مزید خبریں

تاریخ    10 جولائی 2019 (00 : 01 AM)   


نیو ڈسک

۔CRPFکے ایڈیشنل ڈائریکٹر جرنل گورنر سے ملاقی

 داخلی سلامتی کی صورتحال کی جانکاری دی

سرینگر//سی آر پی ایف جے اینڈ کے، کے ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل ذوالفقار حسن نے یہاں راج بھون میں گورنر ستیہ پال ملک کے ساتھ ملاقات کی۔انہوں نے گورنر کو ریاست میں داخلہ سلامتی کی صورتحال کو برقرار رکھنے اور جاری امر ناتھ یاترا کے دوران سی آر پی ایف کے رول کے بارے میں جانکاری دی۔گورنر نے ریاست میں داخلہ سلامتی کی صورتحال برقرار رکھنے کے لئے سی آر پی ایف کے رول کو اُجاگر کرتے ہوئے کہا کہ تمام سطحوں پرچوکسی برقرار رکھی جانی چاہئے۔
 
 
 

 امر ناتھ یاترا کے راستوں پر پہاڑی بچائو ٹیموں کے رول کی سراہنا

سرینگر //گورنر ستیہ پال ملک نے امر ناتھ کی پوتر گپھا تک یاتریوں کی معاونت کے لئے مونٹین ریسکیو ٹیموں کے رول کی سراہنا کی ہے۔ گورنر نے کہا کہ یہ ٹیمیں اونچائی اور دشوار گذار پہاڑی راستوں پر جان کی بازی لگا کر کئی انسانی جانوں کو بچاتی ہیں اور یاتریوں کی معاونت کے لئے پیش پیش رہتی ہیں۔انہوں نے کہا کہ یاترا شروع ہونے سے پہلے یہ ٹیمیں دشوار گذار راستوں پر اپنے کیمپ قائم کرتی ہیں اور8 سے10 فُٹ برف اور انتہائی خراب موسمی صورتحال،برفباری اور جنگلی جانوروں کے حملوں کا مقابلہ کرتی ہیں جو قابل سراہنا ہے۔یہ ٹیمیں ریاستی پولیس کی طرف سے پہلی دفعہ2009 میں امر ناتھ کی یاترا کے لئے تعینات کی گئی تھیں تب سے یہ ٹیمیں ہر برس این ڈی آر ایف، ایس ڈی آر ایف اور سی آر پی ایف کے ہمراہ تعینات کی جاتی ہیں۔انسانی جانوں کو بچانے میں انتہائی اہم رول ادا کرنے پر ہر برس ان ٹیموں کی تعداد بڑھائی جاتی رہی ہے اور2018 میں25 ٹیمیں تعینات کی گئی تھیں جبکہ رواں برس ایسی31 ٹیمیں بال تل اور پہلگام کے راستوں پر تعینات کی گئی ہیں۔ اس کے علاوہ ہر ایک ٹیم میں اہلکاروں کی تعیناتی میں بھی اضافہ کیا گیا ہے۔ریاستی پولیس کے1200 جوان پہاڑی اور دشوار گذار برفیلے راستوں میں مونٹین ریسکیو کاروائیوں کے لئے تربیت یافتہ ہیں جن میں سے140 سے150 تک ہربرس جسمانی اور ذہنی تندرستی کی بنا پر یاترا ڈیوٹی کے لئے تعینات کئے جاتے ہیں۔ اُن کی تعیناتی سے پہلے سرکار کی طرف سے بنیادی لائف سپورٹ سسٹم ، فسٹ ایڈ اور دیگر طرح کے ریفریشر کورس منعقد کئے جاتے ہیں۔2018 میں تعینات2 ٹیموں کے مقابلے میں اس برس چار ٹیمیں ایم جی پاس پر تعینات کی گئی ہیں جو یاتریوں کو14 ہزار فُٹ کی بلندی کو پار کرنے میں مدد دیتی ہیں۔اس کے علاوہ ریل پتھری اور براری مرگ کے درمیان ایک اضافی ٹیم بھی تعینات ہے۔ریاستی پولیس، این ڈی آر ایف، ایس ڈی آر ایف اور سی آر پی ایف کی31 ٹیمیں پورے یاترا راستے پر تعینات ہیں اور ہر ٹیم کو ضروری سازو سامان سے لیس کیا گیا ہے۔ہر ایک ٹیم 10 سے14 ممبروں پر مشتمل ہے جن میں2 آپریٹر، وی ایچ ایف فون اور واکی ٹاکی پر دیگر ممبران کے ساتھ تال میل بنائے رکھتے ہیں۔ یہ ٹیمیں یاتریوں کو دشوار گذار کراسنگ پار کرنے اور نزدیکی کیمپوں تک پہنچنے میں مدد دیتی ہیں۔ہر ایک ٹیم اپنے حد اختیار والے علاقے میں کام کرتی ہے اوراس طرح سے شیش ناگ، واؤ بل، مہا گُنس ٹاپ، پوش پتھری، کیلنار، ددرکوٹ، سنگم ٹاپ، پوتر گپھا، وائی جنکشن، براری مرگ اور ریل پتھری پر یہ ٹیمیں تعینات ہیں۔2019 کی یاترا کے دوران ابھی تک225 ریسکیو آپریشن انجام دیئے گئے ہیں اور کئی انسانی جانوں کو بچایا گیا ہے۔
 
 
 

خطہ کی سلامتی کیلئے پاکستان کے ساتھ مفاہمانہ تعلقات ضروری

سابق فوجیوں کے سمینار میں ریٹائرڈ میجرل جنرل کول کا زور

؎بنگلورو//پاکستان کوایک حقیقت کے طور تسلیم کرنے کی ضرورت ہے اور اُس کے ساتھ مذاکرات پر مبنی صحت مند دوستانہ تعلقات قائم کرنا لازمی ہیں ۔ان باتو ںکااظہار میجر جنرل ٹی کے کول ایگزیکٹیو پریذیڈنٹ انڈیا پاکستان سولجرس فار پیس(آئی پی ایس آئی) نے بنگلور میں ایک سمینار سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔انہوں نے معاصرحکمت عملی کے منظر نامے میں امن کی وضاحت کرتے ہوئے ہندوپاک تعلقات خاص طور سے جموں کشمیرکے حوالے سے مختلف گوشوں پر مفصل روشنی ڈالی ۔ انہوں نے ماضی کی یادوں کاذکر کیا، جب دونوں ملکوں کے وفود اور فوجی افسر ایک دوسرے کے ملک کادورہ کیاکرتے تھے اور فوج کے سابق افسر جو کبھی اپنے ملک کی سرحدوں کی نگہبانی کیاکرتے تھے ،ایک دوسرے سے ہاتھ ملاتے تھے اور ایک ہی چھت تلے چائے نوش کرتے تھے ۔ کول نے صحت مند ہند پاک تعلقات کی تشریح کرتے ہوئے کہا کہ ہمیں پاکستان کو ایک خودمختار ہمسایہ کے طور تسلیم کرنا چاہیے اوراس کے ساتھ بلا رکاوٹ مذاکرات جاری رکھنے چاہیے اورکشمیری نوجوانوں میں پائے جارہے احساس بیگانگی کو دور کرنا چاہیے اور اُنہیں مین اسٹریم سیاست اور سماج کے ساتھ یکجا کرناچاہیے ۔ جنرل کول کے پر مغز خطاب کے بعدمہمان خصوصی ڈاکٹر جے الیگزانڈر نے آئی پی ایس آئی کی اُن کاوشوں کو سراہا جو وہ سیاسی تنائو کے بیچ ہند پاک خلیج کو پاٹنے کیلئے کررہا ہے ۔ اس موقعہ پر کلیدی مقرر اے وی ایم کپل کاک نے امن عمل میں سیاسی رکاوٹوں کا جائزہ لیا اور کشمیر مسئلہ کوبات چیت کے ذریعے حل کرنے پرزوردیا ۔لیفٹنٹ جنرل ایس این ہانڈا نے باہمی تعلقات کواستوار کرنے میںکام آنے والی علاقائی سطح کی سیاسی اورفوجی حکمت عملی کی وجوہات کاجائزہ لیااورخطے میں اُبھر رہے سلامتی منظر نامے پر ہندپاک تعلقات کے اثرات کوبیان کیا۔ تقریب کا اختتام جنرل کول کے ان جذباتی تاثرات پر ہوا کہ کشمیری عوام تک پہنچنے کیلئے افہام وتفہیم اورمصالحت کا جذبہ اختیار کرنے کی ضرورت ہے ۔
 
 

شاہراہ پر قدغن | فیصلہ منسوخ نہ کیا گیا توسپریم کورٹ جائیں گے:مظفر شاہ

سری نگر//عوامی نیشنل کانفرنس کے سینئر نائب صدر ایڈوکیٹ مظفر شاہ نے بتایا کہ مرکزی وریاستی حکومتوں کو یاترا کے دوران عوامی نقل و حرکت پر قدغن عائد کرنے کی کارروائیوں پر شدید برہمی کا اظہار کرتے ہوئے اگر حکومت نے ان عوام دشمنانہ فیصلوں کوفوری طور پر منسوخ نہیں کیا تو پارٹی سپریم کورٹ میں مفاد عامہ کی عرضی دائر کریگی۔ ایڈوکیٹ مظفر شاہ نے منگلوار کو ذرائع ابلاغ کے نمائندوں سے بات چیت کے دوران سرینگر جموں شاہراہ پر یاترا کے دوران عوامی نقل وحرکت پر قدغن عائد کرنے کی کارروائیوں پر شدید برہمی کا اظہار کیا۔ انہوں نے بتایا کہ مرکزی اور ریاستی حکومت نے مشترکہ طور پر ایسے عوام دشمن اقدامات اُٹھائے جن سے کشمیریوں کی زندگی اجیرن بن گئی۔ انہوں نے کہا کہ اگر حکومت اپنی ضد اور ہٹ دھرمی پر ڈٹی رہتی ہے تو بہتر رہے گا کہ یہاں کے تمام تعلیمی و کاروباری اداروں کیساتھ ساتھ سیاحتی شعبے کو بھی 46دنوں تک بند رکھا جائے۔ انہوں نے کہا کہ سرکار کے ان آمرانہ فیصلوں سے سڑکوں پر تباہی کے مناظر عیاں ہے جبکہ عوام بالخصوص بچوں کے ذہنوں پر منفی اثرات مرتب ہوئے ہیں۔انہوں نے مرکزی و ریاستی حکومتوں کو خبردارکرتے ہوئے کہا کہ اگر فوری طور پر ان عوامی کش فیصلوں کو منسوخ نہیں کیا تو عوامی نیشنل کانفرنس سپریم کورٹ میں مفاد عامہ سے متعلق عرضی دائر کرنے میں نہیں ہچکچائے گی۔
 
 
 

مغربی فضائی کمان کے سربراہ کا دورہ ٔ جموں

سیکورٹی صورتحال اور آپریشنل تیاریوں کا جائزہ لیا 

جموں //مغربی فضائی کمان کے کمانڈنگ ان چیف ایئر مارشل رگھوناتھ نمبیارنے جموں میں فضائی سیکورٹی صورتحال کا جائزہ لیا اور فضائیہ کے اہلکاروں کی اعلیٰ سطحی سیکورٹی نظام اورآپریشنل تیاریوں کیلئے سراہنا کی ۔دفاعی ترجمان کے مطابق ایئرمارشل نے ایئرفورس اسٹیشن کا دورہ کرکے سینئر افسران اور تمام یونٹوں کے کمانڈنگ افسران کے ساتھ تبادلہ خیال کیا ۔اس کے علاوہ انہوں نے فضائی دورہ کرکے اہلکاروں کی تعیناتیوں کا معائنہ بھی کیا۔انہیں اس دوران سیکورٹی کی صورتحال کے بارے میں تفصیل سے آگاہ کیاگیا اور انہوں نے ملک کی حفاظت کیلئے فضائیہ کی تیاریوں کی سراہنا کی ۔ترجمان نے بتایاکہ انہوں نے اسٹیشن کے سیکورٹی نظام کاجائزہ بھی لیا ۔انہوں نے فضائیہ کے اہلکاروں سے خطاب کرتے ہوئے ان کی خدمات خاص طور پر ڈیوٹی کے علاوہ انسانی امدادی کاموں اور ڈیزاسٹر ریلیف مشن کے امور پر سراہنا کی ۔ترجمان کے مطابق ایئرمارشل نے ایئر فورس کے جموں اسٹیشن میں آپریشنل تیاریوں، اعلیٰ سطحی سیکورٹی نظام اور اہلکاروں کے بلند حوصلے پر سراہنا کی ۔تاہم انہوں نے اس بات کی ہدایت دی کہ کسی بھی قسم کی کارروائی کا کم سے کم وقت میں جواب دینے کیلئے تیاری رکھی جائے اورچیلنجوں کا مقابلہ کیاجائے ۔
 
 
 

فوجی وردی پہنیں اورنہ ہی فروخت کریں 

کشتواڑ میں پولیس کی عام لوگوں ودکانداروںسے اپیل 

کشتواڑ //کشتواڑ میں پولیس نے عام لوگوں کو فوجی وردی نہ پہننے کی اپیل کرتے ہوئے دکانداروں کو ہدایت جاری کی ہے کہ وہ اس طرح کے کپڑوں کی فروخت نہ کریں کیونکہ فوجی وردی میں ملبوس ہوکر جنگجو اپنے مذموم مقاصد پورے کرسکتے ہیں ۔پولیس نے ضلع کے نوجوانوں سے کہاہے کہ وہ اس ہدایت کو سوشل میڈیا پر عام کریں تاکہ فوجی وردی کا غلط استعمال نہ ہوسکے ۔ایک بیان کے ذریعہ پولیس نے عوام سے اپیل کی کہ وہ فوجی وردی نہ پہنیں جبکہ دکانداروں کو ہدایت دی گئی ہے کہ وہ اس طرح کے کپڑوں کو فروخت نہ کریں کیونکہ وطن دشمن عناصر یا جنگجو ایسے کپڑوں کا استعمال کرکے اپنے مذموم مقاصد انجام دے سکتے ہیں ۔کشتواڑ میں گزشتہ برس کے اواخر بی جے پی لیڈر اوراس کے بھائی اورپھر آرایس ایس کارکن واس کے محافظ کی ہلاکت کے بعد کشتواڑ میں سیکورٹی مزید سخت کردی گئی ہے ۔ان ہلاکت خیز واقعات کے علاوہ 8مارچ کو ایک پولیس اہلکار سے اس کی رائفل چھین لی گئی تھی ۔حال ہی میں انسپکٹر جنرل آف پولیس جموں ایم کے سنہا نے کہاتھاکہ ضلع میں دس مقامی جنگجو جن میں آٹھ کا حزب المجاہدین اور دو کا تعلق لشکر طیبہ سے ہے،سرگرم ہیں ۔ان جنگجوئوں کے ساتھ دو مرتبہ سیکورٹی فورسز کی جھڑپیں بھی ہوچکی ہیں لیکن وہ فرار ہونے میں کامیاب ہوئے ۔
 
 
 

خواتین اور بچوں کے حقوق کا کمیشن

وسندرا پاٹھک مسعودی چیئرپرسن مقرر

سر ی نگر//گورنر ستیہ پال ملک کی صدارت میں یہاں ریاستی اِنتظامی کونسل کی ایک میٹنگ منعقد ہوئی جس میں وسندرا پاٹھک مسعودی کو جموں اینڈ کشمیر سٹیٹ کمیشن فار پروٹیکشن آف وومن اینڈ چائیلڈ رائٹس کا چیئرپرسن مقرر کرنے کو منظوری دی گئی ۔جے کے ایس سی پی ڈبلیو سی آر ایکٹ 2018 کے تحت سٹیٹ کمیشن فار پروٹیکشن آف وومن اینڈ چائیلڈ رائٹس کے علاوہ عدالتوں کو تشکیل دینے کا اختیار دیتا ہے تاکہ خواتین اور بچوں کے خلاف ہو رہی زیادتیوں کے معاملات کو تیز تر طریقے پر حل کرنے کی سہولیات فراہم ہوں۔وسندرا پاٹھک مسعودی سپریم کورٹ آف انڈیا ،دلی ، پنجاب ، ہریانہ اور جموں وکشمیر کے ہائی کورٹوں میں ایک پُر وقار وکیل کی حیثیت سے اپنے فرائض دے رہی ہے ۔وہ خواتین اور بچوں کے حقوق کے تحفظ کو یقینی بنانے اور خواتین اور بچوں کے معاملات کو حل کرنے کی وعدہ بند ہے ۔اُنہوں نے اب تک خواتین کے خلاف کئی زیادتیوں کے معاملات حل کئے ہیں۔چیئرپرسن کی تقرری سے کمیشن خواتین اور بچوں کے حقوق کے ساتھ خلاف ورزیوں کے کئی معاملات کو حل کرنے کا عمل شروع کرے گا۔
 
 
 

بی جے پی خواتین کو سیاسی ریزرویشن دینے کی متمنی: مادھو

جموں//بی جے پی کے قومی جنرل سکریٹری رام مادھو نے کہا کہ ان کی جماعت خواتین کو بااختیار بنانے کے لئے انہیں سیاسی ریزرویشن دینے کی متمنی ہے۔مادھو نے کہا کہ بی جے پی نے پارٹی کے ڈھانچے کی تشکیل کے لئے خواتین کو 33 فیصد ریزرویشن دی ہے اور پارٹی خواتین کو سیاسی ریزرویشن دینے کے حق میں ہے تاکہ وہ پارلیمنٹ اور اسمبلیوں میں بھی حصہ لے سکیں۔انہوں نے ان باتوں کا اظہار جموں کشمیر بی جے پی سٹیٹ مہیلا مورچا کی یک روزہ ورکنگ کمیٹی میٹنگ کے دوران کیا۔مادھو نے کہا کہ وزیر اعظم نریندر مودی کی حکومت نے ملک بھر میں خواتین کی مالی ومعاشرتی ترقی کے لئے کئی اسکیمیں لانچ کی جنہیں کافی پذیرائی حاصل ہوئی۔انہوں نے کہا کہ بی جے پی خواتین کے تحفظ اور ان کے حقوق کے لئے بے حد فکر مند ہے اور گزشتہ پانچ برسوں کے دوران اس سلسلے میں لانچ کی گئی مختلف اسکیمیں اس کی عکاس ہیں۔اس دوران بی جے پی کے ریاستی صدر رویندر رینہ نے بھی اظہار خیال کیا اور کہا کہ بی جے پی کے قیام کا مقصد تمام لوگوں کو با اختیار بنانا ہے ۔
 
 
 

انسانی حقوق کمیشن کا حکم صادر | محکمہ داخلہ کے ڈپٹی سیکریٹری کیخلاف وارنٹ جاری

سرینگر// بشری حقوق کے ریاستی کمیشن نے لبریشن فرنٹ کے چیئرمین محمد یاسین کی مسلسل گرفتاری کے کیس میں کمیشن کے پاس پیش ہونے میں ناکامی کی پاداش میںمحکمہ داخلہ کے ڈپٹی سیکریٹری کے نام ضمانتی وارنت جاری کی۔ انٹرنیشنل فورم فار جسٹس کے چیئرمین محمد احسن اونتو کی طرف سے کمیشن کے پاس اس سلسلے میں پیش کی گئی درخواست کی سماعت کے دوران بشری حقوق کمیشن کی ممبر دلشادہ شاہین نے یہ وارنٹ جاری کی۔ عرضی گزار نے کمیشن کے سامنے یہ دلیل دی کہ محکمہ داخلہ کے ڈپٹی سیکریٹری کے نام نوٹس کے باوجود بھی انہوں نے اپنا ردعمل پیش نہیں کیا۔کمیشن کی ممبر نے اس سلسلے میں حکم نامہ جاری کرتے ہوئے کہا’’ ڈپٹی سیکریٹری داخلہ کے نام ضمانتی گرفتاری کی وارنٹ مبلغ2ہزار روپے جاری کی جائے،جس کا اطلاق پولیس تھانہ شہد گنج کے ایس ایچ ائو کریں گے۔‘‘ اس کیس کی سماعت کی تاریخ سماعت15جولائی کو مقرر کی گئی۔
 
 
 
 

غلط ٹیسٹ رپورٹ دینے کا شاخسانہ | نجی تشخیصی لیبارٹری کیخلاف کارروائی

سرینگر//کشمیر میں قائم نجی تشخیصی لیبارٹریوں کی جانب سے مریضوں کو غلط رپوٹیں فراہم کرکے موٹی رقومات وصول کرنے کے ایک اور واقعہ کا پردہ فاش کرتے ہوئے محکمہ لیگل میٹرولوجی نے سرینگر میں ایک صارف کی شکایت پر تشخیصی لیبارٹری کی جانب سے خون میں TSHکی مقدار زیادہ دکھانے کی شکایت درج کرائی۔ محکمہ لیگل میڑولوجی کی جانب سے جاری کئے گئے بیان میں کہا گیا ہے کہ مریض کو بتایا گیا تھا کہ وہ thyriodکی بیماری کی گرفت میں ہے مگر مریض نے ادویات کا استعمال کرنے سے قبل دیگر دو لیبارٹریوں سے دوبارہ تشخیصی ٹیسٹ کرائی جنہوں نے خون میں TSHکی لیول کو کافی کم بتایا ۔بیان میں بتایا گیا ہے کہ محکمہ کے افسران نے TSHلیول زیادہ دکھانے والے لیبارٹری کا دورہ کیا مگر وہاں موجود افراد نے اپنی غلطی تسلیم کرنے کے بجائے محکمہ لیگل میٹرولاجی کے افسران کے ساتھ بدتمیزی کی جس کے بعد محکمہ لیگل میٹرولاجی نے جموں و کشمیر کنزومر اپروٹیکشن ایکٹ کے تحت کاروائی کرنے کا فیصلہ کیا اور کیس کو کنزومر کورٹ میں لینے کا فیصلہ کیا تاہم بعد میں دونوں فریقین آپسی رضامندی سے کیس حل کرنے پر راضی ہوئے۔ مذکورہ تشخیصی لیبارٹری کے مالکان نے صارف سے معافی مانگنے کے مریض کو 5ہزار روپے دئے جبکہ محکمہ لیگل میٹرولاجی نے مذکورہ لیبارٹری کے خلاف 2ہزار روپے کا بھی جرمانہ عائد کیا۔ 
 
 
 
 
 
 
 
 

کشمیر میں انسانی حقوق کی صورتحال 

اقوام متحدہ کی رپورٹ اہمیت کی حامل:حریت ع

سرینگر// حریت (ع) نے اقوام متحدہ انسانی حقوق کونسل(UNHRC)کی طرف سے کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں سے متعلق تازہ رپورٹ کو انتہائی اہمیت کا حامل قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ رپورٹ مذکورہ میں ایک بار پھر کشمیر میںہو رہی انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کو دہراتے ہوئے ماضی میں ہوئی اور اب ہو رہی انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کی طرف توجہ دینے اور کشمیری عوام کو انصاف فراہم کرنے کی بات کی گئی ہے ۔ حریت نے کہا ہے کہ ہندوستان اور پاکستان دونوں کو چاہئے کہ  مذکورہ رپورٹ اور ۲۰۱۸ء کی رپورٹ میں تجویز کئے گئے اقدامات پرعمل کرکے اس صورتحال کا  تدارک کیا  جائے۔حریت نے ہندوستان اور پاکستان دونوں پر زور دیا ہے کہ آپسی رابطہ قائم کرکے اور کشمیری عوام کوساتھ لیکر اقوام متحدہ میں تسلیم شدہ مسئلہ کشمیر کو حل کرنے کیلئے مثبت اقدامات کریں تاکہ کشمیرمیں تمام طرح کی خونریزی اور انسانی حقوق کی پامالیوں کو ختم کرکے انسانیت کو فروغ دیا جائے۔اس دوران حریت نے مختلف جیلوں میں مقید کشمیری سیاسی قیدیوں کی گرتی ہوئی صحت اور جموںوکشمیر لبریشن فرنٹ کے چیرمین جناب محمد یاسین ملک کی NIAکی جانب سے عدالتی حراستی میں توسیع پرتشویش کا اظہار کیا ہے ۔
 
 
 

نشیلی ادویات ہیپٹائٹس وباء کی بڑی وجہ:ڈاک

سرینگر//ڈاکٹرز ایسوسی ایشن آف کشمیر نے کہا ہے کہ کشمیر صوبے میں Hapititus  کی بیماری نشیلی ادویات کے استعمال سے کافی تیزی سے پھیل رہی ہے۔ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن آف کشمیر کے صدر ڈاکٹر نثارالحسن نے کہا ’’نشیلی ادویات کا استعمال کرنے سے  Hapititus اور ایچ آئی وی کی بیماری تیزی سے پھیلتی ہے اور ان افراد کی وجہ سے یہ جان لیوا بیماریاں دوسرے افراد میں بھی کافی تیزی سے پھیلتی ہے‘‘۔  ڈاکٹر نثارالحسن نے کہا کہ صدر اسپتال سرینگر میں موجود ڈرگ ڈی ایڈکیشن سینٹر میں سال 2018-19کے دوران ملاحظہ کیلئے آنے والے مریضوں میں 61 میں Hapititus C، 17مریضوں میں Hapititus B اور ایک مریض ایچ آئی وی کے شکار ہوگئے ہیں‘‘۔ ڈاکٹر نثارالحسن نے کہا کہ یہ اعدادوشمار بالکل کم ہے کیونکہ زیادہ ترمریض علاج و معالجہ کیلئے سامنے نہیں آتے اور نہ ہی تشخیصی ٹیسٹ کرانے میں دلچسپی دکھاتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ نشے کا عادی نوجوان Hapititus کی بیماری کو 3سال کے اندر 20افراد میں منتقل کردیتا ہے جسکی وجہ سے بیماری کافی تیزی سے پھیل رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ کشمیر میں جہاں سبھی نشیلی ادویات کے  بڑھتے ہوئے اثرات کی بات کررہے ہیں مگر نشیلی ادویات کی وجہ سے ہونے والے بیماریوں جن میں Hapititusاور ایچ آئی وی شامل ہے کی وجہ سے بیماریاں پھیلنے کا خطرہ بھی لاحق ہے۔ انہوں نے کہا کہ کشمیر میں Hapititus بیماری کے پھیلائو کی ایک وجہ نشیلی ادویات کا استعمال بھی ہے۔ انہوں نے کہا کہ سال 2017میں گورنمنٹ ڈینٹل کالج سرینگر کی جانب سے 2000مریضوں پر مشتتمل تحقیق میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ 12فیصد مریضوں میں Hapititus B اور Hapititus Cکی بیماری موجود ہے۔ انہوں نے کہا کہ ماگام کے تکیہ گائوں اور سونبری اننت ناگ میں 38فیصد آبادی Hapititus Cکی بیماری سے جونجھ رہے ہیں۔ ڈاکٹر نثارالحسن نے کہا ’’ شوپیاں کے وئل علاقے میںسال  2018کے دوران کی گئی تحقیق میں  420افراد میں Hapititus B اور Hapititus Cکے شکار تھے۔ انہوں نے کہا کہ شیرکشمیر انسٹیچوٹ آف میڈیکل سائنسز صورہ میں460افراد ایچ آئی وی کی بیماری سے جونجھ رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ان بیماریوں سے نہ صرف نشیلی ادویات کا استعمال کرنے والے افراد کو خطرہ لاحق ہے بلکہ پوری آبادی خطرے میں ہے۔ انہوں نے کہا ’’ یہ ایک بارود ہے جو کبھی بھی پھٹ سکتا ہے‘‘۔
 
 
 

صوبائی کمشنر نے بارہمولہ اور کپوارہ میں ترقیاتی سکیموںکی پیش رفت کاجائزہ لیا

سرینگر//صوبائی کمشنر کشمیر بصیرا حمد خان نے دوالگ الگ میٹنگو ںمیں بارہمولہ اور کپوارہ اضلاع میں ترقیاتی سکیموں اور پروگراموںکی پیش رفت کاجائزہ لیا۔میٹنگوںمیں ترقیاتی کمشنر بارہمولہ،ترقیاتی کمشنرکپوارہ،ڈی آئی جی نارتھ کشمیر،ایس ایس پیز بارہمولہ،سوپور،کپوارہ اور ہندوارہ ،اے ڈی سیز ،ایس ڈی ایمز اورمختلف انجینئرینگ محکموںکے سربراہان،نیز ڈسٹرکٹ وسیکٹورل آفیسران بھی موجود تھے۔بارہمولہ میں میٹنگ کے دوران ترقیاتی کمشنر نے ایک پاور پوائنٹ پرزنٹیشن کے ذریعے ضلع میں مختلف شعبو ں کے تحت حصولیابیوں کو اجاگر کیا۔انہوںنے کہا کہ ضلع بارہمولہ میںفلیگ شِپ پروگراموںاوردیگر ترقیاتی کاموں میں مثالی حصولیابی ہوئی ہے۔مطالبات کے ردعمل میںصوبائی کمشنر نے یقین دہانی کرائی کہ تمام معاملات کو معیاد بند مدت میںپورا کیاجائے گا۔انہوںنے مختلف پروجیکٹوں اورترقیاتی کاموں کا تفصیلی جائزہ بھی لیا۔انہوںنے سماجی اوراقتصادی ترقی کے لئے تمام پروجیکٹوں کی عمل آوری کے سلسلے میںآفیسران کو قریبی تال میل کے ساتھ کام کرنے کی تلقین کی۔بعد میںصوبائی کمشنر کپوارہ کا دورہ کرکے ضلع میں ترقیاتی پیش رفت اورحصولیابیوں کاجائزہ لیا۔جس دوران ترقیاتی کمشنر  نے ضلع میںمختلف شعبوں کے تحت ہورہی پیش رفت کے بارے میں جانکاری دی۔ترقیاتی کمشنر نے صوبائی کمشنر کو مختلف ترقیاتی تقاضوں کے بارے میںآگاہ کیا اورصوبائی کمشنر کی توجہ طلب کی۔اس دوران صوبائی کمشنر نے وسائل کا منصفانہ استعمال کرنے کی ضرورت پر زوردیا تاکہ ترقیاتی محاذ پر متوقع نتائج بر آمد ہوسکیں۔انہوںنے جدید زرعی سرگرمیوں کے لئے نئے سائینسی طریقہ کار کو متعارف کرنے کی ضرورت پر زوردیا۔انہوںنے مختلف سطحوں پر سیلف ہیلپ گروپس کا قیام عمل میںلانے کی بھی ہدایت دی تاکہ بیروزگار نوجوانوں کے لئے روزگار کے مزید اور بہتر وسائل دستیاب ہوسکیں۔
 
 
 

بیگم عبداللہ کی برسی اور 13 جولائی کی تقریب

نیشنل کانفرنس نے پروگرام کو حتمی شکل دی

سرینگر//نیشنل کانفرنس نے11جولائی بیگم شیخ محمد عبداللہ کی 19ویں برسی اور 13جولائی کو یوم شہداء کے پروگراموں کو حتمی شکل دی ۔ایک بیان کے مطابق اس سلسلے میں پارٹی کا ایک اجلاس صوبائی صدر ناصر اسلم وانی کی صدارت میں منعقد ہوا۔ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے ناصر اسلم نے بیگم عبداللہ کو خراج عقیدت ادا کرتے ہوئے کہا کہ اللہ نے مرحومہ کو سیاسی سوجھ بوجھ سے نوازا تھا۔انہوں نے اس موقعہ پر 13جولائی 1931کے شہداء کو خراج عقیدت اداکرتے ہوئے کہا کہ ان شہداء کی قربانیوں کی بدولت ریاست کے لوگوں کو عزت نفس اور اونچا مقام حاصل ہوا۔انہوں نے کہا کہ ان شہداء کی بدولت ہی ریاست میں جمہوری کی بنیاد اور عوامی حکومت قائم ہوئی۔سوگامی نے کہا کہ ان دو تقاریب کے بارے میں پارٹی نے 2الگ الگ پروگرام ترتیب دئے ہیں۔ پروگرام کے مطابق 11جولائی کو بیگم عبداللہ کے مقبرہ واقع نسیم باغ میںصبح سویرے قرآن خوانی کی مجلس آراستہ ہوگی جبکہ اجتماعی فاتحہ خوانی میں پارٹی صدر ڈاکٹر فاروق عبداللہ ،نائب صدر عمر عبداللہ اور پارٹی سے وابستہ سینئر لیڈران کے علاوہ کارکنان بھی شرکت کریں گے۔اسی طرح 13جولائی کو خواجہ بازار میں مزارِ شہداء پر فاتحہ خوانی اور گلباری کی جائے گی۔ دریں اثناء نیشنل کانفرنس خواتین ونگ صوبہ کشمیر کا بھی ایک خصوصی اجلاس پارٹی ہیڈکوارٹر پر منعقد ہوا جس کی صدارت ونگ کی ریاستی صدر شمیمہ فردوس نے کی ۔انہوںنے کہا کہ بیگم عبداللہ نے ریاست میں تعلیم نسواں کو فروغ دینے میں جو تاریخی رول ادا کیا ہے وہ ناقابل فراموش ہے۔ 
 
 
 
 
 

گرمیوں میں شدت | سکولوں میں گرمائی تعطیلات کامطالبہ کیا

سرینگر//نجی اسکولوں کی مشترکہ کارڈی نیشن کمیٹی نے وادی میں فوری طور اسکولوں میں گرمائی تعطیلات کااعلان کرنے کا مطالبہ کیا ہے ۔ایک بیان میں نجی اسکولوں کی مشترکہ کارڈنیشن کمیٹی کے صدر شوکت احمد چودھری نے کہا کہ وادی میں درجہ حرارت میں مسلسل اضافہ ہورہا ہے  اور اسکولوں میں طلاب کا تعلیم پر توجہ مرکوزرکھنا مشکل ہوگیا ہے ۔انہوں نے کہا کہ ماضی میں حکومت نے جولائی کے پہلے ہفتے میں ہی اسکولوں میں گرمائی تعطیلات کااعلان کیاتھا اور اس بار اس میں تاخیر نہیں کی جانی چاہئے ۔انہوں نے حکام سے اپیل کی کہ وہ اسکولوں میں فوری طور گرمائی تعطیلات کااعلان کریں تاکہ طلاب راحت کی سانس لے سکیں۔
 
 
 
 
 
 

کرپشن کے خاتمہ کیلئے سنجیدگی لازمی:آغا حسن

سرینگر// انجمن شرعی شیعیان کے صدر آغا سید حسن نے کہا ہے کہ ریاست میں کرپشن کے خاتمے کے لئے سرکاری اعلانات ہمیشہ سر اب ثابت ہوئے ہیں اور آئندہ بھی کوئی توقع نہیں ہے کہ سرکار اس معاملے میں کوئی سنجیدہ کاروائی یا پالیسی عمل میں لائے گی۔ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ کرپشن کی لعنت نے کشمیری عوام کا قافیہ حیات تنگ کر رکھا ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ ارباب اقتدار اوربیوروکریسی کے ہاتھوں خرد برد اور خزانہ عامرہ کی لوٹ کھسوٹ ایک خلی کتاب کے مانند ہے۔ آغا حسن نے کہا کہ جب بھی کبھی کرپشن میں ملوث افراد کے خلاف کاروائی عمل میں لانے کا ارادہ ظاہر کیا گیا تو سیاسی مصلحتوں اور مجبوریوں کے آگے بے بس ہو کر اُن کاروائیوں کو روک دیا گیا۔
 
 
 

آئی ٹی آئی کیلئے ایڈمشن پورٹل کی شروعات 

سرینگر//گورنر کے مشیر خورشید احمد گنائی نے طلاب کی سہولت کے لئے انڈسٹریل ٹریننگ انسٹی چیوٹس میں داخلہ حاصل کرنے والے طلاب کے لئے ایک ویب پورٹل کی شروعات کی ہے۔اس موقعہ پرڈائریکٹر تکنیکی تعلیم ڈاکٹر روی شنکر شرما، سیکرٹری ٹیکنیکل بورڈ محمود احمد، جے ڈی تکنیکی تعلیم فاروق احمد خان اور کئی دیگر افسران بھی موجود تھے۔اس موقعہ پر مشیر کو بتایا گیا کہ آئی ٹی آئی اداروں میں داخلہ لینے والے خواہش مند اُمیدوار اب  itiadmissions.jkdte.org  پر لاگ اِن کر کے لوازمات پورا کرسکتے ہیں۔ اس کے علاوہ وہ اسی پورٹل پر اپنے دستاویزات بھی اپ لوڈ کرسکتے ہیں۔علاوہ ازیں ہر ایک آئی ٹی آئی میں طُلباء کی سہولت کے لئے ایک فیسلی سینٹر قائم کیا گیا ہے۔خورشید گنائی نے ٹیکنیکل بورڈ کو یہ ویب پورٹل شروع کرنے کے لئے مبارک باد دیتے ہوئے کہا کہ اس قدم سے کام کاج میں شفافیت کو یقینی بنایا جاسکے گا۔اس موقعہ پر ایک اُمیدوار نے مشیر کی موجودگی میں آن لائین اپنا فارم جمع کرایا۔واضح رہے کہ جموں وکشمیر میں اس وقت113 آئی ٹی آئی کام کر رہے ہیں جن میں55 ادارے سرکاری شعبۂ کے ساتھ منسلک ہیں اور ہر برس تکنیکی کورسوں میں ہزاروں کی تعداد میں طُلباء داخلہ لیتے ہیں۔
 
 
 
 

نظربندوں کا کوئی پرسان حال نہیں:صحرائی

کسمپرسی کی حالت میں ایام اسیری کاٹ رہے ہیں

سرینگر// تحریک حریت چیئرمین محمد اشرف صحرائی نے بارہمولہ جیل میں نظربندوں کی حالت زار پر گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ جیلوں میں نظربندوں کا کوئی پرسان حال نہیں ہے۔اپنے ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ اسیران کے ساتھ مختلف قسم کی زیادتیاں ہورہی ہیں۔ طبی سہولیات اور مناسب غذا فراہم نہیں کی جارہی ہے۔انہوں نے مزید کہاکہ قیدیوں کو پیشی پر عدالتوں میں نہیں لایا جاتا ہے جس وجہ سے اُن کے کیسوں کو جان بوجھ کر طول دیا جارہا ہے ۔صحرائی کے مطابق وادی سے باہر جیلوں کی حالت انتہائی ابتر ہے۔ اسیران کسمپرسی کی حالت میں ایام اسیری کاٹ رہے ہیں۔بیان کے مطابق کئی قیدیوں کے لواحقین نے بتایا کہ بارہمولہ جیل میں مقید آزادی پسندوں کا قافیہ حیات تنگ کیا جاتا ہے۔ صحرائی نے انسانی حقوق کی تنظیموں سے اپیل کی کہ وہ جیلوں میں نظربند سیاسی لیڈران اور کارکنان کی حالت زار کا نوٹس لیں اور انتظامیہ کی طرف سے طے شدہ جیل مینول کے مطابق قیدیوںکو بنیادی سہولیات بھی نہیں دی جاتی ہیں۔ انہوںنے تمام سیاسی نظربندوں کی رہائی کا مطالبہ کیا۔
 
 
 

 آنگن واڑی مراکزمیں معیاری غذائی اجناس کی فراہمی کو یقینی بنایا جائے 

سر ینگر//حکومت نے سماجی بہبود محکمہ کو ہدایت دی ہے کہ وہ اس بات کو یقینی بنائیں کہ آنگن واڑی مراکز میں بچوں اور حاملہ خواتین کو غیر محفوظ اور غیر معیاری غذائی اجناس نہ دی جائیں ۔ یہ ہدایات کمشنر آف فوڈ سیفٹی اور اَنٹی کورپشن بیورو کی طرف سے آئی سی ڈی ایس سینٹر بانڈی پور ہ میں چنے کے نمونے حاصل کرنے اور اُنہیں فوڈ لیبارٹری کولکتہ بھیجنے کے بعد جاری کی گئیں، جہاں یہ پایا گیا کہ یہ غذائی اجناس غیر معیاری تھے۔ کمشنر فوڈ سیفٹی نے ریاست میں آنگن واڑی مراکز کوسپلائی کئے جانے والی غذائی اجناس کے ساتھ وابستہ افسروں کوہدایت دی ہے کہ وہ انتہائی ہوشیاری کے ساتھ یہ بات دیکھیں کہ سپلائروں سے حاصل ہونے والی اجناس معیاری ہے کہ نہیں۔دریں اثنا فوڈ سیفٹی کے ساتھ وابستہ افسروں اور اہلکاروں کو بھی ہدایت دی گئی کہ وہ لگاتار انسپکشن کر کے غذائی اجناس پر نظر گزر رکھیں۔
 
 
 

آنگن واڑی مراکز پنچائتوں کے سپرد

 پنچایت کانفرنس کا گورنر کے حالیہ اعلان کا خیر مقدم 

سرینگر//سٹیٹ پنچائت کانفرنس آف انڈیا نے گورنر انتظامیہ کے حالیہ اعلان اور اقدامات کے تحت پنچ و کونسلروں کو آنگن واڈی سنٹروں کی ذمہ داری سونپے جانے کا خیرمقدم کیا۔ کانفرنس نے اس اعلان کے خلاف ناراضگی اور مخالفت ظاہر کرنے پرحیرانگی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اسطرح کے بیانات دراصل ان کی بوکھلاہٹ کو ظاہر کرتا ہے۔سٹیٹ پنچائت کانفرنس آف انڈیا نے کہاکہ نہ صرف آنگن واڈی سنٹر بلکہ تعلیمی شعبہ کو بھی پنچائت راج کے تحت لایا جائے اور اس کی ذمہ داری بھی انہیں سونپی جائے تاکہ کشمیر میں وہ تعمیر و ترقی کے لئے اپنے دائرہ کار کو وسعت دیں۔اس ضمن میں کشمیر سوسائٹی انٹرنیشنل کے دفتر پرپنچوں و سرپنچوں نے اس اعلان کے خلاف جاری کئے گئے بیانات پر افسوس کا اظہار کیا۔سٹیٹ پنچایت کانفرنس آف انڈیا کے جنرل سیکریٹری محمد مقبول نے کہاکہ یہاں پنج و سر پنچ غیر سیاسی بنیادوں پر منتخب ہوئے ہیں۔انہوں نے کہا ’’ ہم ریاست کو تعمیر و ترقی کی راہ پر گامزن کرنا چاہتے ہیں اور ہمارا کوئی سیاسی ایجنڈا نہیں ہے‘‘۔
 
 
 
 

پی ڈی پی حکومت میں شروع کئے گئے پروجیکٹوں پرکام ٹھپ:ہانجورہ 

سرینگر//پی ڈی پی حکومت کے دوران منظور کئے گئے متعدد منصوبوں پر کام نہ ہونے پر پارٹی کے جنرل سیکریٹری غلام نبی لون ہانجورہ نے مایوسی کااظہار کرتے ہوئے کہا کہ لوگوں کو زبردست مشکلات کاسامنا ہے اور ان کی دادرسی کرنے والا کوئی نہیں ہے ۔پارٹی ترجمان کے مطابق چرارشریف حلقہ انتخاب کے متعددعلاقوں میں عوام کودرپیش مشکلات سے پی ڈی پی لیڈر کو باخبر کیااورحلقہ انتخاب میں ترقیاتی منصوبوں پر کچھوے کی چال سے کام ہونے پر برہمی کااظہار کیا۔لوگوں نے پی ڈی پی جنرل سیکریٹری سے تبادلہ خیال کرتے ہوئے محبوبہ مفتی کی قیادت والی سرکار میں ہاتھ میں لئے گئے ترقیاتی پروجیکٹوں کی ستائش کی۔ہانجورہ نے گورنر انتظامیہ پرزوردیا کہ وہ سڑک منصوبوں پر کام میں تیزی لائیں کیونکہ ان منصوبوں کی عمل آوری میں غیرضروری تاخیر کی جارہی ہے ۔مقامی نوجوانوں کے ایک وفد نے بھی علاقہ میں کھیل کا میدان نہ ہونے کو اُجاگر کیا اور کھیل سرگرمیوں کے انعقاد میں درپیش مشکلات سے انہیں آگاہ کیا ۔
 
 
 
 
 
 

پلوامہ میں 13جولائی کو لوک عدالت کا انعقاد ہوگا

پلوامہ//چیرمین ڈسٹرکٹ لیگل سروسز اتھارٹی پلوامہ کے دفتر کے مطابق13جولائی کو ضلع میںلوک عدالت کا انعقاد ہوگا۔اس سلسلے میں پانچ بنچوں کا قیام عمل میں لایا گیا ہے۔تین بینچ ڈسٹرکٹ کورٹ پلوامہ،ایک منصف کورٹ ترال اور ایک بینچ پانپور میں قائم کیا جائے گا۔ایسے خواہشمند افراد جو کہ مذکورہ لوک عدالت میں معاملات باہمی افہام وتفہیم سے حل کروانا چاہتے ہیں سے کہا گیا ہے کہ وہ مقررہ تاریخ یا اس سے قبل متعلقہ عدالت یا پھر نزدیکی لیگل ایڈ کلنک کے ساتھ رجوع کریں۔
 
 
 

رکھ گنڈ اکشا میںناجائز تجاوزات کے خلاف محکمہ زراعت کی مہم

سرینگر//محکمہ زراعت کشمیر رکھ گنڈ اکشا، کنگہ بُگ میں ناجائز تجاوزات اور غیر قانونی ڈھانچوں کو ہٹانے کے لئے ایک مہم کا آغاز کیا۔مہم کی کامیابی کے لئے سیکورٹی اوردیگر لازمی انتظامات کئے جاچکے ہیں۔رکھ گنڈ اکشا میںسرکاری اراضی پرکئے گئے ناجائز قبضے اورتجاوزات کو ہٹانے کیلئے ایک وسیع جامع منصوبہ ترتیب دیا گیا ہے۔یہ امر قابل ذکر ہے کہ صوبائی کمشنر کے دفتر کو رکھ گنڈ اکشا میںناجائز تجاوزات کے خلاف کئی شکایات موصول ہوئی تھیں۔جبکہ ناجائز ڈھانچوں کی تعمیر کے بارے میں بھی برابر شکایات موصول ہورہی تھیں۔چنانچہ محکمے نے ان شکایات کا سنگین نوٹس لے کر فوری طور کارروائی شروع کی۔ناظم زراعت کشمیر نے بتایا کہ محکمہ کی طرف سے سرکاری زرعی اراضی کے تحفظ کے لئے ہر ممکن اقدامات کئے جارہے ہیں اورآج کی کارروائی اس سلسلے کی ایک کڑی تھی۔
 
 
 

منشیات کابڑھتا ہوا رجحان تشویشناک: مولانا قمی

سرینگر// پیروان ولایت کے سربراہ مولانا سبط محمد شبیر قمی نے وادی میں منشیات کی جانب نوجوانوں کے بڑھتے ہوئے رجحان کو حد درجہ افسوسناک قرار دیا۔مولانا قمی میرواعظ منزل راجوری کدل میں’’منشیات کی روک تھام ‘‘کے عنوان پر متحدہ مجلس علماء کے ایک اجلاس سے خطاب کررہے تھے۔انہوں نے منشیات کے استعمال پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ایک سوچی سمجھی سازش کے تحت وادی میں اس ناسور کو پھیلایا جارہا ہے اوراس کاروبار میں ملوث افراد کو کھلی چھوٹ دے کر نوجوان نسل کوتباہ کیا جارہا ہے۔انہوں نے کہا کہ صدیوں سے سرزمین کشمیر اسلامی تہذیب و تمدن کا گہوارہ رہا ہے جہاں منشیات کا کاروبار اوراستعمال انتہائی پریشان کن ہے۔
 

تازہ ترین