۔2004 میں بنی ڈھنڈ لفٹ سکیم لوگوں کیلئے سود مند ثابت نہ ہو سکی

تھنہ منڈی //راجوری ضلع کے تھنہ منڈی سب ڈویژن میں بنائی گئی ڈھنڈ لفٹ واٹر سپلائی سکیم گزشتہ کئی برسوں سے بند پڑی ہوئی ہے جبکہ اس کی پوری مشینری اب خراب ہو گئی تاہم متعلقہ محکمہ کی جانب سے سکیم کو فعال بنانے کے بجا ئے تھنہ منڈی قصبہ کی عوام کو آلودہ پانی سپلائی کیا جارہا ہے ۔مکینوں نے بتایا کہ 2004میں ڈھنڈ لفٹ واٹر سپلائی سکیم کیلئے حکومت کی جانب سے کروڑوں روپے خرچ کئے گئے تھے تاہم گزشتہ 6برسوں سے سکیم مکمل طورپر بند پڑی ہوئی ہے اور اب اس کی مشینری بھی زنگ کی وجہ سے خراب ہو چکی ہے ۔ ایڈوکیٹ نوید انجم شال کونسلر وارڈ نمبر 9 نے دیگر عوامی نمائندوں کے ساتھ تھنہ منڈی کے ڈھنڈ علاقے کا دورہ کر کے مذکورہ سکیم کا مکمل جائزہ لیا ۔موصوف نے اس دوران کہا کہ قصبہ تھنہ منڈی کو پینے کا صاف پانی فراہم کرنے کے لئے سال 05-2004 میں گورنمنٹ کی طرف سے بھاری رقومات فراہم کی گئیں لیکن بدقسمتی سے یہ لفٹ سکیم 16سال بعد بھی مکمل نہ ہو سکی۔انہوں نے کہا کہ تھنہ منڈی کے ڈھنڈ علاقہ سے لفٹ کے ذریعہ پانی بھاٹی دھار سپلائی کیا جاتا تھالیکن بد قسمتی سے مذکورہ سکیم کئی عرصہ سے بند پڑی ہوئی ہے جس کی وجہ سے تمام مشنری خراب ہو چکی ہے جبکہ محکمہ کو سالانہ لاکھوں روپے عوام کو صاف پانی فراہم کرنے کے لئے دئیے جاتے ہیں۔ انھوں نے مزید کہا کہ اس آلودہ پانی سے تھنہ منڈی کی عوام کئی طرح کی بیماریوں میں مبتلا بھی ہو سکتی ہے۔ واضح رہے کہ اس مقام پر لفٹ کیلئے پانی وافر مقدار میں موجود ہے۔ علاوہ ازیں اس کیلئے ٹرانسفارمر بھی نصب ہے تاہم مکینوں نے بتایا کہ مذکورہ واٹر سپلائی سکیم کی موٹر کو کسی دوسری جگہ پر نصب کر دیا گیا ہے ۔تھنہ منڈی کے مکینوںنے بتا یا کہ ملازمین مسلسل من مانی اور ہٹ دھرمی پر تلے ہوئے ہیںجس کی وجہ سے مکینوں کو شدید مشکلات درپیش ہیں ۔مقامی کونسلر نے کہا کہ ضلع انتظامیہ اور محکمہ صحت عامہ کو متعدد بار اس بارے میں آگاہ کیا جا چکا ہے لیکن تاحال اس پر کوئی عمل درآمد نہیں ہوا ہے۔لوگوں نے لیفٹیننٹ گورنر و ضلع انتظامیہ سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ اس طرف خصوصی توجہ دیں تاکہ غریب عوام کو پینے کا صاف پانی مہیا کیا جا سکے۔