۔5کمروں پر مشتمل ہائی سکول کلر کٹل میں سہولیا ت نہیں | بچوں کی پڑھائی ضائع ہونے کا خدشہ ،انتظامیہ سے توجہ کی اپیل

پونچھ//ضلع پونچھ کی تحصیل سرنکوٹ کے گاؤں کلر کٹل کے گورنمنٹ ہائی سکول کی عمارت خستہ حالی کا شکار ہے جس کی وجہ سے اسکول میں زیر تعلیم طلباء و طالبات کو کئی طرح کی پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ سکول کی عمارت جو کہ 5 کمرہ جات پر مشتمل ہے ان پانچوں کمروں کی خستہ حالت ہے اور انہیں خستہ حال کمروں میں دس جماعتوں کے تقریبا ڈیڑھ سو طلبا و طالبات کو اساتذہ پڑھانے پر مجبور ہیںجبکہ انہی کمروں میں کچن بھی ہے اور سکول کا دفتربھی۔ اسکول کی خستہ حالی کو لے کر مقامی لوگوں کی جانب سے سرپنچ حلقہ پنچایت کلرکٹل کی قیادت میں ایک اجلاس منعقد کیا گیا۔جہاں مقامی لوگوں نے ضلع ترقیاتی کمشنر پونچھ سے اپیل کی کہ وہ اس علاقہ کا دورہ کر کے سکول کا جائزہ لیں۔ انہوں نے کہا کہ سکول کی خستہ حالت ہے سکول کی عمارت صرف 5 کمروں پر مشتمل ہے وہ بھی ٹوٹی ہوئی ہے جس میں تقریبا ڈیڑھ سو بچے زیر تعلیم ہیں بارش کے دوران بچوں کو بیٹھنے کے لئے جگہ نہیں ملتی اور اساتذہ کو مجبورا چھٹی کردینی پڑتی ہے جب کہ دھوپ میں کھلے آسمان تلے بچے پڑھنے پر مجبور ہو جاتے ہیں۔ مقامی لوگوں کے مطابق سکول کا وقت کے ساتھ ساتھ درجہ بڑھایا جاتا رہا ہے ہریمری اسکول سے ہائی اسکول بن گیا لیکن عمارت وہی ہے جو عرصہ دراز پہلے تعمیر کی گئی تھی۔کلر کٹل حلقی پنچایت کے سرپنچ نے بتایا کہ انہوں نے بارہا محکمہ تعلیم کے افسران سے اپیل کی کہ اس اسکول کی عمارت کی تعمیر نو کی جائے لیکن ان کی سننے والا کوئی نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ سکول علاقہ کا سب سے پرانا سکول ہے جس کے پاس اراضی کی کمی نہیں ہے صرف عدم توجہی کی وجہ سے سکول کا نظام خستہ حالی کا شکار ہے۔انہوں نے اسکول کی طرف متوجہ ہوکر اس کے حالت کو صحیح بنانے اور طلباء کو تمام تر سہولیات فراہم کرنے کی اعلیٰ حکام سے اپیل کی۔