مدرسہ دارالعلوم فریدیہ گول میں5حفاظ کرام کی دستار بندی

دنیا و آخرت کی کامیابی قرآن کی تعلیمات میں مضمر: علماء کرام

تاریخ    5 نومبر 2018 (09 : 03 AM)   


زاہد بشیر
گول//مدرسہ دارالعلوم فریدیہ گول ضلع رام بن میں اتوار کے روز 5حفاظ کرام کی اکابر دین کے ہاتھوں دستار بندی کی فضلیت ادا کی ۔ جلسہ کا اہتمام مہتمم دارالعلوم فریدیہ گول مولانا جمال الدین و اراکین مدرسہ ہذا نے کیا اور شکریہ کی تحریک مفتی بشیر احمد نے ادا کیا ۔ اس وقعہ پر جلسہ میں مفسر قرآن مفتی فیض الوحید نے کہا کہ ہر انسان کی کامیابی قرآن میں مضمر ہے ۔آپ کی پر مغز تقریر سے علم قرآن اور صاحب قرآن کی عظمت سامنے آئی،آپ نے یہ بھی فرمایا کہ علماء ،حفاظ اپنے مرتبہ کو پہچانیں ،احساس کمتری کا ہر گز شکار نہ ہوں کہ اللہ تعالیٰ نے ان کو اپنی ذات کے نور یعنی قرآن پاک کی تعلیم و تشریح کے لئے منتخب کیا ہے ،اس کے بر عکس اور لوگوں کو اپنی مخلوقات میں مشغول کر رکھا ہے اس موقعہ پر امام جامع مسجد کھٹیکاں تالاب جموں مفتی مولانا محمد عنایت اللہ القاسمی نے کہا کہ مدارس دین اسلام اور زندگی کے محافظ ہیں ، اس لئے جہاں بھی مدرسہ قائم ہو ، علاقے کے لوگ اپنے لئے نیک بختی سمجھیں ، مدارس دین سیکھنے کیلئے ہیں ، یہ دْنیاوی مفادات حاصل کرنے کے لئے نہیں ہیں۔ مدارس کی بنیاد رسول پاک صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے رکھی۔ اس لئے اسلام کے پیرو کار مدارس کے قیام میں بھر پور تعاون کریں۔انہوں نے کہا کہ اسلام کی عمارت تعلیم و تعلم پر کھڑی ہے۔ اور نبی پاک نے اسی بنیاد پر مکہ مکرمہ میں دار ارقم اور مدینہ منورہ میں مدرسہ صفحہ کی بنیاد رکھی۔ اسلام کا پہلا بول اقرا ء سے شروع ہوتی ہے۔ جو کہ دین اسلام میں علم کی اہمیت کو اْجاگر کرتا ہے۔ اور جب تک مدارس زندہ رہیں گے ، مسلمانوں کے ایمان اور اْن کی زندگیاں محفوظ رہیں گی۔ اس سے پہلے مدرسے کے طلباء نے کئی موضوعات پر تقاریر کیں۔علماء کا کردار کے موضوع پر انتہائی دلنشین انداز میں تقاریر کیں۔ اور کہا۔ کہ علماء نے ہر میدان میں مسلمان قوم کی رہنمائی اور اسلام کے تحفظ کیلئے اہم کردار ادا کیا۔ انہوں نے اپنے کلیدی خطاب میں علماء کے مقام و مرتبہ اور حفاظ کرام کی عظمت سے عوام کو روشناس کرایا خاص طور سے آخرت میں علماء اور حفاظ کی جو عزت و مرتبت ہے بڑے والہانہ اور دل نشیں انداز میں اس کی تشریح کی ،پورا مجمع حضرت کی دلپذیر تقریر سے محظوظ ہوا ۔ جلسہ میں مولانا نذیر احمد القاسمی را م بن ،مفتی جعفر دارالعلوم سراج العلوم کنسولی مہور، مفتی قمر مطلوب العلوم کینٹھہ گول، مفتی شبیر مدرسہ جامعہ ابوبکر صدیق وادی ٔ لولاب شجرو، قاری گلزار دارلعلوم فاروقیہ داڑم کے علاوہ سینکڑوں مسلمانوں نے بڑھ چڑھ کر حصہ لیا ۔ مدرسہ کی جانب سے طعام کا بھی نظم رکھا گیا تھا اور عصر نماز پر مفسر قرآن مفتی فیض الوحید کی دعا سے جلسہ اختتام پذیر ہوا ۔ اس موقعہ پر جن حفاظ کرام کی دستار بندی ہوئی ان میں حافظ عاشق احمد بھمداسہ ، حافظ منور مشتاق ، بھمداسہ ،فاروق احمد بھیمداسہ ،جاوید احمد گول ،بلال احمد کلی مستیٰ شامل ہیں ۔
 

تازہ ترین