۔26جنوری کشمیریوں کیلئے اہمیت نہیں رکھتا

سرینگر//حریت (ع)،اتحاد المسلمین اورپیروان ولایت نے کہا ہے کہ 26جنوری بھارت کا یوم جمہوریہ کشمیریوں کیلئے کوئی اہمیت نہیں رکھتا ہے ۔انہوں نے کہا کہ بھارت دنیا میں سب سے بڑی جمہوریت کا دعویٰ کررہا ہے اور  بیشک وہ جمہوریت کاجشن منائے لیکن اپنی جمہوریت کا جشن مناتے ہوئے اس ملک کو جموںوکشمیر کے عوام کے جمہوری حقوق کی پامالیوں کی پالیسی ترک کرکے خود اپنے جمہوری قدروں کی لاج رکھنی چاہئے تھی۔ حریت (ع) نے 26جنوری کی آمد پر فورسز اور پولیس کی مشترکہ کارروائیوں کے نتیجے میں کشمیر میں خوف و دہشت اور عدم تحفظ کا ماحول برپا کرنے ، ریڈونی کولگام ، مونگاہامہ پلوامہ، تلونی، چک شادی مرگ، کاشو زینہ پورہ، گنہ پورہ ، بلہ پورہ اور دارالعلوم مہاراج پورہ سوپور میں  ’کیسو‘ کے تحت تلاشی آپریشن کے دوران 40 کے قریب رہائشی مکانوں اور ایک درجن گاڑیوںکی توڑ پھوڑ ،ایک موٹر سائیکل نذر آتش کرنے ، دارلعلوم کی توڑ پھوڑ ، اساتذہ اور طلباء کے ساتھ زیادتی اورنہتے عوام پر بے تحاشہ شیلنگ کی مذمت کی ہے ۔حریت ترجمان نے ایک بیان میں کہا ہے کہ کشمیری عوام بھارت کے یوم جمہوریہ تقریبات منانے کے مخالف نہیں ہیں ،بے شک وہ جمہوریت اور آزادی کا خوب جشن منائیں لیکن  اپنی جمہوریت کا جشن مناتے ہوئے جموںوکشمیر کے عوام کے بنیادی ، انسانی ، سماجی ، شہری اور جمہوری حقوق کی پامالیوں کی دیرینہ پالیسی ترک کرکے خود اپنے جمہوری قدروں کی لاج رکھنی چاہئے اور 70 سالہ تنازع کشمیر کے پر امن اور پائیدار حل کے حوالے سے اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق کشمیری عوام کو حق خودارادیت کی بنیاد پر اپنا حق استعمال کرنے کا موقعہ فراہم کیا جانا چاہئے۔ترجمان نے سینئر حریت رہنما مختار احمد وازہ کو شیرباغ اسلا م آباد تھانے میں مقید رکھنے کیخلاف سخت ردعمل کا اظہار کیا ہے۔اتحاد المسلمین نے26 جنوری کو یوم سیاہ منانے کی اپیل کی ہے۔ اپنے ایک بیان میں اتحاد المسلمین کے سرپرست اعلیٰ و سینئر حریت رہنما مولانا مولانا محمد عباس انصاری نے کہا ہے کہ بھارت کو یوم جمہوریہ منانے کا کوئی جواز نہیں بنتا ۔ انہوں نے کہا کہ بھارت کی جانب سے کشمیر میں جاری نسل کشی اور ظلم و بربریت بھارت کی جمہوریت پر بدنما داغ ہے۔ انصاری نے کہا کہ بھارت کے حکمران ایک طرف کشمیر میں انسانی حقوق کو پاش پاش کررہے ہیں دوسری طرف جمہوریت کا ڈھنڈورا پیٹ کر جمہوری نظام کو بدنام کررہے ہیں، اسلئے بھارت کا یوم جمہوریہ منانا  افسوسناک عمل ہے۔مولانا انصاری نے کشمیری عوام سے اپیل کی وہ کشمیر میں جاری نسل کشی اور بھارتی مظالم کو مدنظر رکھتے ہوئے 26 جنوری کا مکمل بائیکاٹ کرکے یوم سیاہ منائیں۔ انہوں نے سرحد کشیدگی پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے آر پار ہلاکتوں پر دکھ کا اظہار کیا ہے۔پیروان ولایت نے کہا ہے کہ بھارت کا یوم جمہوریہ کشمیریوں کیلئے کوئی اہمیت نہیں رکھتا ہے کیونکہ جمہوریت کے بلند بانگ دعویٰ کرنے والا یہ ملک کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کا مرتکب ہے۔پارٹی ترجمان نے ایک بیان میں کہا ہے کہ جس ملک نے طاقت کے بل پر کسی قوم کو دبائے رکھا ہو ،وہ خود یوم جمہوریہ منانے کا حق نہیں رکھتا ۔ترجمان نے عوام سے اپیل کی کہ 26 جنوری کو یوم سیاہ منائیں۔