۔3 برس قبل منظوری ملنے کے باوجود

پلوامہ// ضلع شوپیان اور پلوامہ کی آبادی کی خواتین کے لئے سرکار نے دونوں اضلاع کے لئے 100بستروں والا  مشترکہ زچہ ہسپتال تعمیر کرنے کو منظوری دی ہے تاہم تین سال گزر جانے کے باجود ہسپتال پر کام شروع نہیں کیا گیا ، جس پر لوگوں نے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے ایل جی انتظامیہ سے مداخلت کی اپیل کی ہے ۔مقامی لوگوں نے بتایا خواتین کے صحت کے بڑھتے ہوئے مسائل کو حل کرنے کے لیے حکومت نے تین سال قبل تقریباً 12کروڑ روپے کی لاگت سے 100 بستروں پر مشتمل زچہ ہسپتال تعمیر کرنے کومنظوری دی ہے ۔انہوں نے بتایا ہسپتال کی تعمیرکے لئے پلوامہ قصبے کے قریب 112 کنال اراضی کی نشاندہی کی گئی اوریہاںاس حوالے سے نوٹس بورڈ اور داخلی راستے کی تعمیر ہوئی ۔لوگوں کے مطابق،اس ہسپتال سے دو اضلاع، پلوامہ اور شوپیاں کے لوگوں کو فائدہ ہوتا، اور سری نگر کے زچگی ہسپتال میں ریفرل کی شرحیں کافی حد تک کم ہو جاتیں۔دریں اثنا، مقامی لوگوں نے لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا سے اپیل کی ہے کہ وہ ذاتی طور پر اس معاملے کو دیکھیں اور جلد از جلد اسپتال کی تعمیر کے لیے فوری احکامات جاری کریںتاکہ وسیع آبادی کو علاج معالجہ کی سہولیات کے حوالے سے آسانی ہوتی ۔