۔13برسوں بعد کالا کوٹ میں تصادم ہوا امن و سکون ختم ہونے پر لوگوں میں دہشت کا ماحول

 سمت بھارگو

راجوری//تقریباً تیرہ برسوں کے طویل وقفے کے بعدراجوری ضلع کے کالاکوٹ سب ڈویژں کے علاقوں میں بندوقوں نے ہلچل مچانا شروع کر دی ہے جہاں بدھ کی صبح سیکورٹی فورسز اور دہشت گردوں کے درمیان تصادم ہوا۔حکام نے بتایا کہ بدھ کی صبح سیکورٹی فورسز نے راجوری ضلع کے باجی مہل علاقے میں محاصرہ اور تلاشی آپریشن شروع کرنے کے بعد انکاؤنٹر شروع ہوا۔کالاکوٹ کے سولکی، باجی مہل، بریوی، کیری، جبار گاؤں کے نام سے جانا جاتا علاقہ تیرہ سال کے طویل وقفے کے بعد فائر فائٹ کا مشاہدہ کر رہا ہے کیونکہ اس علاقے میں آخری انکاؤنٹر تقریباً تیرہ سال پہلے ہوا تھا۔مقامی لوگوں نے بتایا کہ سال 2010 میں اس علاقے میں انکاؤنٹر ہوا تھا لیکن اس کے بعد حالات پرسکون ہوگئے اور علاقے میں 13 سال کے وقفے کے بعد ایک تازہ تصادم دیکھنے میں آرہا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ انکاؤنٹر کی وجہ سے اس علاقے میں ہر کوئی خوف کی کیفیت میں ہے کیونکہ لوگ امن اور پرسکون صورتحال چاہتے ہیں۔باجی مہل کے رہائشی محمد دین نے بتایا کہ بدھ کی صبح علاقے میں فائرنگ شروع ہوئی اور لوگ خوف و ہراس میں مبتلا ہو گئے ۔مقامی لوگوں نے بتایا کہ ’’ہم امن چاہتے ہیں نہ کہ گولیوں کی بازگشت جس سے خوف پیدا ہو۔ انہوں نے مزید کہا کہ لوگ انکاؤنٹر کی وجہ سے پانی لانے جیسے روزمرہ کی ضروریات میں شرکت نہیں کر پا رہے ہیں۔