی سی آر) پریانک قانونگو نے اِنٹرڈیپارٹمنٹ و کنسلٹیشن میٹنگ کے انعقاد کے دوران جموںوکشمیر میں بچوں کے تحفظ سے متعلق کئے جارہے اقدامات کا جائزہ لیا گیا۔میٹنگ میں کمشنر سیکرٹری سکولی تعلیم اور سماجی بہبود ہردیش کمار ، ڈائریکٹر جنرل سماجی بہبود جموں / کشمیر ریحانہ بتول اور رخسانہ غنی ، مشن ڈائریکٹر جے کے آئی سی پی ایس شبنم شاہ کاملی ، منیجنگ ڈائریکٹر ایس سی / ایس ٹی / او بی سی / اقلیتی طبقے ، ڈی جی وومن چائیلڈ ڈیولپمنٹ طارق علی ، پروجیکٹ ڈائریکٹر سماگراہ شکھشا و مِڈڈے میلز ڈاکٹر ارون کمار منہاس ، ممبر سیکرٹری این سی پی سی آر روپالی بینرجی سنگھ ، ٹیکنیکل افسران و دیگر متعلقہ افسران نے شرکت کی۔جموںوکشمیر ہائی کورٹ کے جج جسٹس علی محمد ماگر ے جو جے اینڈ کے جسٹس جوینائل کمیٹی کے چیئرمین بھی ہیں نے ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے میٹنگ میں شرکت کی۔ میٹنگ کے دوران بچوں کے خلاف جرائم کے روکتھام اور بچوں کے حقوق کے تحفظ کے سلسلے میں آئی سی پی ایس کی طرف سے کئے جارہے اقدامات پر سیر حاصل بحث ہوئی ۔ میٹنگ میں بتایا گیا کہ ڈسٹرکٹ چائلڈ پروٹیکشن یونٹ ، چائلڈ ویلفیئر کمیٹیاں اور جوینائل جسٹس بورڈ جموںوکشمیر کے سبھی 20اضلاع میں قائم کئے گئے ہیں ۔میٹنگ کے دوران آنگن واڑی مراکز بچوں کو فراہم کئے جارہے معیاری خورد نوش اور بچوں کے تحفظ سے متعلق مختلف قوانین کی عمل آوری پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا۔اس سے قبل جسٹس علی محمد ماگر ے نے جموں وکشمیر میں نشیلی ادویات کے استعمال کو روکنے کے سلسلے میں اہم اقدامات اٹھانے پر زور دیا ۔میٹنگ کے دوران نشیلی ادویات سے متاثرہ اور جنسی تشدد کے شکار بچوں کی باز آباد کاری پر بھی غور کیا گیا۔کمشنر سیکرٹری ہردیش کمار نے اس موقعہ پر کہا کہ تمام ہومز کا طبی آڈِٹ محکمہ سماجی بہبود کی طرف سے ایک ماہ کے اندر مکمل کیا جائے گا تاکہ اِن ہومز میں قیام پذیر بچوں کو بہتر سہولیات فراہم کی جاسکیں۔میٹنگ سے خطاب کرتے ہوئے این سی پی سی آر کے چیئرپرسن نے بچوں کے تحفظ سے متعلق سکیموں کا زیادہ سے زیادہ استفادہ کرنے کی خاطر منسلک محکموں کو محکمہ سماجی بہبود کے ساتھ اشتراک کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔
 

تازہ ترین