پٹن میں3 سالہ معصوم بچی غرقآب

لوگوں کا احتجاجی دھرنا ، پُل نہ ہونے کا شاخسانہ

تاریخ    10 جولائی 2019 (00 : 01 AM)   


فیاض بخاری
 بارہمولہ //شمالی قصبہ پٹن کے ہرہند پورہ علاقے میں منگل کو اُ س وقت صف ماتم بچھ گئی جب ایک تین سالہ بچی مقامی نالہ میں غرقآب ہو کر لقمہ اجل بن گئی ۔ اس دوران مقامی لوگوں نے ضلع انتظامیہ کے خلاف زبردست نعرے بازی کرتے ہوئے کہا کہ یہ حادثہ  پُل نہ ہونے کی وجہ سے پیش آیا ہے ۔مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ منگل کو اُس وقت یہ حادثہ پیش آیا جب ایک مقامی نالے میں عارضی پُل پار کرنے کے دوران  تین سالہ عالیہ دختر نذیر احمد پرے گنڈری نالہ پٹن میں پیر پھسل جانے کے باعث غرقا ب ہوئی ۔ اس دوران آس پاس موجود لوگوں نے اگر چہ بچی کو بچانے کی انتھک کوشش کی تاہم وہ اس میں کامیاب نہ ہوسکے ۔ عینی شاہدین کے مطابق بچی کی نعش کو نالہ سے باز یاب کرکے اُسے وارثین کے حوالے کیا گیا ۔ جونہی تین سالہ بچی کی نعش اُس کے آبائی گائوں پہنچائی گئی تو وہا ں صف ماتم بچھ گئی ۔ادھر مقامی لوگوں نے اس واقعہ کے بعد ضلع انتظامیہ کے خلاف سخت نعرے بازی کرتے ہوئے الزام عائد کیا کہ یہ واقع پُل کی عدم دستیابی کی وجہ سے پیش آیا ہے ۔ انہوں نے کہا ہے کہ اگر چہ لوگوں نے کئی مرتبہ اس معاملے میں ضلع انتظامیہ کے اعلیٰ آفیسران کومطلع کیا تھا تاہم اس کی طرف کوئی توجہ نہیں دی گئی ۔ لوگوں نے سرکار سے مطالبہ کیا ہے کہ یہاں پر فوری طورپر ایک پُل تعمیر کیا جائے تاکہ اس طرح کا واقع دوبارہ پیش نہ آسکے۔
 

تازہ ترین