۔26جنوری کی تقریب کا معاملہ

سرینگر// صحافیوں کو26جنوری کی تقریب کی رپورٹنگ اور عکس بندی سے روکنے کے عمل کو ریاست کی طرف سے پریس کی آزادی پر غیر معمولی حملہ قرار دیتے ایڈیٹرس گلڈ آف انڈیا نے مطالبہ کیا  ہے کہ اس بات کی تحقیقات کی جائے کہ’’ اس طرح کی چوک کو کیسے ہونے دیا گیا۔‘‘ایڈیٹرس گلڈ آف انڈیا نے اپنے ایک بیان میں’’جموں کشمیر میں صحافیوں کو سرینگر کے اسٹیڈیم میں 26 جنوری کی تقریب کی رپورٹنگ اور عکسی بند ی سے صوابدیدی انداز میں روکنے کی مذمت کی‘‘۔بیان میں اس عمل کو پریشان کن قرار دیتے ہوئے کہا گیا کہ کئی ایک کو ریاستی سرکار کے محکمہ اطلاعات کی طرف سے کارڈ اجراء کرنے کے باوجود پیشہ وارانہ سرگرمیاں انجام دینے سے  روکا گیا۔ایڈیٹرس گلڈ آف انڈیا نے کہا کہ ریاستی سرکار کی طرف سے ماقبل اس کے سنیئر صحافیوں کو یوم جمہوریہ کی تقریب کی رپورٹنگ اور عکسی بندی کیلئے کارڈوں کی عدم اجرائی کا فیصلہ بھی یکساں قابل مذمت ہے۔ایڈیٹرس گلڈنے حکومت سے اس بات کی یقین دہانی طلب کی کہ اس طرح کے قابل مذمت عمل کو نہیں دہرایا جائے گا۔انہوں نے مطالبہ کرتے ہوئے کہا’’اگر ضرورت پڑے تو صحافیوں کو ہائی سیکورٹی زون والے علاقوں میں پیشہ وارانہ سرگرمیاں انجام دینے کیلئے داخلی پاسوں سے متعلق فل پروف اور غیر امتیازی نظام فوری طور پر متعارف کرایا جانا چاہیے‘‘۔